شیعہ کیا ہیں؟؟؟؟
پوسٹ نمبر 1 کا لنک :

پوسٹ نمبر 2 کا لنک :

پوسٹ نمبر 3 کا لنک :

پوسٹ نمبر 4 کا لنک :

پوسٹ نمبر 5 کا لنک :

پوسٹ نمبر 6 کا لنک :

پوسٹ نمبر 7 کا لنک

پوسٹ نمبر 8 کا لنک

پوسٹ نمبر 9 کا لنک

پوسٹ نمبر 10 کا لنک

پوسٹ نمبر 11 کا لنک

پوسٹ نمبر 12 کا لنک

پوسٹ نمبر 13 کا لنک

پوسٹ نمبر 14 کا لنک

پوسٹ نمبر 15 کا لنک

┄┅══════════⇠❈⇢══════════┅┄

پ̳و̳س̳ٹ̳ /̳ 16

بِسْـــــــــــــــــــــــمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْمِ
السَّــــــــلاَم عَلَيــْـــــــكُم وَرَحْمَــــــــــةُاللهِ وَبَرَكـَـــــــــاتُه

ش̳ی̳ع̳ہ̳ ک̳ے̳ ک̳ف̳ر̳ پ̳ر̳ چ̳و̳ٹ̳ی̳ ک̳ے̳ ف̳ت̳ا̳و̳ی̳

❶̳ح̳ض̳ر̳ت̳ ع̳ل̳ی̳ ر̳ض̳ی̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳ ع̳ن̳ہ̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳
❷̳ح̳ض̳ر̳ت̳ ا̳م̳ا̳م̳ م̳ا̳ل̳ک̳ ر̳ح̳م̳ۃ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳ ع̳ل̳ی̳ہ̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳
❸̳ح̳ض̳ر̳ت̳ ق̳ا̳ض̳ی̳ ع̳ی̳ا̳ض̳ ر̳ح̳م̳ۃ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳ ع̳ل̳ی̳ہ̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳
❹̳ ̳ح̳ض̳ر̳ت̳ ش̳ی̳خ̳ ع̳ب̳د̳ ا̳ل̳ق̳ا̳د̳ر̳ ج̳ی̳ل̳ا̳ن̳ی̳ ر̳ح̳م̳ۃ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳ ع̳ل̳ی̳ہ̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳
❺̳ح̳ض̳ر̳ت̳ ا̳م̳ا̳م̳ ف̳خ̳ر̳ ا̳ل̳د̳ی̳ن̳ ر̳ا̳ز̳ی̳ ر̳ح̳م̳ۃ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳ ع̳ل̳ی̳ہ̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳
❻̳ع̳ل̳ا̳م̳ہ̳ ک̳م̳ا̳ل̳ ا̳ل̳د̳ی̳ن̳ ا̳ب̳ن̳ ع̳ص̳ا̳م̳ ر̳ح̳م̳ۃ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳ ع̳ل̳ی̳ہ̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳
❼̳ع̳ل̳ا̳م̳ہ̳ ا̳ب̳ن̳ ت̳ی̳م̳ی̳ہ̳ ر̳ح̳م̳ۃ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳ ع̳ل̳ی̳ہ̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳
❽̳ص̳ا̳ح̳بِ̳̳̳ؒ ف̳ت̳ا̳و̳یٰ̳̳ ب̳ز̳ا̳ز̳ی̳ہ̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳
❾̳م̳ل̳ا̳ ع̳ل̳ی̳ ق̳ا̳ر̳ی̳ ر̳ح̳م̳ۃ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳ ع̳ل̳ی̳ہ̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳
❿̳ح̳ض̳ر̳ت̳ م̳ج̳دِّ̳̳̳د̳ ا̳ل̳ف̳ ث̳ا̳ن̳ی̳ ر̳ح̳م̳ۃ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳ ع̳ل̳ی̳ہ̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳
⓫̳ف̳ت̳ا̳و̳یٰ̳̳ ع̳ا̳ل̳م̳گ̳ی̳ر̳ی̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳
⓬̳ ح̳ض̳ر̳ت̳ ش̳ا̳ہ̳ و̳ل̳ی̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳ م̳ح̳د̳ث̳ د̳ہ̳ل̳و̳ی̳ ر̳ح̳م̳ۃ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳ ع̳ل̳ی̳ہ̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳
⓭̳ ص̳ا̳ح̳بِ̳̳ د̳رّ̳̳ م̳خ̳ت̳ا̳ر̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳
⓮̳ ع̳ل̳ا̳م̳ہ̳ ش̳ا̳م̳ی̳̳ؒ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳
⓯̳ م̳و̳ل̳ا̳ن̳ا̳ ر̳ش̳ی̳د̳ ا̳ح̳م̳د̳ گ̳ن̳گ̳و̳ہ̳ی̳ ر̳ح̳م̳ۃ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳ ع̳ل̳ی̳ہ̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳
⓰̳ ح̳ض̳ر̳ت̳ ع̳ل̳ا̳م̳ہ̳ ا̳ن̳و̳ر̳ ش̳ا̳ہ̳ ک̳ش̳م̳ی̳ر̳ی̳ ر̳ح̳م̳ۃ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳ ع̳ل̳ی̳ہ̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳
⓱̳ م̳و̳ل̳ا̳ن̳ا̳ ا̳ح̳م̳د̳ ر̳ض̳ا̳ خ̳ا̳ن̳ ب̳ر̳ی̳ل̳و̳ی̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳

❶حضرت علی رضی اللہ عنہ کا فتویٰ
’’اگر میں اپنے شیعوں کو جانچوں تو یہ زبانی دعویٰ کرنے والے ہیں اور باتیں بنانے والے نکلیں گے، اور ان کا امتحان لوں تو یہ سب مرتد نکلیں گے‘‘۔
(ارضہ کلینی:۱۰۷۔ بحوالہ احسن الفتاویٰ:۱/۸۴)

❷حضرت امام مالک رحمۃ اللہ علیہ کا فتویٰ:
’’لیغیظ بھم الکفار کے تحت فرماتے ہیں کہ رافضیوں کے کفر کی قرآنی دلیل یہ ہے کہ یہ صحابہؓ کو دیکھ کر جلتے ہیں، اس لئے کافر ہیں‘‘۔
(الاعتصام:۲/۱۲۶۱۔ روح المعانی:پارہ۲۶)

❸حضرت قاضی عیاض رحمۃ اللہ علیہ کا فتویٰ:
’’کتاب الشفاء میں قاضی عیاضؒ فرماتے ہیں: جو شخص ایسی بات کرے کہ جس سے امت گمراہ قرار پائے اور صحابہ کرامؓ کی تکفیر ہو، ہم اسے قطعیت کے ساتھ کافر کہتے ہیں، اسی طرح جو قرآن میں تبدیلی یا زیادتی کا اقرار کرے‘‘۔
(کتاب الشفاء:۲/۲۸۶،۸۲۱ وغیرہ)

❹ حضرت شیخ عبد القادر جیلانی رحمۃ اللہ علیہ کا فتویٰ:
غنیۃ الطالبین میں شیخ عبد القادر جیلانیؒ فرماتے ہیں کہ: ’’شیعوں کے تمام گروہ اس بات پر اتفاق رکھتے ہیں کہ امام کا تعین اللہ تعالیٰ کے واضح حکم سے ہوتا ہے، وہ معصوم ہوتا ہے، حضرت علیؓ تمام صحابہؓ سے افضل ہیں، آپﷺ کی وفات کے بعد حضرت علیؓ کو امام ماننے کی وجہ سے چند ایک کے سوا تمام صحابہ مرتد ہوگئے‘‘۔
(غنیۃ الطالبین:۱۵۶۔۱۶۲)

❺حضرت امام فخر الدین رازی رحمۃ اللہ علیہ کا فتویٰ:
تفسیر کبیر میں فرماتے ہیں: ’’رافضیوں کی طر ف سے قرآن مجید کی تحریف کادعویٰ اسلام کو باطل کردیتا ہے‘‘۔
(تفسیر کبیر:۱۱۸)

❻علامہ کمال الدین ابن عصام رحمۃ اللہ علیہ کا فتویٰ:

فتح القدیر میں علامہ کمال الدینؒ فرماتے ہیں: ’’اگر رافضی ابوبکر صدیق و عمر رضی اللہ عنہما کی خلافت کا منکر ہے تو وہ کافر ہے‘‘۔
(فتح القدیر، باب الامامت:۸)

❼علامہ ابن تیمیہ رحمۃ اللہ علیہ کا فتویٰ:

الصارم المسلول میں فرماتے ہیں کہ: ’’اگر کوئی صحابہ کرامؓ کی شان میں گستاخی کو جائز سمجھ کر کرے تو وہ کافر ہے، صحابہ کرامؓ کی شان میں گستاخی کرنے والا سزائے موت کا مستحق ہے، جو صدیق اکبرؓ کی شان میں گالی دے تو وہ کافر ہے، رافضی کا ذبیحہ حرام ہے، حالانکہ اہل کتاب کا ذبیحہ حلال ہے، روافض کا ذبیحہ کھانا اس لئے جائز نہیں کہ شرعی حکم کے لحاظ سے یہ مرتد ہیں‘‘۔
(الصارم المسلول:۵۷۵)

❽صاحبِؒ فتاویٰ بزازیہ کا فتویٰ:

’’ابوبکر و عمر رضی اللہ عنہما کی خلافت کا منکر کافر ہے‘‘۔
حضرت علی، طلحہ، زبیر اور حضرت عائشہ رضی اللہ عنہم کو کافر کہنے والے کو کافر کہنا واجب ہے‘‘۔
(فتاویٰ بزازیہ:۳/۳۱۸)

❾ملا علی قاری رحمۃ اللہ علیہ کا فتویٰ:

شرح فقہ اکبر میں فرماتے ہیں: ’’جو شخص ابوبکر و عمر رضی اللہ عنہما کی خلافت کا انکار کرے تو وہ کافر ہے، کیونکہ ان دونوں کی خلافت پر تو صحابہؓ کا اجماع ہے‘‘۔
(شرح فقہ اکبر:۱۹۸)

❿حضرت مجدِّد الف ثانی رحمۃ اللہ علیہ کا فتویٰ:

مختلف مکتوبات میں روافض کو کافر فرماتے ہیں، ایک رسالہ مستقل ان پر لکھا ہے جس کا نام رد روافض ہے، اس میں تحریر فرماتے ہیں: ’’اس میں شک نہیں کہ ابوبکر و عمر رضی اللہ عنہما صحابہ میں سب سے افضل ہیں، پس یہ بات ظاہر ہے کہ ان کو کافر کہنا ان کی کمی بیان کرنا کفر و زندیقیت اور گمراہی کا باعث ہے‘‘۔
(ردّ روافض:۳۱)

⓫فتاویٰ عالمگیری کا فتویٰ:

