🌹🍀🌹احکام الجنائز اور بدعات🌹🍀🌹
تحریر:ابومحمدعبدالاحدسلفی
🍁🍁قبرستان میں ممنوع کام🍁🍁
🌼فوت شدہ کی خوشنودی کیلیےاس کی قبرکی زیارت کرنا حرام ہے:
🌠حَدَّثَنَا عَلِيٌّ ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ ، عَنِ الزُّهْرِيِّ ، عَنْ سَعِيدٍ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ , عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ , قَالَ:لَا تُشَدُّ الرِّحَالُ إِلَّا إِلَى ثَلَاثَةِ مَسَاجِدَ،الْمَسْجِدِ الْحَرَامِ ، وَمَسْجِدِ الرَّسُولِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ،وَمَسْجِدِ الْأَقْصَی .
نبی کریم صلی اللّٰہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ تین مسجدوں کے سوا کسی کے لیے کجاوے نہ باندھے جائیں۔( یعنی سفر نہ کیا جائے )ایک مسجد الحرام، دوسری رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم کی مسجد( مسجد نبوی )اور تیسری مسجد الاقصیٰ یعنی بیت المقدس۔ "
[صحیح البخاری،کتاب فضل الصلاۃ فی مسجدمکۃ والمدینۃ،باب فضل الصلوٰۃ فی مسجد مکۃ والمدینۃ:۱۱۸۹۔مسلم:۱۳۹۷]
🌼قبرستان میں جوتےپہن کرچلنا جائز نہیں۔ہاں اگر کوئی ضرورت وحاجت ہوتو پھرجائز ہے:
🌠حَدَّثَنَا عَيَّاشٌ ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الْأَعْلَى ، حَدَّثَنَا سَعِيدٌ , قَالَ : وَقَالَ لِي خَلِيفَةُ ، حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ زُرَيْعٍ , حَدَّثَنَا سَعِيدٌ ، عَنْ قَتَادَةَ ، عَنْ أَنَسٍ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ , عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ , قَالَ :الْعَبْدُ إِذَا وُضِعَ فِي قَبْرِهِ , وَتُوُلِّيَ , وَذَهَبَ أَصْحَابُهُ حَتَّى إِنَّهُ لَيَسْمَعُ قَرْعَ نِعَالِهِمْ ، أَتَاهُ مَلَكَانِ فَأَقْعَدَاهُ , فَيَقُولَانِ لَهُ : مَا كُنْتَ تَقُولُ فِي هَذَا الرَّجُلِ مُحَمَّدٍ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ؟ فَيَقُولُ : أَشْهَدُ أَنَّهُ عَبْدُ اللَّهِ وَرَسُولُهُ ، فَيُقَالُ : انْظُرْ إِلَى مَقْعَدِكَ مِنَ النَّارِ أَبْدَلَكَ اللَّهُ بِهِ مَقْعَدًا مِنَ الْجَنَّةِ ، قَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : فَيَرَاهُمَا جَمِيعًا ، وَأَمَّا الْكَافِرُ أَوِ الْمُنَافِقُ , فَيَقُولُ : لَا أَدْرِي كُنْتُ أَقُولُ مَا يَقُولُ النَّاسُ ، فَيُقَالُ : لَا دَرَيْتَ وَلَا تَلَيْتَ ، ثُمَّ يُضْرَبُ بِمِطْرَقَةٍ مِنْ حَدِيدٍ ضَرْبَةً بَيْنَ أُذُنَيْهِ فَيَصِيحُ صَيْحَةً يَسْمَعُهَا مَنْ يَلِيهِ إِلَّا الثَّقَلَيْنِ .
