🌷🌷🌷'ناتمام بچےکا جنازہ'🌷🌷🌷
🍀تحریر:الشیخ ابومحمدعبدالاحد سلفی🍀
اگرپانچ ماہ یا زیادہ مدت والا بچہ مُردہ پیدا ہو جائےیا پیدا ہوتے ہی مرجائےتو اس کی نماز جنازہ پڑهنی چاہئے_
کیونکہ چارماہ کےبعدبچےمیں رُوح پهونک دی جاتی ہے_
🍀حَدَّثَنَا أَبُو الْوَلِيدِ هِشَامُ بْنُ عَبْدِ الْمَلِكِ حَدَّثَنَا شُعْبَةُ أَنْبَأَنِي سُلَيْمَانُ الأَعْمَشُ قَالَ: سَمِعْتُ زَيْدَ بْنَ وَهْبٍ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ قَالَ: حَدَّثَنَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَهْوَ الصَّادِقُ الْمَصْدُوقُ قَالَ: «إِنَّ أَحَدَكُمْ يُجْمَعُ فِي بَطْنِ أُمِّهِ أَرْبَعِينَ يَوْمًا، ثُمَّ عَلَقَةً مِثْلَ ذَلِكَ، ثُمَّ يَكُونُ مُضْغَةً مِثْلَ ذَلِكَ، ثُمَّ يَبْعَثُ اللَّهُ مَلَكًا فَيُؤْمَرُ بِأَرْبَعٍ بِرِزْقِهِ، وَأَجَلِهِ، وَشَقِيٌّ، أَوْ سَعِيدٌ، فَوَاللَّهِ إِنَّ أَحَدَكُمْ- أَوِ الرَّجُلَ- يَعْمَلُ بِعَمَلِ أَهْلِ النَّارِ، حَتَّى مَا يَكُونُ بَيْنَهُ وَبَيْنَهَا غَيْرُ بَاعٍ أَوْ ذِرَاعٍ، فَيَسْبِقُ عَلَيْهِ الْكِتَابُ، فَيَعْمَلُ بِعَمَلِ أَهْلِ الْجَنَّةِ، فَيَدْخُلُهَا، وَإِنَّ الرَّجُلَ لَيَعْمَلُ بِعَمَلِ أَهْلِ الْجَنَّةِ، حَتَّى مَا يَكُونُ بَيْنَهُ وَبَيْنَهَا غَيْرُ ذِرَاعٍ أَوْ ذِرَاعَيْنِ، فَيَسْبِقُ عَلَيْهِ الْكِتَابُ، فَيَعْمَلُ بِعَمَلِ أَهْلِ النَّارِ، فَيَدْخُلُهَا». قَالَ آدَمُ إِلاَّ ذِرَاعٌ.
ہم کو رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم نے بیان سنایا اور آپ سچوں کے سچے تھے اور آپ (ﷺ)کی سچائی کی زبردست گواہی دی گئی۔ فرمایا کہ تم میں سے ہر شخص پہلے اپنی ماں کے پیٹ میں چالیس دن تک نطفہ ہی رکھا جاتا ہے۔ پھر اتنی ہی مدت میں «علقة» یعنی خون کی پھٹکی ( بستہ خون ) بنتا ہے پھر اتنے ہی عرصہ میں «مضغة» ( یعنی گوشت کا لوتھڑا ) پھر چار ماہ بعد اللّٰہ تعالیٰ ایک فرشتہ بھیجتا ہے اور اس کے بارے میں ( ماں کے پیٹ ہی میں ) چار باتوں کے لکھنے کا حکم دیا جاتا ہے۔ اس کی روزی کا، اس کی موت کا، اس کا کہ وہ بدبخت ہے یا نیک بخت۔ پس واللّٰہ، تم میں سے ایک شخص دوزخ والوں کے سے کام کرتا رہتا ہے اور جب اس کے اور دوزخ کے درمیان صرف ایک بالشت کا فاصلہ یا ایک ہاتھ کا فاصلہ باقی رہ جاتا ہے تو اس کی تقدیر اس پر غالب آتی ہے اور وہ جنت والوں کے سے کام کرنے لگتا ہے اور جنت میں جاتا ہے۔ اسی طرح ایک شخص جنت والوں کے سے کام کرتا رہتا ہے اور جب اس کے اور جنت کے درمیان ایک ہاتھ کا فاصلہ باقی رہ جاتا ہے تو اس کی تقدیر اس پر غالب آتی ہے اور وہ دوزخ والوں کے کام کرنے لگتا ہے اور دوزخ میں جاتا ہے۔ امام بخاری رحمہ اللّٰہ کہتے ہیں کہ آدم بن ابی ایاس نے اپنی روایت میں یوں کہا کہ جب ایک ہاتھ کا فاصلہ رہ جاتا ہے۔ "