’’روافض اگر حضرت ابوبکر و عمر رضی اللہ عنہما کی شان میں گستاخی کریں اور ان پر لعنت کریں تو کافر کافر ہیں، روافض دائرۂ اسلام سے خارج ہیں اور کافر ہیں اور ان کے احکام وہ ہیں جو شریعت میں مرتدین کے ہیں‘‘۔
(فتاویٰ عالمگیری:۲/۲۶۸)

⓬ حضرت شاہ ولی اللہ محدث دہلوی رحمۃ اللہ علیہ کا فتویٰ:

اپنی کتاب مسویٰ شرح مؤطا امام محمدؒ میں تحریر فرماتے ہیں کہ: ’’اگر کوئی خود کو مسلمان کہتا ہے لیکن بعض ایسی دینی حقیقتوں کی جن کا ثبوت رسول اللہ ﷺسے قطعی ہے ایسی تشریح و تاویل کرتا ہے جو صحابہؓ تابعینؒ اور اجماعِ امت کے خلاف ہے تو اس زندیق کہا جائے گا اور وہ لوگ زندیق ہیں جو یہ کہتے ہیں کہ ابوبکر و عمر رضی اللہ عنہما اہل جنت میں سے نہیں ہیں، لیکن اس کا مطلب یہ ہے کہ آپﷺ کے بعد کسی کو نبی نہ کہا جائے گا، لیکن نبوت کی جو حقیقت کسی انسان کا اللہ کی طرف سے مبعوث ہونا، اس کی اطاعت کا فرض ہونا اور اس کا معصوم ہونا، یہ سب ہمارے اماموں کو حاصل ہے، تو یہ عقیدہ رکھنے والے زندیق ہیں اور جمہور متأخرین حنفیہ، شافعیہ کا اتفاق ہے کہ یہ واجب القتل ہیں‘‘۔
(مسویٰ شرح مؤطا محمدؒ)

⓭ صاحبِ درّ مختار کا فتویٰ:

’’ابوبکر و عمر رضی اللہ عنہما میں سے کسی ایک کو برا بھلا کہنے والا یا ان میں سے کسی ایک پر طعن کرنے والا کافر ہے اور اس کی توبہ قبول نہیں کی جائے گی‘‘۔
(درمختار)

⓮ علامہ شامیؒ کا فتویٰ:

’’جو سیدہ عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا پر تہمت لگائے یا ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ کی صحابیت کا انکار کرے تو اس کے کفر میں کسی شبہ کی گنجائش نہیں‘‘۔
(شامی:۲/۲۹۴)

⓯ مولانا رشید احمد گنگوہی رحمۃ اللہ علیہ کا فتویٰ:

مولانا رشید احمد گنگوہیؒ ’’ہدایۃ الشیعہ‘‘ میں فرماتے ہیں کہ ’’شیعہ بے ادب ہیں، چند کلمہ توحید زبان سے کہتے ہیں اس کی وجہ سے وہ مسلمان نہیں ہوسکتے‘‘۔
(ہدایۃ الشیعہ:۱۴)

⓰ حضرت علامہ انور شاہ کشمیری رحمۃ اللہ علیہ کا فتویٰ:

’’اس میں کوئی اختلاف نہیں کہ ابوبکر و عمرو عثمان رضی اللہ عنہم اجمعین میں سے کسی ایک کی خلافت کا منکر کافر ہے‘‘۔
(کفار ملحدین:۵۱)

⓱ مولانا احمد رضا خان بریلوی کا فتویٰ:

اپنی کتاب رد الرافضہ میں بڑی تفصیل سے ذکر کرتے ہیں، جس کا اختصار یہ ہے کہ: ’’جو حضرات حضرت ابوبکر صدیق و عمر فاروق رضی اللہ عنہما خواہ ان میں سےایک کی شان پاک میں گستاخی کرے اگر چہ صرف اسی قدر کہ انہیں امام و خلیفہ برحق نہ مانے، کتاب معتبر و فقہ حنفی کی تصریحات اور عام ائمۂ ترجیح و فتویٰ کی تصحیحات سے یہ مطلقاً کافر ہیں‘‘۔
(رد الرافضہ)

┄┅════════════↡↡↡↡════════════┅┄

مسلمان کہلواکر اسلام سے خارج کرنے والے امور کا ارتکاب کرنے والے کو مسلمان نہیں بلکہ کافر کہا جاتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ قرآن کریم کا انکار کرنے والے، امہات المؤمنین اور صحابہ کرام کو گالیاں دینے والے شیعہ کسی بھی لحاظ سے نہ مسلمان ہیں اور نہ ہی اسلام سے ان کا کوئی تعلق ہے۔
یہی وجہ ہے کہ جب سے شیعیت ــ جس کا دوسرا نام رافضیت ہے ــ کے آغاز ہونے سے اب تک علمائے اہل حق شیعہ کو یہودونصاری کی طرح کا کافر بلکہ ان سے بدتر کافر قرار دیتے ہوئے آئے ہیں۔ اس وجہ سے کہ شیعہ نے اسلام کو ڈھادینے والے امور کا ارتکاب کرنے کے ساتھ ساتھ اپنے تمام دین کا لب ولباب شرک اور ہر کام میں اسلام کی مخالفت کرنا بنالیا ہے۔
شیعوں نے مسلمانوں کو دھوکہ دینے کے لیے شیعہ سنی بھائی بھائی کا نعرہ لگاتے ہوئے ہمیشہ ہر دور میں ہر جگہ میں امت مسلمہ کی پیٹھ میں چھرا گھونپا ہے۔ تاریخ ثابت کرتی ہے کہ مسلمانوں کیخلاف یہودونصاری اور دیگر دشمنان اسلام کی طرف سے ہونے والی ہر جارحیت اور حملے میں ان کا ساتھ دیا ہے۔
یہ سب حقائق کے باوجود کچھ سادہ لوح مسلمان ایسے ہیں جو اب بھی شیعوں سے دھوکے میں مبتلاہیں اور ان کو کافر کہنے میں تذبذب کا شکار ہیں۔
ایسے ہی لوگوں کے لیے ہم یہاں سلف صالحین، ائمہ کرام، فقہاء اور مفسرین رحمہم اللہ کے انتہائی اختصار کے ساتھ فتاوی کو بمع حوالہ اور اصل عربی عبارت کے ساتھ پیش کرینگے جن میں انہوں نے شیعوں کے کافر ہونے کے فتاوی جاری کرکے امت مسلمہ کو کئی صدیوں پہلے مسلمانوں کو کافروں کی اس نئی نسل شیعہ کی اصلیت بتاتے ہوئے ان سے خبردار کیا۔