آدمی جب قبر میں رکھا جاتا ہے اور دفن کر کے اس کے لوگ پیٹھ موڑ کر رخصت ہوتے ہیں تو وہ ان کے جوتوں کی آواز سنتا ہے۔ پھر دو فرشتے آتے ہیں اسے بٹھاتے ہیں اور پوچھتے ہیں کہ اس شخص( محمد صلی اللہ علیہ وسلم)کے متعلق تمہارا کیا اعتقاد ہے؟ وہ جواب دیتا ہے کہ میں گواہی دیتا ہوں کہ وہ اللہ کے بندے اور اس کے رسول ہیں۔ اس جواب پر اس سے کہا جاتا ہے کہ یہ دیکھ جہنم کا اپنا ایک ٹھکانا لیکن اللہ تعالیٰ نے جنت میں تیرے لیے ایک مکان اس کے بدلے میں بنا دیا ہے۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ پھر اس بندہ مومن کو جنت اور جہنم دونوں دکھائی جاتی ہیں اور رہا کافر یا منافق تو اس کا جواب یہ ہوتا ہے کہ مجھے معلوم نہیں ‘ میں نے لوگوں کو ایک بات کہتے سنا تھا وہی میں بھی کہتا رہا۔ پھر اس سے کہا جاتا ہے کہ نہ تو نے کچھ سمجھا اور نہ( اچھے لوگوں کی )پیروی کی۔ اس کے بعد اسے ایک لوہے کے ہتھوڑے سے بڑے زور سے مارا جاتا ہے اور وہ اتنے بھیانک طریقہ سے چیختا ہے کہ انسان اور جن کے سوا اردگرد کی تمام مخلوق سنتی ہے۔ "
[صحیح البخاری،کتاب الجنائز،باب المیت یسمع خفق النعال:۱۳۳۸]
🌠حَدَّثَنَا سَهْلُ بْنُ بَكَّارٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا الْأَسْوَدُ بْنُ شَيْبَانَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ خَالِدِ بْنِ سُمَيْرٍ السَّدُوسِيِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ بَشِيرِ بْنِ نَهِيكٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ بَشِيرٍ مَوْلَى رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَكَانَ اسْمُهُ فِي الْجَاهِلِيَّةِ زَحْمُ بْنُ مَعْبَدٍ، ‏‏‏‏‏‏فَهَاجَرَ إِلَى رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ مَا اسْمُكَ ؟، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ زَحْمٌ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ بَلْ أَنْتَ بَشِيرٌ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ بَيْنَمَا أَنَا أُمَاشِي رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏مَرَّ بِقُبُورِ الْمُشْرِكِينَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ لَقَدْ سَبَقَ هَؤُلَاءِ خَيْرًا كَثِيرًا، ‏‏‏‏‏‏ثَلَاثًا، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ مَرَّ بِقُبُورِ الْمُسْلِمِينَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ لَقَدْ أَدْرَكَ هَؤُلَاءِ خَيْرًا كَثِيرًا، ‏‏‏‏‏‏وَحَانَتْ مِنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَظْرَةٌ، ‏‏‏‏‏‏فَإِذَا رَجُلٌ يَمْشِي فِي الْقُبُورِ عَلَيْهِ نَعْلَانِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ يَا صَاحِبَ السِّبْتِيَّتَيْنِ، ‏‏‏‏‏‏وَيْحَكَ، ‏‏‏‏‏‏أَلْقِ سِبْتِيَّتَيْكَ، ‏‏‏‏‏‏فَنَظَرَ الرَّجُلُ، ‏‏‏‏‏‏فَلَمَّا عَرَفَ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏خَلَعَهُمَا، ‏‏‏‏‏‏فَرَمَى بِهِمَا.
غلام بشیر رضی اللّٰہ عنہ( جن کا نام زمانہ جاہلیت میں زحم بن معبد تھا وہ ہجرت کر کے رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم کے پاس آئے تو آپ صلی اللّٰہ علیہ وسلم نے ان سے پوچھا: تمہارا کیا نام ہے؟ ، انہوں نے کہا: زحم، آپ صلی اللّٰہ علیہ وسلم نے فرمایا: زحم نہیں بلکہ تم بشیر ہو کہتے ہیں: اسی اثناء میں کہ میں رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم کے ساتھ جا رہا تھا کہ آپ کا گزر مشرکین کی قبروں پر سے ہوا، آپ صلی اللّٰہ علیہ وسلم نے تین بار فرمایا:یہ لوگ خیر کثیر ( دین اسلام )سے پہلے گزر( مر )گئے ،پھر آپ صلی اللّٰہ علیہ وسلم مسلمانوں کی قبروں پر سے گزرے تو آپ ﷺ نے فرمایا:ان لوگوں نے خیر کثیر( بہت زیادہ بھلائی )حاصل کی اچانک آپ ﷺ کی نظر ایک ایسے شخص پر پڑی جو جوتے پہنے قبروں کے درمیان چل رہا تھا آپ صلی اللّٰہ علیہ وسلم نے فرمایا:اے جوتیوں والے! تجھ پر افسوس ہے، اپنی جوتیاں اتار دے اس آدمی نے( نظر اُٹھا کر )دیکھا اور رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم کو پہچانتے ہی انہیں اتار پھینکا۔ "
[سنن ابی داود،کتاب الجنائز،باب المشی فی النعل بین القبور:۳۲۳۰،وسندہ حسن]
🌼قبر پر بیٹھنا:
🌠حَدَّثَنِي عَلِيُّ بْنُ حُجْرٍ السَّعْدِيُّ حَدَّثَنَا الْوَلِيدُ بْنُ مُسْلِمٍ عَنْ ابْنِ جَابِرٍ عَنْ بُسْرِ بْنِ عُبَيْدِ اللَّهِ عَنْ وَاثِلَةَ عَنْ أَبِي مَرْثَدٍ الْغَنَوِيِّ قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ لَا تَجْلِسُوا عَلَى الْقُبُورِ وَلَا تُصَلُّوا إِلَيْهَا.
