۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔*مختصر نمازمحمدی*۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تحریر:الشیخ ڈاکٹر ابومحمدعبدالاحدسلفی
*نیت
حَدَّثَنَا الْحُمَيْدِيُّ عَبْدُ اللَّهِ بْنُ الزُّبَيْرِ ، قَالَ : حَدَّثَنَا سُفْيَانُ ، قَالَ : حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ الْأَنْصَارِيُّ ، قَالَ : أَخْبَرَنِي مُحَمَّدُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ التَّيْمِيُّ ، أَنَّهُ سَمِعَ عَلْقَمَةَ بْنَ وَقَّاصٍ اللَّيْثِيَّ ، يَقُولُ : سَمِعْتُ عُمَرَ بْنَ الْخَطَّابِ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ عَلَى الْمِنْبَرِ ، قَالَ : سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، يَقُولُ : إِنَّمَا الْأَعْمَالُ بِالنِّيَّاتِ ، وَإِنَّمَا لِكُلِّ امْرِئٍ مَا نَوَى ، فَمَنْ كَانَتْ هِجْرَتُهُ إِلَى دُنْيَا يُصِيبُهَا أَوْ إِلَى امْرَأَةٍ يَنْكِحُهَا ، فَهِجْرَتُهُ إِلَى مَا هَاجَرَ إِلَيْهِ .
آپ صلی اللہ علیہ وسلم فرما رہے تھے کہ تمام اعمال کا دارومدار نیت پر ہے اور ہر عمل کا نتیجہ ہر انسان کو اس کی نیت کے مطابق ہی ملے گا۔ پس جس کی ہجرت ( ترک وطن ) دولت دنیا حاصل کرنے کے لیے ہو یا کسی عورت سے شادی کی غرض ہو۔ پس اس کی ہجرت ان ہی چیزوں کے لیے ہو گی جن کے حاصل کرنے کی نیت سے اس نے ہجرت کی ہے۔ "
((صحیح البخاری،کتاب وحی کےبیان میں:۱))
*نیت کاتعلق دل سےہےزبان سےنہیں۔۔
(اغاثۃ اللھفان،الفصل الاول فی النیۃ فی الطھارۃ والصلاۃ:۱۴۶)
💎تکبیرتحریمہ
حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ وَهَنَّادٌ،‏‏‏‏ وَمَحْمُودُ بْنُ غَيْلَانَ،‏‏‏‏ قَالُوا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ، عَنْ سُفْيَانَ. ح وحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ مَهْدِيٍّ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ مُحَمَّدِ بْنِ عَقِيلٍ، عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ الْحَنَفِيَّةِ، عَنْ عَلِيٍّ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏مِفْتَاحُ الصَّلَاةِ الطُّهُورُ وَتَحْرِيمُهَا التَّكْبِيرُ وَتَحْلِيلُهَا التَّسْلِيمُ . قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ هَذَا الْحَدِيثُ أَصَحُّ شَيْءٍ فِي هَذَا الْبَابِ وَأَحْسَنُ، ‏‏‏‏‏‏وَعَبْدُ اللَّهِ بْنُ مُحَمَّدِ بْنِ عَقِيلٍ:‏‏‏‏ هُوَ صَدُوقٌ، ‏‏‏‏‏‏وَقَدْ تَكَلَّمَ فِيهِ بَعْضُ أَهْلِ الْعِلْمِ مِنْ قِبَلِ حِفْظِهِ. قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ وسَمِعْت مُحَمَّدَ بْنَ إِسْمَاعِيل، ‏‏‏‏‏‏يَقُولُ:‏‏‏‏ كَانَ أَحْمَدُ بْنُ حَنْبَلٍ،‏‏‏‏ وَإِسْحَاق بْنُ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ وَالْحُمَيْدِيُّ يَحْتَجُّونَ بِحَدِيثِ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ مُحَمَّدِ بْنِ عَقِيلٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ مُحَمَّدٌ:‏‏‏‏ وَهُوَ مُقَارِبُ الْحَدِيثِ. قَالَ أَبُو
عِيسَى:‏‏‏‏ وَفِي الْبَاب عَنْ جَابِرٍ،‏‏‏‏ وَأَبِي سَعِيدٍ
رسول اللہ صلی الله علیہ وسلم نے فرمایا: ”نماز کی کنجی وضو ہے، اور اس کا تحریمہ صرف «اللہ اکبر» کہنا ہے ۱؎ اور نماز میں جو چیزیں حرام تھیں وہ «السلام علیکم ورحمة اللہ» کہنے ہی سے حلال ہوتی ہیں“ ۲؎۔
امام ترمذی کہتے ہیں: ۱- اس باب میں یہ حدیث سب سے صحیح اور حسن ہے، ۲- عبداللہ بن محمد بن عقیل صدوق ہیں ۳؎، بعض اہل علم نے ان کے حافظہ کے تعلق سے ان پر کلام کیا ہے، میں نے محمد بن اسماعیل بخاری کو یہ کہتے ہوئے سنا کہ احمد بن حنبل، اسحاق بن ابراہیم بن راہویہ اور حمیدی: عبداللہ بن محمد بن عقیل کی روایت سے حجت پکڑتے تھے، اور وہ مقارب الحدیث ہیں، ۳- اس باب میں جابر اور ابو سعید خدری رضی الله عنہما سے بھی احادیث آئی ہیں۔
(سنن الترمذ:۳۔سنن ابی داؤد:۶۱،وسندہ صحیح)
حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ الطَّنَافِسِيُّ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنِي عَبْدُ الْحَمِيدِ بْنُ جَعْفَرٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَمْرِو بْنِ عَطَاءٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ أَبَا حُمَيْدٍ السَّاعِدِيَّ، ‏‏‏‏‏‏يَقُولُ:‏‏‏‏ كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِذَا قَامَ إِلَى الصَّلَاةِ، ‏‏‏‏‏‏اسْتَقْبَلَ الْقِبْلَةَ، ‏‏‏‏‏‏وَرَفَعَ يَدَيْهِ، ‏‏‏‏‏‏وَقَالَ:‏‏‏‏ اللَّهُ أَكْبَرُ .
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم جب نماز کے لیے کھڑے ہوتے تو قبلہ رخ ہوتے، اور اپنے دونوں ہاتھ اٹھا کر «الله أكبر»کہتے ۔"
(سنن ابن ماجہ،ابواب اقامۃ الصلوات والسنۃ فیھا،باب افتتاح الصلاۃ:۸۰۳،وسندہ صحیح)
💎قیام
وقال عطاء إن لم يقدر أن يتحول إلى القبلة صلى حيث كان وجهه‏.
حَدَّثَنَا عَبْدَانُ ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ ، عَنْ إِبْرَاهِيمَ بْنِ طَهْمَانَ ، قَالَ : حَدَّثَنِي الْحُسَيْنُ الْمُكْتِبُ ، عَنِ ابْنِ بُرَيْدَةَ ، عَنْ عِمْرَانَ بْنِ حُصَيْنٍ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ ، قَالَ : كَانَتْ بِي بَوَاسِيرُ فَسَأَلْتُ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الصَّلَاةِ ، فَقَالَ : صَلِّ قَائِمًا ، فَإِنْ لَمْ تَسْتَطِعْ فَقَاعِدًا ، فَإِنْ لَمْ تَسْتَطِعْ فَعَلَى جَنْبٍ .