{صحیح بخاری:6594_صحیح مسلم:6723/2643}
🍀حَدَّثَنَا وَهْبُ بْنُ بَقِيَّةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ خَالِدٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ يُونُسَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ زِيَادِ بْنِ جُبَيْرٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِيهِ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ الْمُغِيرَةِ بْنِ شُعْبَةَ، ‏‏‏‏‏‏وَأَحْسَبُ أَنَّ أَهْلَ زِيَادٍ أَخْبَرُونِي، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهُ رَفَعَهُ إِلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ الرَّاكِبُ يَسِيرُ خَلْفَ الْجَنَازَةِ، ‏‏‏‏‏‏وَالْمَاشِي يَمْشِي خَلْفَهَا، ‏‏‏‏‏‏وَأَمَامَهَا، ‏‏‏‏‏‏وَعَنْ يَمِينِهَا، ‏‏‏‏‏‏وَعَنْ يَسَارِهَا، ‏‏‏‏‏‏قَرِيبًا مِنْهَا، ‏‏‏‏‏‏وَالسِّقْطُ يُصَلَّى عَلَيْهِ، ‏‏‏‏‏‏وَيُدْعَى لِوَالِدَيْهِ بِالْمَغْفِرَةِ وَالرَّحْمَةِ .
نبی اکرم صلی اللّٰہ علیہ وسلم نے فرمایا: سوار جنازے کے پیچھے چلے، اور پیدل چلنے والا جنازے کے پیچھے، آگے دائیں بائیں کسی بھی جانب جنازے کے قریب ہو کر چل سکتا ہے، اور کچے بچوں کی نماز جنازہ پڑھی جائے اور ان کے والدین کے لیے رحمت و مغفرت کی دُعا کی جائے ۔
تخریج و تحقیق الحدیث:
[سنن ابی داود:3180,وسندہ صحیح_سنن الترمذی:1031,وقال:حسن صحیح_وصححہ ابن حبان:769والحاکم علی شرط البخاری:363/1ووافقہ الذہبی]
💐فقه الحدیث:
1.(السقط (سین پر تینوں حرکات کے ساتھ)اس سے مُراد نا تمام بچہ ہے۔
2.نا تمام پیدا ہونے والے بچے کی نماز جنازہ ادا کرنے کی بابت اختلاف ہے۔
🍁حضرت ابن عمر رضی اللّٰہ تعالیٰ عنہ کا قول ہے کہ بچہ اگر زندگی کی علامت کے ساتھ پیدا نہ ہو تو بھی اس کی نمازجنازہ پڑھی جائےگی۔ یہی قول ابن سیرین اور ابن مسیب کا ہے۔
🍁امام احمد بن حنبل اور اسحاق بن راہویہ رحمہم اللّٰہ کا قول ہے کہ اگر اس پر چار مہینے دس دن گزر چکے ہوں۔اور اس میں رُوح پھونک دی گئی ہو۔تو اس کی نماز جنازہ پڑھی جائےگی۔
🍁حضرت ابن عباس رضی اللّٰہ تعالیٰ عنہ کاقول ہے کہ جب بچہ پیدا ہو۔ اور علامت زندگی موجود ہوتو اس کی نماز جنازہ پڑھی جائےگی۔(عون المعبود)