س̳ل̳ف̳ ص̳ا̳ل̳ح̳ی̳ن̳،̳ ا̳ئ̳م̳ہ̳ ع̳ظ̳ا̳م̳،̳ ا̳ک̳ا̳ب̳ر̳ م̳ف̳س̳ر̳ی̳ن̳ ا̳و̳ر̳ ف̳ق̳ہ̳ا̳ئ̳ے̳ ک̳ر̳ا̳م̳ ک̳ا̳ ر̳ا̳ف̳ض̳ی̳ ش̳ی̳ع̳ہ̳ ک̳ے̳ ک̳ا̳ف̳ر̳ ہ̳و̳ن̳ے̳ ک̳ی̳ ب̳ا̳ب̳ت̳ ف̳ت̳ا̳و̳ی̳:̳

❶̳ ا̳م̳ا̳م̳ م̳ا̳ل̳ك̳ ا̳ب̳ن̳ ا̳ن̳س̳ ر̳ح̳م̳ہ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳:̳
❷̳ ا̳م̳ا̳م̳ ا̳ح̳م̳د̳ ب̳ن̳ ح̳ن̳ب̳ل̳ ر̳ح̳م̳ہ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳:̳
❸̳ ا̳م̳ا̳م̳ ب̳خ̳ا̳ر̳ی̳ ر̳ح̳م̳ہ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳:̳
❹̳ ̳ ا̳م̳ا̳م̳ ا̳ل̳ف̳ر̳ی̳ا̳ب̳ی̳ ر̳ح̳م̳ہ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳:̳
❺̳ ا̳م̳ا̳م̳ ا̳ح̳م̳د̳ ا̳ب̳ن̳ ی̳و̳ن̳س̳ ر̳ح̳م̳ہ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳:̳
❻̳ ا̳م̳ا̳م̳ ح̳س̳ن̳ ب̳ن̳ ع̳ل̳ی̳ ب̳ن̳ خ̳ل̳ف̳ ا̳ل̳ب̳ر̳ب̳ھ̳ا̳ر̳ی̳ ر̳ح̳م̳ہ̳ ا̳ل̳ل̳ه̳:̳
❼̳ ا̳م̳ا̳م̳ ع̳ب̳د̳ ا̳ل̳ق̳ا̳ھ̳ر̳ ا̳ل̳ب̳غ̳د̳ا̳د̳ی̳ ا̳ل̳ت̳م̳ی̳م̳ی̳ ر̳ح̳م̳ہ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳:̳
❽̳ ا̳م̳ا̳م̳ ق̳ا̳ض̳ی̳ ا̳ب̳و̳ ی̳ع̳ل̳ی̳ ر̳ح̳م̳ہ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳:̳
❾̳ ا̳م̳ا̳م̳ ا̳ب̳ن̳ ح̳ز̳م̳ ا̳ل̳ظ̳ا̳ہ̳ر̳ی̳ ر̳ح̳م̳ہ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳:̳
❿̳ ا̳م̳ا̳م̳ ش̳و̳ک̳ا̳ن̳ی̳ ر̳ح̳م̳ہ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳:̳
⓫̳ ا̳م̳ا̳م̳ ق̳ا̳ض̳ی̳ ع̳ی̳ا̳ض̳ ر̳ح̳م̳ہ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳ :̳
⓬̳ ا̳م̳ا̳م̳ ا̳ل̳س̳م̳ع̳ا̳ن̳ی̳ ر̳ح̳م̳ہ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳:̳
⓭̳ ف̳ق̳ی̳ہ̳ م̳ف̳س̳ر̳ ا̳م̳ا̳م̳ ا̳ص̳و̳ل̳ی̳،̳ ا̳ل̳ا̳س̳ف̳ر̳ا̳ی̳ی̳ن̳ی̳ ا̳ب̳و̳ ا̳ل̳م̳ظ̳ف̳ر̳ ش̳ہ̳ف̳و̳ر̳ ب̳ن̳ ط̳ا̳ہ̳ر̳ ب̳ن̳ م̳ح̳م̳د̳ ر̳ح̳م̳ہ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳:̳
⓮̳ ح̳ض̳ر̳ت̳ ا̳م̳ا̳م̳ ف̳خ̳ر̳ ا̳ل̳د̳ی̳ن̳ ر̳ا̳ز̳ی̳ ر̳ح̳م̳ۃ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳ ع̳ل̳ی̳ہ̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳
⓯̳ ع̳ل̳ا̳م̳ہ̳ ک̳م̳ا̳ل̳ ا̳ل̳د̳ی̳ن̳ ا̳ب̳ن̳ ع̳ص̳ا̳م̳ ر̳ح̳م̳ۃ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳ ع̳ل̳ی̳ہ̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳
⓰̳ ع̳ل̳ا̳م̳ہ̳ ا̳ب̳ن̳ ت̳ی̳م̳ی̳ہ̳ ر̳ح̳م̳ۃ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳ ع̳ل̳ی̳ہ̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳
⓱̳ص̳ا̳ح̳بِ̳̳̳ؒ ف̳ت̳ا̳و̳یٰ̳̳ ب̳ز̳ا̳ز̳ی̳ہ̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳
⓲̳ م̳ل̳ا̳ ع̳ل̳ی̳ ق̳ا̳ر̳ی̳ ر̳ح̳م̳ۃ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳ ع̳ل̳ی̳ہ̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳
⓳̳ ح̳ض̳ر̳ت̳ م̳ج̳دِّ̳̳̳د̳ ا̳ل̳ف̳ ث̳ا̳ن̳ی̳ ر̳ح̳م̳ۃ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳ ع̳ل̳ی̳ہ̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳
⓴̳ ح̳ض̳ر̳ت̳ ش̳ا̳ہ̳ و̳ل̳ی̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳ م̳ح̳د̳ث̳ د̳ہ̳ل̳و̳ی̳ ر̳ح̳م̳ۃ̳ ا̳ل̳ل̳ہ̳ ع̳ل̳ی̳ہ̳ ک̳ا̳ ف̳ت̳و̳یٰ̳̳:̳