اگر قبلہ رخ ہونے کی بھی طاقت نہ ہو تو جس طرف اس کا رخ ہو ادھر ہی نماز پڑھ سکتا ہے ۔
مجھے بواسیر کا مرض تھا۔ اس لیے میں نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے نماز کے بارے میں دریافت کیا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ کھڑے ہو کر نماز پڑھا کرو اگر اس کی بھی طاقت نہ ہو تو بیٹھ کر اور اگر اس کی بھی نہ ہو تو پہلو کے بل لیٹ کر پڑھ لو۔ "
(صحیح البخاری،کتاب التقصیر:۱۱۱۷)
**رفع الیدین
وقال أبو حميد في أصحابه رفع النبي صلى الله عليه وسلم حذو منكبيه‏.‏
حَدَّثَنَا أَبُو الْيَمَانِ ، قَالَ : أَخْبَرَنَا شُعَيْبٌ ، عَنِ الزُّهْرِيِّ ، قَالَ : أَخْبَرَنَا سَالِمُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ ، أَنّ عَبْدَ اللَّهِ بْنَ عُمَرَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُمَا ، قَالَ : رَأَيْتُ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ افْتَتَحَ التَّكْبِيرَ فِي الصَّلَاةِ ، فَرَفَعَ يَدَيْهِ حِينَ يُكَبِّرُ حَتَّى يَجْعَلَهُمَا حَذْوَ مَنْكِبَيْهِ ، وَإِذَا كَبَّرَ لِلرُّكُوعِ فَعَلَ مِثْلَهُ ، وَإِذَا قَالَ سَمِعَ اللَّهُ لِمَنْ حَمِدَهُ فَعَلَ مِثْلَهُ وَقَالَ رَبَّنَا وَلَكَ الْحَمْدُ ، وَلَا يَفْعَلُ ذَلِكَ حِينَ يَسْجُدُ وَلَا حِينَ يَرْفَعُ رَأْسَهُ مِنَ السُّجُودِ .
اور ابو حمید ساعدی رضی اللہ عنہ نے اپنے ساتھیوں سے کہا کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے دونوں ہاتھوں کو کندھوں تک اٹھایا۔
آپ صلی اللہ علیہ وسلم نماز تکبیر تحریمہ سے شروع کرتے اور تکبیر کہتے وقت اپنے دونوں ہاتھوں کو کندھوں تک اٹھا کر لے جاتے اور جب رکوع کے لیے تکبیر کہتے تب بھی اسی طرح کرتے اور جب «سمع الله لمن حمده» کہتے تب بھی اسی طرح کرتے اور «ربنا ولك الحمد» کہتے۔ سجدہ کرتے وقت یا سجدے سے سر اٹھاتے وقت اس طرح رفع یدین نہیں کرتے تھے۔"
(صحیح البخاری:۷۳۸،مسلم:۳۹۰)
رفع الیدین اورتکبیر میں تینوں شکلیں جائزہیں۔یعنی دونوں ایک ساتھ۔یاپہلےرفع الیدین اوربعدمیں تکبیر۔یاتکبیرپہلےاوررفع الیدین بعدمیں۔
(بخاری:۷۳۷،مسلم:۳۹۰،ابن خزیمہ:۴۵۶،مسلم:۳۹۱/۲۵)
حَدَّثَنَا عَيَّاشٌ ، قَالَ : حَدَّثَنَا عَبْدُ الْأَعْلَى ، قَالَ : حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللَّهِ ، عَنْ نَافِعٍ ، أَنَّ ابْنَ عُمَرَ كَانَ إِذَا دَخَلَ فِي الصَّلَاةِ كَبَّرَ وَرَفَعَ يَدَيْهِ ، وَإِذَا رَكَعَ رَفَعَ يَدَيْهِ ، وَإِذَا قَالَ : سَمِعَ اللَّهُ لِمَنْ حَمِدَهُ رَفَعَ يَدَيْهِ ، وَإِذَا قَامَ مِنَ الرَّكْعَتَيْنِ رَفَعَ يَدَيْهِ ، وَرَفَعَ ذَلِكَ ابْنُ عُمَرَ إِلَى نَبِيِّ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، رَوَاهُ حَمَّادُ بْنُ سَلَمَةَ ، عَنْ أَيُّوبَ ، عَنْ نَافِعٍ ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، وَرَوَاهُ ابْنُ طَهْمَانَ ، عَنْ أَيُّوبَ ، وَمُوسَى بْنِ عُقْبَةَ مُخْتَصَرًا .
عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما جب نماز میں داخل ہوتے تو پہلے تکبیر تحریمہ کہتے اور ساتھ ہی رفع یدین کرتے۔ اسی طرح جب وہ رکوع کرتے تب اور جب «سمع الله لمن حمده» کہتے تب بھی ( رفع یدین کرتے ) دونوں ہاتھوں کو اٹھاتے اور جب قعدہ اولیٰ سے اٹھتے تب بھی رفع یدین کرتے۔ آپ نے اس فعل کو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم تک پہنچایا۔ ( کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اسی طرح نماز پڑھا کرتے تھے۔ ) ۔"
((صحیح البخاری:۷۳۹،وسندہ صحیح))
💎رفع الیدین میں مردوزن کافرق
حافظ ابن حجر اور علامہ شمس الحق رحمھم اللہ نےفرمایا:لَمْ یَرِدْ مَایَدُلُّ عَلَی التَّفْرِقَۃِ فِی الرَّفْعِ بَیْنَ الرَّجُلِ وَالْمَرْاءَۃِ۔
مرد اورعورت کےدرمیان تکبیرکیلیےہاتھ اٹھانےکےفرق کےبارےمیں کوئی حدیث دلالت نہیں کرتی۔"
(فتح الباری:۲۲۲/۲،عون المعبود:۲۶۳/۱)
فتاوی قاضی خان جوحنفی مذہب کی معتبرکتاب ہےاس میں لکھاہےکہ"والمراءۃ ترفع الیدکمایرفع الرجل فی روایۃ الحسن عن ابی حنیفۃ(نعمان بن ثابت بن زوطی الکوفی الکابلی)۔
حسن کی روایت ابوحنیفہ سےآتی ہےکہ عورت بھی مردوں کی طرح ہاتھ اٹھائےگی۔"
(فتاوی قاضی خان:۴۱/۱)

💎ہاتھ باندھنا
حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مَسْلَمَةَ ، عَنْ مَالِكٍ ، عَنْ أَبِي حَازِمٍ ، عَنْ سَهْلِ بْنِ سَعْدٍ ، قَالَ : كَانَ النَّاسُ يُؤْمَرُونَ أَنْ يَضَعَ الرَّجُلُ الْيَدَ الْيُمْنَى عَلَى ذِرَاعِهِ الْيُسْرَى فِي الصَّلَاةِ۔
لوگوں کو حکم دیا جاتا تھا کہ نماز میں دایاں ہاتھ بائیں کلائی پر رکھیں۔"
(صحیح بخاری،کتاب الاذان:۷۴۰،وسندہ صحیح)
-ذراع کہنی کےسرےسےدرمیانی انگلی کےسرےتک کےحصہ کوکہتےہیں۔"
(القاموس الوحید:۵۶۷)
اپنادایاں ہاتھ بائیں ہاتھ پررکھ کر انہیں سینےپرباندھیں۔"
(مسند الامام احمد:۲۲۶/۵،ح:۲۲۳۱۳،وسندہ حسن)
حَدَّثَنَا الْحَسَنُ بْنُ عَلِيٍّ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا أَبُو الْوَلِيدِ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا زَائِدَةُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَاصِمِ بْنِ كُلَيْبٍ بِإِسْنَادِهِ وَمَعْنَاهُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ فِيهِ:‏‏‏‏ ثُمَّ وَضَعَ يَدَهُ الْيُمْنَى عَلَى ظَهْرِ كَفِّهِ الْيُسْرَى وَالرُّسْغِ وَالسَّاعِدِ:‏‏‏‏ وَقَالَ فِيهِ:‏‏‏‏ ثُمَّ جِئْتُ بَعْدَ ذَلِكَ فِي زَمَانٍ فِيهِ بَرْدٌ شَدِيدٌ فَرَأَيْتُ النَّاسَ عَلَيْهِمْ جُلُّ الثِّيَابِ تَحَرَّكُ أَيْدِيهِمْ تَحْتَ الثِّيَاب۔
پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنا داہنا ہاتھ بائیں ہتھیلی کی پشت پہنچے اور کلائی پر رکھا، اس میں یہ بھی ہے کہ پھر میں سخت سردی کے زمانہ میں آیا تو میں نے لوگوں کو بہت زیادہ کپڑے پہنے ہوئے دیکھا، ان کے ہاتھ کپڑوں کے اندر ہلتے تھے۔ "
(سنن ابی داود،باب رفع الیدین فی الصلاۃ:۷۲۷،وسندہ صحیح)
💎استفتاح
یہ دُعا پڑھیں
:اللَّهُمَّ بَاعِدْ بَيْنِي وَبَيْنَ خَطَايَايَ كَمَا بَاعَدْتَ بَيْنَ الْمَشْرِقِ وَالْمَغْرِبِ، ‏‏‏‏‏‏اللَّهُمَّ نَقِّنِي مِنَ الْخَطَايَا كَمَا يُنَقَّى الثَّوْبُ الْأَبْيَضُ مِنَ الدَّنَسِ، ‏‏‏‏‏‏اللَّهُمَّ اغْسِلْ خَطَايَايَ بِالْمَاءِ وَالثَّلْجِ وَالْبَرَدِ"".