🍁ناتمام(کچابچہ)بچےسےمُراد وہ بچہ ہےجس کےماں کےپیٹ میں چارماہ مکمل ہوچکےہوں اور اس میں روح پھونکی گئی ہوپھر یہ فوت ہوجائےخواہ پیدا ہوکر فوت ہو یا مُردہ ہی پیدا ہو اس کی نمازِجنازہ پڑھی جائے۔
🍁محدث العصرشیخ حافظ محمدزبیرعلی زئی رحمۃ اللّٰہ علیہ فرماتےہیں کہ اس حدیث (مشکوٰۃ:۸۲،بخاری:۶۵۹۴)سےثابت ہوا کہ چار ماہ کےبعدبچےمیں روح پھونک دی جاتی ہے۔اگرپانچ ماہ یا زیادہ مدت والا بچہ مُردہ پیدا ہوجائےیا پیداہوتےہی مر جائےتو اس کی نمازِجنازہ پڑھنی چاہیے۔"
[اضواءالمصابیح فی تحقیق مشکوٰۃ المصابیح،جلد۱،صفحہ:۱۳۰،مکتبہ اسلامیہ]
🍁سیّدنا ابن عمررضی اللّٰہ عنہ نےناتمام مُردہ بچےکی نمازِجنازہ پڑھی،نافع رحمہ اللّٰہ نےکہا کہ مجھےپتہ نہیں کہ وہ زندہ پیدا ہوکرمرگیا تھا یا پیدا ہی مُردہ ہوا تھا۔"
[مصنف ابنِ ابی شیبہ،۳۱۷/۳،رقم الحدیث:۱۱۵۸۴،وسندہ صحیح]
🍁امام محمدبن سیرین رحمہ اللّٰہ نےفرمایا:اگراس کی تخلیق پوری ہوجائےتو اس کا نام رکھا جائےگا اور اس کی نمازِجنازہ اسی طرح پڑھی جائےگی۔جس طرح بڑےآدمی کی پڑھی جاتی ہے۔"
[مصنف ابنِ ابی شیبہ:۱۱۵۸۸،اضواءالمصابیح:۱۳۱/۱وھو صحیح]
🍁عبدالرحمٰن بن ابی لیلیٰ رحمۃ اللّٰہ علیہ فرماتےہیں:ہم اپنی اولاد میں سےکسی کو بھی نمازِجنازہ پڑھےبغیر نہیں چھوڑیں گے۔"
[مصنف ابنِ ابی شیبہ،۳۱۷/۳،رقم الحدیث:۱۱۵۹۰وسندہ صحیح]
🍁حافظ زبیرعلی زئی رحمۃ اللّٰہ علیہ فرماتےہیں:جو علماء مُردہ(پیدا ہونےوالے) بچےکی نمازِجنازہ کےقائل نہیں ہیں اُن کا قول نبی کریم ﷺ کی حدیث کےخلاف ہونےکی وجہ سے متروک و ناقابلِ حجت ہے۔"
[اضواءالمصابیح:۱۳۱/۱]
🍁شیخ ناصرالدین البانی نے امام احمد بن حنبل اور اسحاق بن راہویہ رحمہم اللّٰہ کے قول کو راجح قرار دیا ہے۔
🌺اس حدیث کےراوی سیّدنا مغیرہ بن شغبہ رضی اللّٰه عنه نےفرمایا"سقط کی نمازجنازہ پڑهی جائےگی اور اس کےوالدین کےلئےمغفرت ورحمت کی دعاکی جائےگی_"
{مصنف ابن ابی شیبه:317/3ح11589,وقال الشیخ زبیرعلی زئی:وسندہ صحیح}
🍁قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ هَذَا حَدِيثٌ حَسَنٌ صَحِيحٌ، ‏‏‏‏‏‏رَوَاهُ إِسْرَائِيلُ، وَغَيْرُ وَاحِدٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَعِيدِ بْنِ عُبَيْدِ اللَّهِ، وَالْعَمَلُ عَلَيْهِ عِنْدَ بَعْضِ أَهْلِ الْعِلْمِ مِنْ أَصْحَابِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَغَيْرِهِمْ، ‏‏‏‏‏‏قَالُوا:‏‏‏‏ يُصَلَّى عَلَى الطِّفْلِ، ‏‏‏‏‏‏وَإِنْ لَمْ يَسْتَهِلَّ بَعْدَ أَنْ يُعْلَمَ أَنَّهُ خُلِقَ، ‏‏‏‏‏‏وَهُوَ قَوْلُ:‏‏‏‏ أَحْمَدَ، ‏‏‏‏‏‏وَإِسْحَاق.