❶ امام مالك ابن انس رحمہ اللہ:

الخلال نے ابو بکر المروذی سے روایت کیا، وہ کہتے ہیں کہ میں نے ابو عبداللہ کو یہ بتاتے ہوئے سنا کہ امام مالک رحمہ اللہ نے فرمایا:
الذي يشتم أصحاب النبي صلى الله عليه وسلم ليس لهم اسم أو قال : نصيب في الإسلام.
''جو نبی ﷺ کے صحابہ کو گالی دیتے ہیں ان کا برائے نام بھی اسلام سے کوئی تعلق نہیں ہے اور نہ ہی اسلام سے ان کا کوئی حصہ ہے۔'' (السنة، للخلال، ج 2 / ص 557)
امام ابن کثیر رحمہ اللہ نے اللہ تعالی کے اس فرمان {محمد رسول الله والذين معه أشداء على الكفار} سے لیکر اس فرمان الہی تک {ليغيظ بهم الكفار}کی شرح میں لکھا ہے کہ:
ومن هذه الآية انتزع الإمام مالك رحمة الله عليه في رواية عنه بتكفير الروافض الذين يبغضون الصحابة رضي الله عنهم قال : لأنهم يغيظونهم ومن غاظ الصحابة رضي الله عنهم فهو كافر لهذه الآية ووافقه طائفة من العلماء رضي الله عنهم على ذلك.
''اس آیت سے امام مالک رحمہ اللہ نے صحابہ رضی اللہ عنھم سے بغض رکھنے والے روافضہ (شیعہ) کی تکفیر کا استنباط کیا ہے کیونکہ یہ صحابہ کرام کو غیظ دلاتے ہیں اور جو صحابہ کو غیظ دلائے تو وہ اس آیت کی رو سے کافر ہے۔ علماء کی ایک جماعت ــ اللہ ان سے راضی ہوــ نے اس پر امام مالک کی موافقت کی ہے۔''
(تفسير ابن كثير: ج 4 / ص219 )
امام قرطبی رحمہ اللہ فرماتے ہیں:
لقد أحسن مالك في مقالته وأصاب في تأويله فمن نقص واحداً منهم أو طعن عليه في روايته فقد رد على الله رب العالمين وأبطل شرائع المسلمين
''امام مالک نے کافی اچھی بات کی ہے اور اس کی تاویل کرنے میں درستگی کو پایا۔ پس جس کسی نے کسی ایک صحابی کی شان گھٹائی یا ان کی روایت میں کوئی طعن کیا تو اس نے اللہ رب العالمین کو ٹھکرا دیا اور مسلمانوں کی تمام شریعتوں کو منسوخ کرڈالا ہے۔''
(تفسير القرطبی : ج 16 / ص 297 )

❷ امام احمد بن حنبل رحمہ اللہ:

امام الخلال نے السنۃ میں ابوبکر المروزی سے روایت کیا، وہ کہتے ہیں کہ میں نے ابو عبداللہ ـــ احمد بن حنبل رحمہ اللہ ـــ سے پوچھا کہ جو ابوبکر، عمر اور عائشہ رضی اللہ عنھم کو گالیاں دیتے ہیں، ان کا حکم کیا ہیں؟
امام احمد بن حنبل نے جواب دیا:
ما أراه على الإسلام.
''میرے نزدیک وہ اسلام پر نہیں ہیں۔''
امام احمد رحمہ اللہ نے کہا:
إذا كان جهمياً، أو قدرياً، أو رافضياً داعية، فلا يُصلى عليه، ولا يُسلم عليه.
''اگر جہمی، قدری اور رافضی(شیعی) بلانے والا ہو تو اسے نہ سلام کیا جائے اور نہ اس کی نمازہ جنازہ پڑھی جائے۔'' (کتاب السنة، للخلال، اثر روایت نمبر: 785)

❸ امام بخاری رحمہ اللہ:

ما أبالي صليت خلف الجهمي والرافضي، أم صليت خلف اليهود والنصارى، لا يُسلم عليهم، ولا يُعادون ولا يُناكحون، ولا يشهدون، ولا تُؤكل ذبائحهم.
''میرے نزدیک جہمی اور رافضی(شیعی) کے پیچھے نماز پڑھنے اور یہود ونصاری کے پیچھے نماز پڑھنے میں کوئی فرق نہیں ہیں۔ ان جہمیوں اور رافضیوں(شیعوں) کو نہ سلام کیا جائے، نہ ان سے ملا جائے، نہ ان سے نکاح کیا جائے، نہ ان کی گواہی قبول کی جائے اور نہ ان کے ہاتھوں سے ذبح شدہ جانوروں کا گوشت کھایا جائے۔'' (كتاب خلق افعال العباد، از امام بخاری: صفحہ 125)

❹ امام الفریابی رحمہ اللہ:

عن موسى بن هارون بن زياد قال: سمعت الفريابي – وهو محمد بن يوسف الفريابي – ورجل يسأله عمن شتم أبا بكرٍ قال: كافر، قال: فيصلى عليه؟ قال: لا، وسألته كيف يُصنع به وهو يقول: لا إله إلا الله؟ قال: لا تمسوه بأيديكم، ارفعوه بالخشب حتى تواروه في حفرته.
''موسی بن ھارون بن زیاد روایت کرتے ہیں کہ میں نے امام محمد بن یوسف الفریابی سے سنا کہ ان سے ایک شخص نے سیدنا ابوبکر رضی اللہ عنہ کو گالی دینے والے کے بارے میں پوچھا تو آپ نے جواب دیا کہ وہ کافر ہے۔ اس نے پوچھا کہ کیا اس کی نماز جنازہ پڑھی جاسکتی ہے تو آپ نے جواب دیا: نہیں۔
میں نے پھر آپ سے پوچھا کہ(اگر اس کی نمازہ جنازہ نہیں پڑھی جائے گی) تو پھر اس کی لاش کے ساتھ کیا کیا جائے گا جبکہ وہ لا الہ الا اللہ کا اقرار کرتا ہے؟ آپ نے جواب دیا کہ اس کے جسم کو ہاتھ بھی نہ لگایا جائے۔ لکڑی کے ذریعے اسے اٹھا کر اس کی قبر میں ڈال دو۔'' (کتاب السنة للخلال، روایت نمبر: 794)
(یعنی شیعی کافر پلید کی لاش کو ہاتھ بھی نہ لگایا جائے اور اسے لکڑی کے ذریعے سے قبر میں ڈال دیا جائے۔)

❺ امام احمد ابن یونس رحمہ اللہ:

أنا لا آكل ذبيحة رجل رافضي فإنه عندي مرتد.
''میں کسی رافضی (شیعی) کا ذبیحہ نہیں کھاتا ہوں کیونکہ وہ میرے نزدیک مرتد ہے۔''
(اعتقاد اہل السنة والجماعة، اللالكائی ج 8 / صفحہ 1546)
انہوں نے مزید فرمایا:
لو أن يهودياً ذبح شاة، وذبح رافضي لأكلت ذبيحة اليهودي، ولم آكل ذبيحة الرافضي لأنه مرتد عن الإسلام
''اگر یہودی کسی بکری کو ذبح کرے اور رافضی(شیعی) کسی بکری کو ذبح کرے تو میں یہودی کا ذبیحہ کھالوں گا (کیونکہ قرآن نے اہل کتاب کا ذبیحہ کھانا حلال کیا ہے)۔ میں رافضی (شیعی) کی ذبح کردہ بکری نہیں کھاؤں گا کیونکہ وہ اسلام سے مرتد ہے۔'' (الصارم المسلول، امام ابن تیمیہ: صفحہ 570 )

❻ امام حسن بن علی بن خلف البربھاری رحمہ الله:

واعلم أن الأهواء كلها ردية، تدعوا إلى السيف، وأردؤها وأكفرها الرافضة، والمعتزلة، والجهمية، فإنهم يريدون الناس على التعطيل والزندقة
''جان لیجئے! اہل اھواء تمام مرتد ہیں، جو تلوار کی طرف بلاتے ہیں۔ ان میں سب سے زیادہ ارتداد اور کفر والے رافضی (شیعی)، معتزلہ اور جھمیہ ہیں کیونکہ یہ لوگوں میں تعطیل (انکار) اور زندیقیت (الحاد) پھیلانا چاہتے ہیں۔''
(کتاب شرح السنة، صفحہ: 54)

❼ امام عبد القاھر البغدادی التمیمی رحمہ اللہ:

وأما أهل الأهواء من الجارودية والهشامية والجهمية والإمامية الذين كفروا خيار الصحابة .. فإنا نكفرهم، ولا تجوز الصلاة عليهم عندنا ولا الصلاة خلفهم
''اہل اھواء میں سے جاوردیہ، ھشامیہ، جھمیہ اور امامیہ (شیعہ) جنہوں نے صحابہ کرام کی مایہ ناز ہستیوں کی تکفیر کا ارتکاب کیا .. ہم ان کو کافر قرار دیتے ہیں اور ہمارے نزدیک نہ ان کی نماز جنازہ پڑھنا جائز ہیں اور نہ ہی ان کے پیچھے نماز پڑھنا جائز ہے۔'' (کتاب الفرق بين الفرق، صفحہ: 357)

❽ امام قاضی ابو یعلی رحمہ اللہ:

وأما الرافضة فالحكم فيهم .. إن كفر الصحابة أو فسقهم بمعنى يستوجب به النار فهو كافر
''رافضیوں کے بارے میں حکم یہ ہے کہ: .. بلاشبہ صحابہ کو کافر یا فاسق قرار دینے کا مطلب یہ ہے کہ ان کے اپنے اوپر ہی جہنم واجب ہوجاتی ہیں اور وہ خود کافر ہیں۔''
(کتاب المعتمد، صفحہ: 267)

❾ امام ابن حزم الظاہری رحمہ اللہ:

الروافض ليسوا من المسلمين.. وهي طائفة تجري مجرى اليهود والنصارى في الكذب والكفر.
''رافضی مسلمان نہیں ہیں.. بلکہ یہ ایک ایسا گروہ ہے جو جھوٹ اور کفر بکنے میں یہود ونصاری کے نقش قدم پر ان کے برابر چل رہا ہے۔''
(کتاب الفصل فی الملل والنحل، ج 2، صفحہ: 78)
ایک اور مقام پر فرمایا:
وإنما خالف في ذلك (وجوب الأخذ بما في القرآن) قوم من غلاة الروافض وهم كفار بذلك مشركون عند جميع أهل الإسلام وليس كلامنا مع هؤلاء وإنما كلامنا مع ملتنا
''قرآن میں جو کچھ ہے، اس پر عمل کرنا واجب ہونے کی مخالفت غلو پسند رافضیوں (شیعوں) کی قوم نے کی ہے اور ایسا کرنے کی وجہ سے وہ ایسے کافر ہیں کہ تمام اہل اسلام کے نزدیک وہ مشرک ہیں۔ اس لیے ہمارے مخاطب یہ (رافضی شیعہ) نہیں ہے بلکہ ہمارے مخاطب ہماری ملت والے ہیں (یعنی شیعہ ہم مسلمانوں کی ملت میں سے نہیں ہیں)۔'' (الاحكام لابن حزم: ج 1، صفحہ: 96)

❿ امام شوکانی رحمہ اللہ:

إن أصل دعوة الروافض كياد الدين ومخالفة الإسلام وبهذا يتبين أن كل رافض خبيث يصير كافرا بتكفيره لصحابي واحد فكيف بمن يكفر كل الصحابة واستثنى أفرادا يسيره.
''رافضیوں کی دعوت (منہج) کی اصلیت ہی دین کیخلاف سازش اور اسلام کی مخالفت کرنے پر مبنی ہے۔ اس سے واضح ہوتا ہے کہ ہر رافضی (شیعی) خبیث ایک صحابی کی تکفیر کرنے کی وجہ سے کافر ہوجاتا ہے تو اس کا کیا حال ہوگا جو تمام صحابہ کو کافر کہتا ہوں اور چند صحابہ کو کفر سے مستثنی قرار دیتا ہوں۔'' (كتاب نثر الجوهر على حديث أبي ذر، از امام شوکانی)

⓫ امام قاضی عیاض رحمہ اللہ :

نقطع بتكفير غلاة الرافضة في قولهم إن الأئمة أفضل من الأنبياء
''اماموں کو انبیاء سے زیادہ افضل قرار دینے والے غالی رافضیوں(شیعوں) کے قول میں موجود کفر کا ہم سرے سے انکار کرتے ہیں۔''
ایک اور جگہ پر فرمایا:
وكذلك نكفر من أنكر القرآن أو حرفاً منه أو غير شيئاً منه أو زاد فيه كفعل الباطنية والإسماعيلية
''اسی طرح ہم ر اس شخص کی تکفیر کرتے ہیں جس نے قرآن کا انکار کیا یا اسکے ایک حرف کا انکار کیا یا اس میں موجود کسی لفظ کو بدل ڈالا یا اس میں اضافہ کیا جیساکہ باطنیہ اوراسماعیلیہ ( شیعوں) نے کیا۔''
(کتاب الشفا: ج 2 ص 1078)

⓬ امام السمعانی رحمہ اللہ:

واجتمعت الأمة على تكفير الإمامية، لأنهم يعتقدون تضليل الصحابة وينكرون إجماعهم وينسبونهم إلى ما لا يليق بهم
''ساری امت امامیہ (شیعوں) کے کافر ہونے پر متفق ہیں کیونکہ یہ صحابہ کو گمراہ سمجھتے ہیں، ان کے اجماع کے منکر ہیں اور ان کی طرف ایسی چیزوں کو منسوب کرتے ہیں جو ان کے شان شایان نہیں ہیں۔'' (کتاب الانساب ج 6، صفحہ: 341)

⓭ فقیہ مفسر امام اصولی، الاسفرایینی ابو المظفر شہفور بن طاہر بن محمد رحمہ اللہ:

رافضیوں کے چند عقائد بیان کرنے کے بعد آپ لکھتے ہیں:
وليسوا في الحال على شيء من الدين ولا مزيد على هذا النوع من الكفر إذ لا بقاء فيه على شيء من الدين
''یہ (رافضی شیعہ) دین کی کسی چیز پر نہیں ہے اور اس سے بڑھ کر کفر کی کوئی قسم نہیں ہے کیونکہ ان میں دین کی کوئی ایک چیز بھی موجود نہیں ہے۔'' (کتاب التبصیر فی الدین: صفحہ: 24-25)
حضرت شیخ عبد القادر جیلانی رحمۃ اللہ علیہ کا فتویٰ:
غنیۃ الطالبین میں شیخ عبد القادر جیلانیؒ فرماتے ہیں کہ: ’’شیعوں کے تمام گروہ اس بات پر اتفاق رکھتے ہیں کہ امام کا تعین اللہ تعالیٰ کے واضح حکم سے ہوتا ہے، وہ معصوم ہوتا ہے، حضرت علیؓ تمام صحابہؓ سے افضل ہیں، آپﷺ کی وفات کے بعد حضرت علیؓ کو امام ماننے کی وجہ سے چند ایک کے سوا تمام صحابہ مرتد ہوگئے‘‘۔
(غنیۃ الطالبین:۱۵۶۔۱۶۲)