(بخاری:۷۴۴۔مسلم:۵۹۸/۱۴۷)
:‏‏‏‏ سُبْحَانَكَ اللَّهُمَّ وَبِحَمْدِكَ وَتَبَارَكَ اسْمُكَ وَتَعَالَى جَدُّكَ وَلَا إِلَهَ غَيْرَكَ۔"
(سنن ابی داود:۷۷۵،سنن ابن ماجہ:۸۰۴،وسندہ حسن)
💎پھر پڑھیں
‏‏‏‏‏‏أَعُوذُ بِاللَّهِ السَّمِيعِ الْعَلِيمِ مِنَ الشَّيْطَانِ الرَّجِيمِ مِنْ هَمْزِهِ وَنَفْخِهِ وَنَفْثِهِ۔"
(حوالہ ایضًا)
💎پھر پڑھیں
بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ۔"
(سنن النسائی:۹۰۶،وسندہ صحیح)
بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ جہراً اور سراً دونوں طرح پڑھنا صحیح ہے۔۔۔۔
جہراً کے جواز کےلیےدیکھیں۔(سنن النسائی:۹۰۶،وسندہ صحیح،مصنف ابن ابی شیبہ:۴۱۲/۱،شرح معانی الاثار للطحاوی:۱۳۷/۱وسندہ صحیح)
سراً کےجواز کےلیےدیکھیں۔(صحیح ابن خزیمہ:۴۹۵وسندہ حسن۔صحیح ابن حبان،الاحسان:۱۷۹۶وسندہ صحیح)
💎پھرسورۃ فاتحہ پڑھیں
حَدَّثَنَا الْوَلِيدُ بْنُ عَمْرِو بْنِ السُّكَيْنِ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا يُوسُفُ بْنُ يَعْقُوبَ السَّلْعِيُّ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا حُسَيْنٌ الْمُعَلِّمُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَمْرِو بْنِ شُعَيْبٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِيهِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ جَدِّهِ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ كُلُّ صَلَاةٍ لَا يُقْرَأُ فِيهَا بِفَاتِحَةِ الْكِتَابِ فَهِيَ خِدَاجٌ، ‏‏‏‏‏‏فَهِيَ خِدَاجٌ .
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ہر وہ نماز جس میں سورۃ فاتحہ نہ پڑھی جائے، ناقص ہے، ناقص ۔ "
((سنن ابن ماجہ:۸۴۱،وسندہ حسن))
حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ ، قَالَ : حَدَّثَنَا سُفْيَانُ ، قَالَ : حَدَّثَنَا الزُّهْرِيُّ ، عَنْ مَحْمُودِ بْنِ الرَّبِيعِ ، عَنْ عُبَادَةَ بْنِ الصَّامِتِ ، أَنّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ :لَا صَلَاةَ لِمَنْ لَمْ يَقْرَأْ بِفَاتِحَةِ الْكِتَابِ .
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا، جس شخص نے سورۃ فاتحہ نہ پڑھی اس کی نماز نہیں ہوئی۔ "
(صحیح البخاری،کتاب الاذان:۷۵۶،مسلم:۳۹۴)
رسول اللہ ﷺ نےفرمایا"(امام کےپیچھے)کچھ نہ پڑھاکرو،سوائےسورۃ فاتحہ کے،کیونکہ اس شخص کی نمازنہیں ہوتی جوسورۃ فاتحہ نہیں پڑھتا۔"
((صحیح ابن حبان:۱۷۸۵،اس حدیث کو شیخ شعیب الارنؤوط رحمہ اللہ نے صحیح لغیرہ قراردیاہے۔مسنداحمد:۳۱۳/۵ح۲۳۰۴۷))
-حنفیوں کی بہت بلندپایہ اورمقبول کتاب میں ہےکہ"وَیُسْتَحْسَنُ عَلٰی سَبِیْلِ الْاِحْتِیَاطِ۔احتیاطً سورۃ فاتحہ کا(امام کے پیچھے)پڑھ لینا ہی بہتر ہے۔"
((الھدایۃ،جلد۱،صفحہ:۱۲۱))
-شیخ سیّد عبدالقادر جیلانی رحمہ اللہ فرماتےہیں"فَاِنَّ قِرَاءَتَھَا فَرِیْضَۃُُ وَھِیَ رُکْنُُ تَبْطُلُ الصَّلوٰۃُ بِتَرْکِھَا۔سورۃ فاتحہ کاپڑھنا فرض ہے،اور(یہ سورۃ)نمازکا رُکن ہے اس کے نہ پڑھنےسےنمازباطل ہوجاتی ہے۔"
((غنیۃ الطالبین،فصل نمازکےآداب،صفحہ:۵۹۲))
-اشرف علی تھانوی(دیوبندی)کہتےہیں"وَ اِذَا قُرِئَ الۡقُرۡاٰنُ فَاسۡتَمِعُوۡا لَہٗ وَ اَنۡصِتُوۡا لَعَلَّکُمۡ تُرۡحَمُوۡنَ۔(سورۃ الاعراف:۲۰۴)
اورجب قرآن پڑھاجائے تواسےغورسےسنو اورخاموش رہو،تاکہ تم پررحم کیاجائے۔"
تبلیغ پرمحمول ہےاس جگہ قراءت فی الصّلوٰۃ مراد نہیں۔"
((الکلام الحسن،جلد۲،صفحہ:۲۱۲،مطبوعہ المکتبہ الاشرفیہ جامعہ اشرفیہ لاہور))
-سیّدناابوھریرہ رضی اللہ عنہ امام کےپیچھےجہری نمازوں میں بھی سورۃ فاتحہ پڑھنےکاحکم دیتےتھےاور فرماتےتھےکہ اسےامام سےپہلےختم کر۔"
((جزءالقراءۃ للبخاری بتحقیقی۲۳۷،وقال الشیخ زبیرعلی زئی"سندہ صحیح۔وآثارالسنن:۳۵۸،وقال:واِسنادہ حسن۔الاتحاف الباسم،صفحہ:۲۲۹))
💎بلند آواز سے آمین کہنا
امَّنَ ابْنُ الزُّبَیْرِوَمَنْ وَرَاءَہُ حَتَّی اِنَّ لِلْمَسْجِدِ لَلَجَّۃً۔عبداللہ بن زبیررضی اللہ عنہ اور اُن لوگوں نےجوآپ کےپیچھے(مقتدی)تھےاس زور سےآمین کہی کہ مسجدگونج اٹھی۔"
وَکَانَ اَبُوْھُرَیْرَۃَ یُنَادِی الْاِمَامَ لَا تَفُتْنِیْ بِآمِیْنَ۔اور ابوھریرہ رضی اللہ عنہ امام سے کہہ دیاکرتےتھےکہ آمین سےہمیں محروم نہ رکھنا۔"
وَقَالَ نَافِعُُ كَانَ ابْنُ عُمَرَ لَا يَدَعُهُ وَيَحُضُّهُمْ۔
اور نافع نے کہا کہ ابن عمر رضی اللہ عنہما «آمين» کبھی نہیں چھوڑتے اور لوگوں کو اس کی ترغیب بھی دیا کرتے تھے۔"
(صحیح البخاری،کِتَابُ الْاَذَانِ:قبل الحدیث ۷۸۰،صحیح)
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ كَثِيرٍ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنَا سُفْيَانُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَلَمَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ حُجْرٍ أَبِي الْعَنْبَسِ الْحَضْرَمِيِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ وَائِلِ بْنِ حُجْرٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِذَا قَرَأَ:‏‏‏‏ وَلا الضَّالِّينَ سورة الفاتحة آية 7، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ آمِينَ وَرَفَعَ بِهَا صَوْتَهُ .