امام ترمذی کہتے ہیں: ۱- یہ حدیث حسن صحیح ہے، ۲- اسرائیل اور دیگر کئی لوگوں نے اسے سعید بن عبداللہ سے روایت کیا ہے، ۳- صحابہ کرام وغیرہم میں سے بعض اہل علم کا اسی پر عمل ہے۔ یہ لوگ کہتے ہیں کہ بچے کی نماز جنازہ یہ جان لینے کے بعد کہ اس میں جان ڈال دی گئی تھی پڑھی جائے گی گو( ولادت کے وقت )وہ رویا نہ ہو، احمد اور اسحاق بن راہویہ رحمہم اللّٰہ تعالیٰ اسی کے قائل ہیں."
{سنن الترمذی:1031}
🌹اور یہی راجح قول ہے، کیوں کہ ماں کے پیٹ کے اندر ہی بچے کے اندر روح پھونک دی جاتی ہے، گویا نومولود ایک ذی روح مسلمان ہے۔🌹
🌺نوٹ:
جس روایت میں آیا ہےکہ
وَعَنْ جَابِرٌ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ: «الطِّفْلُ لَا يُصَلَّى عَلَيْهِ وَلَا يَرِثُ وَلَا يُوَرَّثُ حَتَّى يَسْتَهِلَّ» . رَوَاهُ التِّرْمِذِيُّ وَابْنُ مَاجَهْ إِلَّا أَنَّهُ لَمْ يَذْكُرْ: «وَلَا يُورث»
حضرت جابر رضی اللّٰہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے فرمایا :’’ جب تک پیدا ہونے والا بچہ چیخے نہیں تب تک اس کی نماز جنازہ پڑھی جائے گی نہ وہ وارث بنے گا اور نہ ہی اس کی میراث تقسیم ہو گی ۔‘‘ ترمذی ، ابن ماجہ ، لیکن انہوں نے یہ ذکرنہیں کیا کہ ’’ اس کی میراث تقسیم نہیں ہو گی ۔‘‘
{مشکوٰۃ المصابیح:۵۵۳/۱،رقم الحدیث:۱۶۹۱}
💐🌺تحقیق:اسنادہ ضعیف
ابوالزبیرمدلّس وعنعن وللحدیث طرق ضعیفۃ عند ابنِ حبان(الموارد:۱۲۲۳)والحاکم:۳۴۸،۳۴۹/۴وغیرھما
لہٰذا یہ روایت ضعیف ہے۔
🌺فائدہ:
نابالغ بچےکانمازِجنازہ نہ پڑھنا بھی جائز ہے
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ يَحْيَى بْنِ فَارِسٍ، ‏حَدَّثَنَا يَعْقُوبُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ بْنِ سَعْدٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا أَبِي، ‏‏‏‏‏‏عَنِ ابْنِ إِسْحَاق، ‏‏‏‏‏حَدَّثَنِي عَبْدُ اللَّهِ بْنُ أَبِي بَكْرٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَمْرَةَ بِنْتِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَائِشَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَتْ:‏‏‏‏مَاتَ إِبْرَاهِيمُ ابْنُ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَهُوَ ابْنُ ثَمَانِيَةَ عَشَرَ شَهْرًا، ‏‏‏‏‏‏فَلَمْ يُصَلِّ عَلَيْهِ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ.
نبی اکرم صلی اللّٰہ علیہ وسلم کے صاحبزادے ابراہیم کا انتقال ہوا اس وقت وہ اٹھارہ مہینے کے تھے تو رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم نے ان کی نماز جنازہ نہیں پڑھی۔
[سنن ابی داود،کتاب الجنائز:۳۱۸۷،وسندہ حسن]
🌷🌷وما علینا الا البلاغ🌷🌷
 
Top