⓮ حضرت امام فخر الدین رازی رحمۃ اللہ علیہ کا فتویٰ:

تفسیر کبیر میں فرماتے ہیں: ’’رافضیوں کی طر ف سے قرآن مجید کی تحریف کادعویٰ اسلام کو باطل کردیتا ہے‘‘۔
(تفسیر کبیر:۱۱۸)

⓯ علامہ کمال الدین ابن عصام رحمۃ اللہ علیہ کا فتویٰ:

فتح القدیر میں علامہ کمال الدینؒ فرماتے ہیں: ’’اگر رافضی ابوبکر صدیق و عمر رضی اللہ عنہما کی خلافت کا منکر ہے تو وہ کافر ہے‘‘۔
(فتح القدیر، باب الامامت:۸)

⓰ علامہ ابن تیمیہ رحمۃ اللہ علیہ کا فتویٰ:

الصارم المسلول میں فرماتے ہیں کہ: ’’اگر کوئی صحابہ کرامؓ کی شان میں گستاخی کو جائز سمجھ کر کرے تو وہ کافر ہے، صحابہ کرامؓ کی شان میں گستاخی کرنے والا سزائے موت کا مستحق ہے، جو صدیق اکبرؓ کی شان میں گالی دے تو وہ کافر ہے، رافضی کا ذبیحہ حرام ہے، حالانکہ اہل کتاب کا ذبیحہ حلال ہے، روافض کا ذبیحہ کھانا اس لئے جائز نہیں کہ شرعی حکم کے لحاظ سے یہ مرتد ہیں‘‘۔
(الصارم المسلول:۵۷۵)

⓱صاحبِؒ فتاویٰ بزازیہ کا فتویٰ:

’’ابوبکر و عمر رضی اللہ عنہما کی خلافت کا منکر کافر ہے‘‘۔
حضرت علی، طلحہ، زبیر اور حضرت عائشہ رضی اللہ عنہم کو کافر کہنے والے کو کافر کہنا واجب ہے‘‘۔
(فتاویٰ بزازیہ:۳/۳۱۸)

⓲ ملا علی قاری رحمۃ اللہ علیہ کا فتویٰ:

شرح فقہ اکبر میں فرماتے ہیں: ’’جو شخص ابوبکر و عمر رضی اللہ عنہما کی خلافت کا انکار کرے تو وہ کافر ہے، کیونکہ ان دونوں کی خلافت پر تو صحابہؓ کا اجماع ہے‘‘۔
(شرح فقہ اکبر:۱۹۸)

⓳ حضرت مجدِّد الف ثانی رحمۃ اللہ علیہ کا فتویٰ:

مختلف مکتوبات میں روافض کو کافر فرماتے ہیں، ایک رسالہ مستقل ان پر لکھا ہے جس کا نام رد روافض ہے، اس میں تحریر فرماتے ہیں: ’’اس میں شک نہیں کہ ابوبکر و عمر رضی اللہ عنہما صحابہ میں سب سے افضل ہیں، پس یہ بات ظاہر ہے کہ ان کو کافر کہنا ان کی کمی بیان کرنا کفر و زندیقیت اور گمراہی کا باعث ہے‘‘۔
(ردّ روافض:۳۱)

⓴ حضرت شاہ ولی اللہ محدث دہلوی رحمۃ اللہ علیہ کا فتویٰ:

اپنی کتاب مسویٰ شرح مؤطا امام محمدؒ میں تحریر فرماتے ہیں کہ: ’’اگر کوئی خود کو مسلمان کہتا ہے لیکن بعض ایسی دینی حقیقتوں کی جن کا ثبوت رسول اللہ ﷺسے قطعی ہے ایسی تشریح و تاویل کرتا ہے جو صحابہؓ تابعینؒ اور اجماعِ امت کے خلاف ہے تو اس زندیق کہا جائے گا اور وہ لوگ زندیق ہیں جو یہ کہتے ہیں کہ ابوبکر و عمر رضی اللہ عنہما اہل جنت میں سے نہیں ہیں، لیکن اس کا مطلب یہ ہے کہ آپﷺ کے بعد کسی کو نبی نہ کہا جائے گا، لیکن نبوت کی جو حقیقت کسی انسان کا اللہ کی طرف سے مبعوث ہونا، اس کی اطاعت کا فرض ہونا اور اس کا معصوم ہونا، یہ سب ہمارے اماموں کو حاصل ہے، تو یہ عقیدہ رکھنے والے زندیق ہیں اور جمہور متأخرین حنفیہ، شافعیہ کا اتفاق ہے کہ یہ واجب القتل ہیں‘‘۔
(مسویٰ شرح مؤطا محمدؒ)

ھذا, واللہ تعالى أعلم, وعلمہ أکمل وأتم ورد العلم إلیہ أسلم والشکر والدعاء لمن نبہ وأرشد وقوم , وصلى اللہ على نبینا محمد وآلہ وسلم
وَالسَّــــــــلاَم عَلَيــْـــــــكُم وَرَحْمَــــــــــةُاللهِ وَبَرَكـَـــــــــاتُه
 
Top