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم جب «ولا الضالين» پڑھتے تو آمین کہتے، اور اس کے ساتھ اپنی آواز بلند کرتے تھے۔"
((سنن ابی داودہ:۹۳۲،وسندہ صحیح))
حَدَّثَنَا مَخْلَدُ بْنُ خَالِدٍ الشَّعِيرِيُّ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا ابْنُ نُمَيْرٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ صَالِحٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَلَمَةَ بْنِ كُهَيْلٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ حُجْرِ بْنِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْوَائِلِ بْنِ حُجْرٍ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهُ صَلَّى خَلْفَ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَجَهَرَ بِآمِينَ، ‏‏‏‏‏‏وَسَلَّمَ عَنْ يَمِينِهِ وَعَنْ شِمَالِهِ حَتَّى رَأَيْتُ بَيَاضَ خَدِّهِ .
انہوں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پیچھے نماز پڑھی تو آپ نے زور سے آمین کہی اور اپنے دائیں اور بائیں جانب سلام پھیرا یہاں تک کہ میں نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے گال کی سفیدی دیکھ لی۔ "
((سنن ابی داود:۹۳۳ وسندہ صحیح))
-مولاناعبدالحئی لکھنوی(حنفی)لکھتےہیں"وَالْاِنْصَافُ اَنَّ الْجَھْرَقَوِیُُّ مِّنْ حَیْثُ الدَّلِیْلِ۔انصاف یہ ہےکہ دلیل کی رو سے آمین بالجہرقوی ہے۔"
((التعلیق الممجدعلی مؤطاالامام محمد۔صفحہ:۱۰۵))
-شیخ سیّدعبدالقادرجیلانی رحمہ اللہ نےفرمایا"وَالْجَھْرُ بِالْقِرَاءَۃِ اٰمِیْنَ۔(فجر۔مغرب۔عشاء کی نمازمیں)اونچی آواز سےقراءت پڑھنا اور اونچی آواز سےآمین کہناچاہیئے۔"
((غنیۃ الطالبین،صفحہ:۷۔مکتبہ تعمیرانسانیت))
*پھرقرآن مجید کی کوئی بھی سورت(سورت پڑھنےسےپہلےبِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ پڑھیں۔کتاب الام للشافعی :۱۰۸/۱) یاجوآیات یاد ہوں پڑھیں۔اورامام کےپیچھےصرف سورۃ فاتحہ پڑھیں۔پہلی رکعت میں دعااستفتاح(ثناء)بھی پڑھیں۔"
((سنن ابی داود:۸۵۹،وسندہ حسن۔خطبات سلفیہ،کتاب الصلاۃ))
💎قراءت کےبعدسکتہ
حَدَّثَنَا يَعْقُوبُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ يُونُسَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ الْحَسَنِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ سَمُرَةُ حَفِظْتُ سَكْتَتَيْنِ فِي الصَّلَاةِ:‏‏‏‏ سَكْتَةً إِذَا كَبَّرَ الْإِمَامُ حَتَّى يَقْرَأَ، ‏‏‏‏‏‏وَسَكْتَةً إِذَا فَرَغَ مِنْ فَاتِحَةِ الْكِتَابِ وَسُورَةٍ عِنْدَ الرُّكُوعِ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَأَنْكَرَ ذَلِكَ عَلَيْهِ عِمْرَانُ بْنُ حُصَيْنٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَكَتَبُوا فِي ذَلِكَ إِلَى الْمَدِينَةِ إِلَى أُبَيٍّ، ‏‏‏‏‏‏فَصَدَّقَ سَمُرَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ أَبُو دَاوُد:‏‏‏‏ كَذَا قَالَ حُمَيْدٌ فِي هَذَا الْحَدِيثِ:‏‏‏‏ وَسَكْتَةً إِذَا فَرَغَ مِنَ الْقِرَاءَةِ.
مجھے نماز میں دو سکتے یاد ہیں: ایک امام کے تکبیر تحریمہ کہنے سے، قرأت شروع کرنے اور دوسرا جب فاتحہ اور سورت کی قرأت سے فارغ ہو کر رکوع میں جانے کے قریب ہوا، اس پر عمران بن حصین رضی اللہ عنہما نے اس کا انکار کیا، تو لوگوں نے اس سلسلے میں مدینہ میں ابی بن کعب رضی اللہ عنہ کو خط لکھا، تو انہوں نے سمرہ کی تصدیق کی۔ ابوداؤد کہتے ہیں: حمید نے بھی اس حدیث میں اسی طرح کہا ہے کہ دوسرا سکتہ اس وقت کرتے جب آپ قرآت سے فارغ ہوتے۔
((سنن ابی داود:۷۷۷ وسندہ صحیح))
💎رفع الیدین کامسئلہ،رکوع کاطریقہ

حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مَسْلَمَةَ ، عَنْ مَالِكٍ ، عَنِ ابْنِ شِهَابٍ ، عَنْ سَالِمِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ ، عَنْ أَبِيهِ ، أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ كَانَ يَرْفَعُ يَدَيْهِ حَذْوَ مَنْكِبَيْهِ ، إِذَا افْتَتَحَ الصَّلَاةَ وَإِذَا كَبَّرَ لِلرُّكُوعِ وَإِذَا رَفَعَ رَأْسَهُ مِنَ الرُّكُوعِ رَفَعَهُمَا ، كَذَلِكَ أَيْضًا ، وَقَالَ : سَمِعَ اللَّهُ لِمَنْ حَمِدَهُ رَبَّنَا وَلَكَ الْحَمْدُ ، وَكَانَ لَا يَفْعَلُ ذَلِكَ فِي السُّجُودِ .
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نماز شروع کرتے وقت اپنے دونوں ہاتھوں کو کندھوں تک اٹھاتے، اسی طرح جب رکوع کے لیے «الله اكبر» کہتے اور جب اپنا سر رکوع سے اٹھاتے تو دونوں ہاتھ بھی اٹھاتے(رفع الیدین کرتے ) اور رکوع سے سر مبارک اٹھاتے ہوئے «سمع الله لمن حمده،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ ربنا ولك الحمد» کہتے تھے۔ سجدہ میں جاتے وقت رفع یدین نہیں کرتے تھے۔"
((صحیح البخاری:۷۳۵۔صحیح المسلم:۳۹۰،وسندہ صحیح))
۔امام شافعی رحمہ اللہ فرماتےہیں"رفع الیدین کی روایت صحابہ کرام رضی اللہ عنھم کی اتنی بڑی جماعت نےبیان کی ہےکہ شاید اس سےزیادہ تعداد نے کوئی دوسری روایت نہیں کی۔"
((نیل الاوطار:۹/۳/۲))
۔سیدناعمرفاروق رضی اللہ عنھم رفع الیدین کیاکرتےتھے۔"
((الخلافیات للبیھقی،نصب الرایۃ للزیلعی:۱۷۶۱))
سیدناعبداللہ بن زبیر اور سیدناابوبکرصدیق رضی اللہ عنھم بھی رفع الیدین کیاکرتےتھے۔"
((السنن الکبری للبیھقی،کتاب الصّلاۃ،باب رفع الیدین عندالرکوع وعندرفع الراس منہ:۲۵۱۹وسندہ صحیح۔اس کےتمام راوی ثقہ ہیں۔"(التلخیص الحبیر:۲۱۹/۱)))
۔حنفی مذہب کی معتبرکتاب درمختار میں ہےکہ" جس نےکہاکہ رفع الیدین سےنمازمیں نقصان آتاہے۔اس کاقول مردود ہے۔اوررکوع میں جاتےاوررکوع سےاٹھتےوقت رفع الیدین کرنےسےکچھ نقصان نہیں آتا۔"
((الدرالمختار،جلد۱،صفحہ:۵۸۴))
۔رفع الیدین کی ۴۰۰سےبھی زیادہ روایات ہیں۔"
((دیکھیں۔الرسائل للعبدالرشیدانصاری:ص۱۵۲سے۳۸۸تک))
۔شیخ سیّد عبدالقادر جیلانی رحمہ اللہ نےفرمایا"رَفْعُ الْیَدَیْنِ عِنْدَالْاِفْتِتَاحِ وَالرُّکُوْعِ وَالرَّفْعِ مِنْہُ۔نمازمیں تکبیراولی کےوقت،اور رکوع میں جاتےوقت اور رکوع سےاٹھتےوقت رفع الیدین کرناچاہیئے۔"
((غنیۃ الطالبین،عربی صفحہ۷،اردو صفحہ۲۱))
۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے رکوع کیا تو دونوں ہاتھ دونوں گھٹنوں پر رکھے گویا آپ ان کو پکڑے ہوئے ہیں اور اپنے دونوں ہاتھوں کو کمان کی تانت کی طرح کیا اور انہیں اپنے دونوں پہلوؤں سے جُدا رکھا۔"
((سنن ابی داؤد:۷۳۴،وسندہ صحیح))
أَخْبَرَنَا هَنَّادُ بْنُ السَّرِيِّ فِي حَدِيثِهِ عَنْ أَبِي الْأَحْوَصِ عَنْ عَطَاءِ بْنِ السَّائِبِ عَنْ سَالِمٍ قَالَ أَتَيْنَا أَبَا مَسْعُودٍ فَقُلْنَا لَهُ حَدِّثْنَا عَنْ صَلَاةِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَامَ بَيْنَ أَيْدِينَا وَكَبَّرَ فَلَمَّا رَكَعَ وَضَعَ رَاحَتَيْهِ عَلَى رُكْبَتَيْهِ وَجَعَلَ أَصَابِعَهُ أَسْفَلَ مِنْ ذَلِكَ وَجَافَى بِمِرْفَقَيْهِ حَتَّى اسْتَوَى كُلُّ شَيْءٍ مِنْهُ ثُمَّ قَالَ سَمِعَ اللَّهُ لِمَنْ حَمِدَهُ فَقَامَ حَتَّى اسْتَوَى كُلُّ شَيْءٍ مِنْهُ.
حضرت سالم بیان کرتے ہیں کہ ہم حضرت ابومسعود رضی اللہ عنہ کے پاس گئے اور ان سے گزارش کی کہ ہمیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی نماز بیان کیجیے ۔ آپ ہمارے آگے کھڑے ہو گئے اور اللہ اکبر کہا ۔ جب آپ نے رکوع کیا تو اپنی ہتھیلیاں اپنے گھٹنوں پر رکھیں اور انگلیاں اس سے نیچے رکھیں اور اپنی کہنیوں کو پہلوؤں سے دور رکھا حتی کہ آپ کا ہر عضو سیدھا اور درست ہو گیا ۔ پھر سمع اللہ لمن حمدہ کہا اور کھڑے ہو گئے حتی کہ آپ کا ہر عضو سیدھا اور درست ہو گیا ۔ "
((سنن النسائی:۱۰۳۷،وسندہ صحیح))
۔رکوع میں پیٹھ(پشت)بالکل سیدھی رکھیں اورسرکوپیٹھ کےبرابر۔"
((صحیح المسلم:۴۹۸))
۔رکوع کی دعائیں
سُبْحَانَ رَبِّیَ الْعَظِیْمِ۔
((صحیح المسلم:۷۷۲))
سُبْحَانَكَ اللَّهُمَّ رَبَّنَا وَبِحَمْدِكَ اللَّهُمَّ اغْفِرْ لِي۔
((صحیح البخاری:۷۹۴))
نبی ﷺ نےفرمایا"بلاشبہ مجھے رکوع اور سجدے کی حالت میں قرآن پڑھنے سے منع کیا گیا ہے۔"
((صحیح المسلم:۴۷۹))
💎قیام
(نبی ﷺ)جب اپنا سر رکوع سے اٹھاتے تو دونوں ہاتھ بھی اٹھاتے(رفع الیدین کرتے ) اور رکوع سے سر مبارک اٹھاتے ہوئے «سمع الله لمن حمده،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ ربنا ولك الحمد» کہتے تھے۔"
((صحیح البخاری:۷۳۵۔صحیح المسلم:۳۹۰،وسندہ صحیح))
۔رکوع کےبعدقیام کی حالت میں یہ بھی پڑھ سکتےہیں-
رَبَّنَا وَلَكَ الْحَمْدُ حَمْدًا كَثِيرًا طَيِّبًا مُبَارَكًا فِيهِ ،
((صحیح بخاری:۷۹۹))
💎سجدے کابیان
حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ مَنْصُورٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ مُحَمَّدٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ حَسَنٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي الزِّنَادِ، ‏‏‏‏‏‏عَنِالْأَعْرَجِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِذَا سَجَدَ أَحَدُكُمْ فَلَا يَبْرُكْ كَمَا يَبْرُكُ الْبَعِيرُ وَلْيَضَعْ يَدَيْهِ قَبْلَ رُكْبَتَيْهِ .
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جب تم میں سے کوئی شخص سجدہ کرے تو اس طرح نہ بیٹھے جیسے اونٹ بیٹھتا ہے بلکہ اپنے ہاتھ اپنے گھٹنوں سے پہلے ( زمین پر ) رکھے۔"
((سنن ابی داود،کتاب الصّلاۃ:۸۴۰،وسندہ صحیح،اس حدیث کو حاکم،ذہبی،ابن خزیمہ اور علامہ البانی رحمھم اللہ نے صحیح قرار دیاہے۔))
۔۔یادرہے اونٹ اوردیگر جانوروں کےگھٹنےان کےہاتھوں یعنی اگلی ٹانگوں میں ہوتےہیں۔"
((لسان العرب،جلد۱صفحہ:۴۳۳))
-امام طحاوی حنفی لکھتےہیں"انسان کوچاہیئےکہ پہلےہاتھ رکھےجس میں گھٹنےنہیں ہیں۔"
((شرح معانی الآثار:۲۵۴،۲۵۵/۱))
۔سجدہ سات اعضاء پرکریں۔
پیشانی۔دونوں ہاتھوں۔دونوں گھٹنوں اور دونوں قدموں کےپنجوں پر۔
((بخاری:۸۲۸،مسلم:۴۹۰))

-ایڑیوں کو ملا کر رکھیں۔"
((بیہقی:۱۱۶/۲،الصّلاۃ۔وسندہ صحیح۔اسےابن خزیمہ،حاکم،ذہبی اورحافظ زبیرعلی زئی نے صحیح کہاہے۔))
-آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے سجدہ کیا تو اپنی ناک اور پیشانی زمین پر جمائی اور اپنے دونوں ہاتھوں کو اپنی دونوں بغلوں سے جدا رکھا اور اپنی دونوں ہتھیلیاں اپنے دونوں کندھوں کے بالمقابل رکھیں،۔"
((سنن ابی داودہ:۷۳۴،وسندہ صحیح))
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ ، قَالَ : حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ ، قَالَ : حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، قَالَ : سَمِعْتُ قَتَادَةَ ، عَنْ أَنَسِ ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، قَالَ : اعْتَدِلُوا فِي السُّجُودِ ، وَلَا يَبْسُطْ أَحَدُكُمْ ذِرَاعَيْهِ انْبِسَاطَ الْكَلْبِ .
نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ سجدہ میں اعتدال کو ملحوظ رکھو اور اپنے بازو کتوں کی طرح نہ بچھاؤ ۔"
((صحیح البخاری:۸۲۲ وسندہ صحیح))
لہذا مردوں اور عورتوں کیلیے سجدہ میں بازو بچھاناجائزنہیں۔
سیدناعلی ‌رضی ‌اللہ ‌عنہ ‌سے روایت کی ، انہوں نے کہا کہ میرے حبیبﷺ نے مجھے اس بات سے منع فرمایا تھا کہ میں رکوع یا سجدے میں قرآن پڑھوں ۔"
((صحیح المسلم:۴۸۰))
۔سجدےکی دعائیں
۔ سُبْحَانَ رَبِّيَ الْأَعْلَى۔
((مسلم:۷۷۲))
۔سُبْحَانَكَ اللَّهُمَّ رَبَّنَا وَبِحَمْدِكَ اللَّهُمَّ اغْفِرْ لِي۔
((صحیح البخاری:۷۹۴))
*دونوں سجدوں کےدرمیان یہ دعا پڑھیں
۔رَبِّ اغْفِرْ لِي، ‏‏‏‏‏‏رَبِّ اغْفِرْ لِي،۔
((سنن ابی داود:۸۷۴،وسندہ صحیح))

💎جلسئہ استراحت
حَدَّثَنَا مُعَلَّى بْنُ أَسَدٍ ، قَالَ : حَدَّثَنَا وُهَيْبٌ ، عَنْ أَيُّوبَ ، عَنْ أَبِي قِلَابَةَ ، قَالَ : جَاءَنَا مَالِكُ بْنُ الْحُوَيْرِثِ فَصَلَّى بِنَا فِي مَسْجِدِنَا هَذَا ، فَقَالَ : إِنِّي لَأُصَلِّي بِكُمْ وَمَا أُرِيدُ الصَّلَاةَ ، وَلَكِنْ أُرِيدُ أَنْ أُرِيَكُمْ كَيْفَ رَأَيْتُ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يُصَلِّي ، قَالَ أَيُّوبُ : فَقُلْتُ لِأَبِي قِلَابَةَ : وَكَيْفَ كَانَتْ صَلَاتُهُ ؟ قَالَ : مِثْلَ صَلَاةِ شَيْخِنَا هَذَا يَعْنِي عَمْرَو بْنَ سَلِمَةَ ، قَالَ أَيُّوبُ : وَكَانَ ذَلِكَ الشَّيْخُ يُتِمُّ التَّكْبِيرَ ، وَإِذَا رَفَعَ رَأْسَهُ عَنِ السَّجْدَةِ الثَّانِيَةِ جَلَسَ وَاعْتَمَدَ عَلَى الْأَرْضِ ثُمَّ قَامَ .
میں نماز پڑھا رہا ہوں لیکن میری نیت کسی فرض کی ادائیگی نہیں ہے بلکہ میں صرف تم کو یہ دکھانا چاہتا ہوں کہ نبی کریم کس طرح نماز پڑھا کرتے تھے۔ ایوب سختیانی نے بیان کیا کہ میں نے ابوقلابہ سے پوچھا کہ مالک رضی اللہ عنہ کس طرح نماز پڑھتے تھے؟ تو انہوں نے فرمایا کہ ہمارے شیخ عمرو بن سلمہ کی طرح۔ ایوب نے بیان کیا کہ شیخ تمام تکبیرات کہتے تھے اور جب دوسرے سجدہ سے سر اٹھاتے تو تھوڑی دیر بیٹھتے اور زمین کا سہارا لے کر پھر اٹھتے۔ "
((صحیح البخاری،کتاب الآذان:۸۲۴وسندہ صحیح))
💎تشہد میں بیٹھنا
اس کوقعدہ نماز بھی کہتےہیں،دوسراسجدہ کرکےاُٹھ کےبایاں پاؤں بچھا کراس پربیٹھ جائیں،اوردایاں پاؤں کھڑا رکھیں اور دائیں ہاتھ کواپنےدائیں گھٹنےپررکھیں اور بائیں ہاتھ کواپنےبائیں گھٹنےپررکھیں۔"
((بلوغ المرام:۳۳۲))
۔دایاں ہاتھ دائیں ران پررکھنااور بایاں ہاتھ بائیں ران اپنی پررکھنا بھی صحیح ہے۔"
((صحیح المسلم،المساجد:۵۷۹))
-سیدہ اُم درداء رضی اللہ عنہا نمازمیں مَردوں کی طرح بیٹھاکرتی تھیں اور وہ فقیہہ تھیں۔"
((التاریخ الصغیرللبخاری:۹۰،وسندہ صحیح))
💎رفع سبابہ
وَحَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ، وَعَبْدُ بْنُ حُمَيْدٍ - قَالَ عَبْدٌ أَخْبَرَنَا، وَقَالَ ابْنُ رَافِعٍ: - حَدَّثَنَا عَبْدٌ الرَّزَّاقِ، أَخْبَرَنَا مَعْمَرٌ، عَنْ عُبَيْدِ اللهِ بْنِ عُمَرَ، عَنْ نَافِعٍ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ: «أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ كَانَ إِذَا جَلَسَ فِي الصَّلَاةِ وَضَعَ يَدَيْهِ عَلَى رُكْبَتَيْهِ، وَرَفَعَ إِصْبَعَهُ الْيُمْنَى الَّتِي تَلِي الْإِبْهَامَ، فَدَعَا بِهَا وَيَدَهُ الْيُسْرَى عَلَى رُكْبَتِهِ بَاسِطَهَا عَلَيْهَا»
عبید اللہ بن عمر نے نافع سے اور انھوں نے حضرت ابن عمر ‌رضی ‌اللہ ‌عنہما ‌ ‌ سے روایت کی کہ نبیﷺجب نماز میں بیٹھتے تو اپنے دونوں ہاتھ اپنے دونوں گٹھنوں پر رکھ لیتے اور انگوٹھے سے ملنے والی دائیں ہاتھ کی انگلی ( شہادت کی انگلی ) اٹھا کر اس سے دعا کرتے اور اس حالت میں آپکا بایاں ہاتھ آپکے بائیں گٹھنے پرہوتا ، اسے ( آپ ) اس ( گٹھنے ) پر پھیلا ئے ہوتے ۔ "
((صحیح مسلم:۱۳۰۹/۵۸۰))
حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ، حَدَّثَنَا لَيْثٌ، عَنِ ابْنِ عَجْلَانَ، ح قَالَ: وَحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ - وَاللَّفْظُ لَهُ - قَالَ: حَدَّثَنَا أَبُو خَالِدٍ الْأَحْمَرُ، عَنِ ابْنِ عَجْلَانَ، عَنْ عَامِرِ بْنِ عَبْدِ اللهِ بْنِ الزُّبَيْرِ، عَنْ أَبِيهِ، قَالَ: «كَانَ رَسُولُ اللهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِذَا قَعَدَ يَدْعُو، وَضَعَ يَدَهُ الْيُمْنَى عَلَى فَخِذِهِ الْيُمْنَى، وَيَدَهُ الْيُسْرَى عَلَى فَخِذِهِ الْيُسْرَى، وَأَشَارَ بِإِصْبَعِهِ السَّبَّابَةِ، وَوَضَعَ إِبْهَامَهُ عَلَى إِصْبَعِهِ الْوُسْطَى، وَيُلْقِمُ كَفَّهُ الْيُسْرَى رُكْبَتَهُ»
۔ ابن عجلان نے عامر بن عبد اللہ بن زبیرسے اور انھوں نے اپنے والد سے روایت کی ‘ انھوں نے کہا : رسول اللہ ﷺجب ( نماز میں ) بیٹھ کر دعا کرتے تو اپنا دایاں ہاتھ اپنی دائیں ران پراور اپنا بایاں ہاتھ اپنی بائیں ران پر رکھتے اور اپنی شہادت کی انگلی سے اشارہ کرتے اوراپنا انگوٹھا اپنی د رمیانی انگلی پررکھتےاور بائیں گٹھنے کو اپنی بائیں ہتھیلی کے اندر لےلیتے ( پکڑلیتے ۔ )
((صحیح المسلم:۱۳۰۸/۵۷۹))
ثُمَّ جَلَسَ فَافْتَرَشَ رِجْلَهُ الْيُسْرَى وَوَضَعَ يَدَهُ الْيُسْرَى عَلَى فَخِذِهِ الْيُسْرَى وَحَدَّ مِرْفَقَهُ الْأَيْمَنَ عَلَى فَخِذِهِ الْيُمْنَى وَقَبَضَ ثِنْتَيْنِ وَحَلَّقَ حَلْقَةً.......
پھر بیٹھے تو اپنا بایاں پیر بچھایا، اور بائیں ہاتھ کو اپنی بائیں ران پر رکھا، اور اپنی داہنی کہنی کو داہنی ران سے جدا رکھا اور دونوں انگلیوں ( خنصر، بنصر ) کو بند کر لیا اور دائرہ بنا لیا ( یعنی بیچ کی انگلی اور انگوٹھے سے ) ۔
((سنن ابی داؤد:۷۲۶ وسندہ صحیح))
💎انگلی کوحرکت دینا
ثُمَّ رَفَعَ إِصْبَعَهُ فَرَأَيْتُهُ يُحَرِّكُهَا يَدْعُو بِهَا۔"۔ پھر اپنی ( تشہد کی ) انگلی کو اٹھایا ، چنانچہ میں نے دیکھا ، آپ اسے حرکت دیتے تھے اس کے ساتھ دعاکرتے تھے۔"
((سنن النسائی:۸۹۰،وسندہ صحیح))
💎تشہدمیں نظر

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا يَحْيَى، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا ابْنُ عَجْلَانَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَامِرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ الزُّبَيْرِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِيهِ، ‏‏‏‏‏‏بِهَذَا الْحَدِيثِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ لَا يُجَاوِزُ بَصَرُهُ إِشَارَتَهُ-
اس میں ہے: آپ کی نظر اشارہ سے آگے نہیں بڑھتی تھی۔"

((سنن ابی داود:۹۸۹،وسندہ حسن))
💎دُرود کس تشہدمیں پڑھیں؟
أَخْبَرَنَا هَارُونُ بْنُ إِسْحَقَ عَنْ عَبْدَةَ عَنْ سَعِيدٍ عَنْ قَتَادَةَ عَنْ زُرَارَةَ بْنِ أَوْفَى عَنْ سَعْدِ بْنِ هِشَامٍ أَنَّ عَائِشَةَ قَالَتْ كُنَّا نُعِدُّ لِرَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ سِوَاكَهُ وَطَهُورَهُ فَيَبْعَثُهُ اللَّهُ عَزَّ وَجَلَّ لِمَا شَاءَ أَنْ يَبْعَثَهُ مِنْ اللَّيْلِ فَيَسْتَاكُ وَيَتَوَضَّأُ وَيُصَلِّي تِسْعَ رَكَعَاتٍ لَا يَجْلِسُ فِيهِنَّ إِلَّا عِنْدَ الثَّامِنَةِ وَيَحْمَدُ اللَّهَ وَيُصَلِّي عَلَى نَبِيِّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَيَدْعُو بَيْنَهُنَّ وَلَا يُسَلِّمُ تَسْلِيمًا ثُمَّ يُصَلِّي التَّاسِعَةَ وَيَقْعُدُ وَذَكَرَ كَلِمَةً نَحْوَهَا وَيَحْمَدُ اللَّهَ وَيُصَلِّي عَلَى نَبِيِّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَيَدْعُو ثُمَّ يُسَلِّمُ تَسْلِيمًا يُسْمِعُنَا ثُمَّ يُصَلِّي رَكْعَتَيْنِ وَهُوَ قَاعِدٌ
حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں کہ ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے لیے آپ کی مسواک اور وضو کا پانی تیار رکھتے تھے ، پھر جب اللہ تعالیٰ پسند فرماتا ، رات میں آپ کو اٹھا دیتا ۔ آپ ( اٹھ کر ) مسواک اور وضو فرماتے اور نو رکعات اس طرح پڑھتے کہ ان میں سے کسی کے آخر میں نہ بیٹھتے مگر آٹھویں رکعت پر بیٹھتے ۔ اللہ کی حمد کرتے اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم پر درود پڑھتے اور دعائیں کرتے مگر سلام نہ پھیرتے ، پھر نویں ( رکعت ) پڑھ کر بیٹھتے اور اللہ کی حمد و ثنا فرماتے اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم پر درود پڑھتے اور دعائیں کرتے پھر اتنی آواز سے سلام کہتے کہ ہمیں سنائی دیتا ، پھر بیٹھ کر دو رکعتیں پڑھتے ۔ "
((سنن النسائی:۱۷۲۱،وسندہ صحیح))
علام البانی رحمہ اللہ اس حدیث کی شرح میں فرماتےہیں کہ"یہ حدیث صراحتًا دلالت کرتی ہےکہ نبی ﷺ نےاپنےآپ پرپہلے تشہدمیں اسی طرح دُرود پڑھاجس طرح دوسرے تشہد میں دُرود پڑھتےتھے۔"
((تمام المنۃ:۲۲۴))

💎آخری تشہد
دایاں پاؤں کھڑا کریں اور بایاں پاؤں(دائیں پنڈلی کےنیچےسے)باہرنکالیں اورزمین پربیٹھیں۔اسےتورّک کہتےہیں اور یہ ہراس تشہدمیں ہوگا جس کےبعد سلام ہے۔"
((صحیح نماز نبوی،صفحہ:۲۱۷،دارالاندلس۔بخاری:۸۲۸))
-آخری تشہدمیں دائیں پاؤں کوبچھاکر رکھنا بھی جائز ہے۔
((صحیح المسلم:۵۷۹))
تشہد میں دُعا
حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ عِيسَى ، حَدَّثَنَا أَبُو عَبْدِ الصَّمَدِ عَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ عَبْدِ الصَّمَدِ , حَدَّثَنَا حُصَيْنُ بْنُ عَبْدِ الرَّحْمَنِ ، عَنْ أَبِي وَائِلٍ ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ مَسْعُودٍ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ , قَالَ : كُنَّا نَقُولُ التَّحِيَّةُ فِي الصَّلَاةِ وَنُسَمِّي وَيُسَلِّمُ بَعْضُنَا عَلَى بَعْضٍ , فَسَمِعَهُ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَالَ : قُولُوا : التَّحِيَّاتُ لِلَّهِ وَالصَّلَوَاتُ وَالطَّيِّبَاتُ السَّلَامُ عَلَيْكَ أَيُّهَا النَّبِيُّ وَرَحْمَةُ اللَّهِ وَبَرَكَاتُهُ السَّلَامُ عَلَيْنَا وَعَلَى عِبَادِ اللَّهِ الصَّالِحِينَ ، أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ وَأَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا عَبْدُهُ وَرَسُولُهُ ، فَإِنَّكُمْ إِذَا فَعَلْتُمْ ذَلِكَ فَقَدْ سَلَّمْتُمْ عَلَى كُلِّ عَبْدٍ لِلَّهِ صَالِحٍ فِي السَّمَاءِ وَالْأَرْضِ .
ہم پہلے نماز میں یوں کہا کرتے تھے فلاں پر سلام اور نام لیتے تھے۔ اور آپس میں ایک شخص دوسرے کو سلام کر لیتا۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے سن کر فرمایا اس طرح کہا کرو۔ «التحيات لله والصلوات والطيبات،‏‏‏‏ السلام عليك أيها النبي ورحمة الله وبركاته،‏‏‏‏ السلام علينا وعلى عباد الله الصالحين،‏‏‏‏ أشهد أن لا إله إلا الله وأشهد أن محمدا عبده ورسوله» ”یعنی ساری تحیات، بندگیاں اور کوششیں اور اچھی باتیں خاص اللہ ہی کے لیے ہیں اور اے نبی! آپ پر سلام ہو، اللہ کی رحمتیں اور اس کی برکتیں نازل ہوں۔ ہم پر سلام ہو اور اللہ کے سب نیک بندوں پر، میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں اور گواہی دیتا ہوں کہ محمد صلی اللہ علیہ وسلم اس کے بندے اور رسول ہیں۔“ اگر تم نے یہ پڑھ لیا تو گویا اللہ کے ان تمام صالح بندوں پر سلام پہنچا دیا جو آسمان اور زمین میں ہیں۔ "
((صحیح البخاری:۱۲۰۲ وسندہ صحیح))

۔۔پھرآپ ﷺ دُرود پڑھنےکاحکم دیتےتھے۔
حَدَّثَنَا قَيْسُ بْنُ حَفْصٍ وَمُوسَى بْنُ إِسْمَاعِيلَ ، قَالَا : حَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَاحِدِ بْنُ زِيَادٍ ، حَدَّثَنَا أَبُو فَرْوَةَ مُسْلِمُ بْنُ سَالِمٍ الْهَمْدَانِيُّ ، قَالَ : حَدَّثَنِي عَبْدُ اللَّهِ بْنُ عِيسَى سَمِعَ عَبْدَ الرَّحْمَنِ بْنَ أَبِي لَيْلَى ، قَالَ : لَقِيَنِي كَعْبُ بْنُ عُجْرَةَ ، فَقَالَ : أَلَا أُهْدِي لَكَ هَدِيَّةً سَمِعْتُهَا مِنَ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، فَقُلْتُ : بَلَى فَأَهْدِهَا لِي ، فَقَالَ : سَأَلْنَا رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ، فَقُلْنَا : يَا رَسُولَ اللَّهِ ، كَيْفَ الصَّلَاةُ عَلَيْكُمْ أَهْلَ الْبَيْتِ فَإِنَّ اللَّهَ قَدْ عَلَّمَنَا كَيْفَ نُسَلِّمُ عَلَيْكُمْ ، قَالَ : قُولُوا : اللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وَعَلَى آلِ مُحَمَّدٍ كَمَا صَلَّيْتَ عَلَى إِبْرَاهِيمَ وَعَلَى آلِ إِبْرَاهِيمَ إِنَّكَ حَمِيدٌ مَجِيدٌ ، اللَّهُمَّ بَارِكْ عَلَى مُحَمَّدٍ وَعَلَى آلِ مُحَمَّدٍ كَمَا بَارَكْتَ عَلَى إِبْرَاهِيمَ وَعَلَى آلِ إِبْرَاهِيمَ إِنَّكَ حَمِيدٌ مَجِيدٌ .
ایک مرتبہ کعب بن عجرہ رضی اللہ عنہ سے میری ملاقات ہوئی تو انہوں نے کہا کیوں نہ تمہیں ( حدیث کا ) ایک تحفہ پہنچا دوں جو میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے سنا تھا۔ میں نے عرض کیا جی ہاں مجھے یہ تحفہ ضرور عنایت فرمائیے۔ انہوں نے بیان کیا کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے پوچھا تھا یا رسول اللہ! ہم آپ پر اور آپ کے اہل بیت پر کس طرح درود بھیجا کریں؟ اللہ تعالیٰ نے سلام بھیجنے کا طریقہ تو ہمیں خود ہی سکھا دیا ہے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ یوں کہا کرو «اللهم صل على محمد،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ وعلى آل محمد،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ كما صليت على إبراهيم وعلى آل إبراهيم،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ إنك حميد مجيد،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ اللهم بارك على محمد،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ وعلى آل محمد،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ كما باركت على إبراهيم،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ وعلى آل إبراهيم،‏‏‏‏ ‏‏‏‏ إنك حميد مجيد‏ ‏‏.‏» ”اے اللہ! اپنی رحمت نازل فرما محمد صلی اللہ علیہ وسلم پر اور آل محمد صلی اللہ علیہ وسلم پر جیسا کہ تو نے اپنی رحمت نازل فرمائی ابراہیم پر اور آل ابراہیم علیہ السلام پر۔ بیشک تو بڑی خوبیوں والا اور بزرگی والا ہے۔ اے اللہ! برکت نازل فرما محمد پر اور آل محمد پر جیسا کہ تو نے برکت نازل فرمائی ابراہیم پر اور آل ابراہیم پر۔ بیشک تو بڑی خوبیوں والا اور بڑی عظمت والا ہے۔ "
((صحیح البخاری:۳۳۷۰ وسندہ صحیح))
💎پھر جودُعا مانگنی ہومانگیں عربی میں۔
چند دُعائیں درج ذیل ہیں
اللَّهُمَّ إِنِّي أَعُوذُ بِكَ مِنْ عَذَابِ الْقَبْرِ ، وَمِنْ عَذَابِ النَّارِ ، وَمِنْ فِتْنَةِ الْمَحْيَا وَالْمَمَاتِ ، وَمِنْ فِتْنَةِ الْمَسِيحِ الدَّجَّالِ .
((بخاری:۱۳۷۷))
اللَّهُمَّ إِنِّي أَعُوذُ بِكَ مِنْ عَذَابِ الْقَبْرِ ، وَأَعُوذُ بِكَ مِنْ فِتْنَةِ الْمَسِيحِ الدَّجَّالِ ، وَأَعُوذُ بِكَ مِنْ فِتْنَةِ الْمَحْيَا وَفِتْنَةِ الْمَمَاتِ ، اللَّهُمَّ إِنِّي أَعُوذُ بِكَ مِنَ الْمَأْثَمِ وَالْمَغْرَمِ۔
((بخاری:۸۳۲))
اللَّهُمَّ إِنِّي ظَلَمْتُ نَفْسِي ظُلْمًا كَثِيرًا وَلَا يَغْفِرُ الذُّنُوبَ إِلَّا أَنْتَ، فَاغْفِرْ لِي مَغْفِرَةً مِنْ عِنْدِكَ، وَارْحَمْنِي إِنَّك أَنْتَ الْغَفُورُ الرَّحِيمُ".
((صحیح البخاری:۸۳۴))
💎پھرآخر میں دائیں اور بائیں طرف سلام پھیردیں
السَّلَامُ عَلَيْكُمْ وَرَحْمَةُ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏السَّلَامُ عَلَيْكُمْ وَرَحْمَةُ اللَّهِ
((سنن ابی داود:۹۹۶وھوصحیح))
وما علینا الاالبلاغ(۱۹-۱۲-۲۰۲۰ء)
 
Top