بسر بن عبیداللّٰہ نے حضرت و اثلہ(بن اسقع بن کعب رضی اللّٰہ تعالیٰ عنہ )سے اور انھوں نے حضرت ابو مرثد غنوی رضی اللّٰہ تعالیٰ عنہ سے روایت کی ، انھوں نے کہا : رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : قبروں پر نہ بیٹھو اور نہ ان کی طرف ( رخ کرکے )نماز پڑھو ۔"
[صحیح المسلم،کتاب الجنائز،باب النھی عن الجلوس علی القبر والصلاۃ علیہ:۲۲۵۰/۹۷۲]
🌼قبر پر پاؤں رکھنا اور قبرستان میں پیشاب کرنا۔
(مصنف ابنِ ابی شیبہ:۲۱۹/۳من قول عقبۃ بن عامر،واسنادہ صحیح)
🌼قبرستان میں مسجد بنانا:
🌠حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ سَلَامٍ ، قَالَ : أَخْبَرَنَا عَبْدَةُ ، عَنْ هِشَامِ بْنِ عُرْوَةَ ، عَنْ أَبِيهِ ، عَنْ عَائِشَةَ ، أَنَّ أُمَّ سَلَمَةَ ذَكَرَتْ لِرَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ كَنِيسَةً رَأَتْهَا بِأَرْضِ الْحَبَشَةِ يُقَالُ لَهَا مَارِيَةُ ، فَذَكَرَتْ لَهُ مَا رَأَتْ فِيهَا مِنَ الصُّوَرِ ، فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : أُولَئِكَ قَوْمٌ إِذَا مَاتَ فِيهِمُ الْعَبْدُ الصَّالِحُ أَوِ الرَّجُلُ الصَّالِحُ بَنَوْا عَلَى قَبْرِهِ مَسْجِدًا وَصَوَّرُوا فِيهِ تِلْكَ الصُّوَرَ ، أُولَئِكَ شِرَارُ الْخَلْقِ عِنْدَ اللَّهِ .
ام سلمہ رضی اللہ عنہا نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے ایک گرجا کا ذکر کیا جس کو انہوں نے حبش کے ملک میں دیکھا اس کا نام ماریہ تھا۔ اس میں جو مورتیں دیکھی تھیں وہ بیان کیں۔ اس پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ یہ ایسے لوگ تھے کہ اگر ان میں کوئی نیک بندہ ( یا یہ فرمایا کہ ) نیک آدمی مر جاتا تو اس کی قبر پر مسجد بناتے اور اس میں یہ بت رکھتے۔ یہ لوگ اللہ کے نزدیک ساری مخلوقات سے بدتر ہیں۔ "
[صحیح البخاری،کتاب المساجد،باب الصلاۃ فی البیعۃ:۴۳۴۔صحیح المسلم:۵۳۱]
🌼قبرستان میں نماز پڑھنا:
🌠 حَدَّثَنِي عَلِيُّ بْنُ حُجْرٍ السَّعْدِيُّ حَدَّثَنَا الْوَلِيدُ بْنُ مُسْلِمٍ عَنْ ابْنِ جَابِرٍ عَنْ بُسْرِ بْنِ عُبَيْدِ اللَّهِ عَنْ وَاثِلَةَ عَنْ أَبِي مَرْثَدٍ الْغَنَوِيِّ قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ لَا تَجْلِسُوا عَلَى الْقُبُورِ وَلَا تُصَلُّوا إِلَيْهَا.
بسر بن عبیداللہ نے حضرت و اثلہ ( بن اسقع بن کعب رضی اللہ تعالیٰ عنہ ) سے اور انھوں نے حضرت ابو مرثد غنوی رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت کی ، انھوں نے کہا : رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : قبروں پر نہ بیٹھو اور نہ ان کی طرف ( رخ کرکے ) نماز پڑھو ۔"
[صحیح المسلم،کتاب الجنائز،باب النھی عن الجلوس علی القبر والصلاۃ علیہ:۲۲۵۰/۹۷۲]
🌼قبرستان میں قرآنِ مجیدپڑھنا:
🌠حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ حَدَّثَنَا يَعْقُوبُ وَهُوَ ابْنُ عَبْدِ الرَّحْمَنِ الْقَارِيُّ عَنْ سُهَيْلٍ عَنْ أَبِيهِ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ لَا تَجْعَلُوا بُيُوتَكُمْ مَقَابِرَ إِنَّ الشَّيْطَانَ يَنْفِرُ مِنْ الْبَيْتِ الَّذِي تُقْرَأُ فِيهِ سُورَةُ الْبَقَرَةِ.
حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روا یت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فر ما یا:اپنے گھروں کو قبرستان نہ بنا ؤ شیطان اس گھر سے بھا گتا ہے جس میں سورہ بقرہ پڑھی جاتی ہے ۔"
[صحیح المسلم،کتاب صلاۃ المسافرین،باب استحباب صلاۃ النافلۃ فی بیتہ....الخ:۱۸۲۴/۷۸۰]
🌼قبر کےپاس جانور ذَبح کرنا:
🌠حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ مُوسَى الْبَلْخِيُّ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنَا مَعْمَرٌ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ ثَابِتٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَنَسٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ لَا عَقْرَ فِي الْإِسْلَامِ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ عَبْدُ الرَّزَّاقِ:‏‏‏‏ كَانُوا يَعْقِرُونَ عِنْدَ الْقَبْرِ بَقَرَةً أَوْ شَاةً.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اسلام میں «عقر» نہیں ہے ۔ عبدالرزاق کہتے ہیں: لوگ زمانہ جاہلیت میں قبر کے پاس جا کر گائے بکری وغیرہ ذبح کیا کرتے تھے۔"
[سنن ابی داود،کتاب الجنائز،باب کراھیۃ الذبح عندالقبر:۳۲۲۲،وسندہ صحیح]
🌼بلاعذر محض قبر کو اونچا کرنے کےلیے باہر سےمٹی لا کر قبر پر ڈالنا اور قبر پرکتبہ لگانا:
🌠حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ حَنْبَلٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنَا ابْنُ جُرَيْجٍ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنِي أَبُو الزُّبَيْرِ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهُ سَمِعَ جَابِرًا، ‏‏‏‏‏‏يَقُولُ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى أَنْ يُقْعَدَ عَلَى الْقَبْرِ، ‏‏‏‏‏‏وَأَنْ يُقَصَّصَ، ‏‏‏‏‏‏وَيُبْنَى عَلَيْهِ.
میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو قبر پر بیٹھنے، اسے پختہ بنانے، اور اس پر عمارت تعمیر کرنے سے منع فرماتے سنا ہے۔"
[سنن ابی داود،کتاب الجنائز،باب فی البناء علی القبر:۳۲۲۵،وسندہ صحیح]
🌠حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، ‏‏‏‏‏‏وَعُثْمَانُ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حَفْصُ بْنُ غِيَاثٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ ابْنِ جُرَيْجٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سُلَيْمَانَ بْنِ مُوسَى، ‏‏‏‏‏‏وَعَنْأَبِي الزُّبَيْرِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ جَابِرٍ، ‏‏‏‏‏‏بِهَذَا الْحَدِيثِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ أَبُو دَاوُد:‏‏‏‏ قَالَ عُثْمَانُ:‏‏‏‏ أَوْ يُزَادَ عَلَيْهِ، ‏‏‏‏‏‏وَزَادَ سُلَيْمَانُ بْنُ مُوسَى:‏‏‏‏ أَوْ أَنْ يُكْتَبَ عَلَيْهِ، ‏‏‏‏‏‏وَلَمْ يَذْكُرْ مُسَدَّدٌ فِي حَدِيثِهِ:‏‏‏‏ أَوْ يُزَادَ عَلَيْهِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ أَبُو دَاوُد:‏‏‏‏ خَفِيَ عَلَيَّ مِنْ حَدِيثِ مُسَدَّدٍ حَرْفُ وَأَنْ.
ابوداؤد کہتے ہیں: عثمان کی روایت میں یہ بھی ہے کہ اس میں کوئی زیادتی کرنے سے( بھی منع فرماتے تھے )۔ سلیمان بن موسیٰ کی روایت میں ہے:یا اس پر کچھ لکھنے سے۔ مسدد نے اپنی روایت میں: «أو يزاد عليه» کا ذکر نہیں کیا ہے۔ ابوداؤد کہتے ہیں: مسدد کی روایت میں مجھے حرف «وأن» کا پتہ نہ لگا۔"
[سنن ابی داود،کتاب الجنائز،باب فی البناء علی القبر:۳۲۲۶،وسندہ صحیح]
🌼قبروں کوپختہ بنانا،ان پر عمارت(قبہ،گنبدوغیرہ)بنانا اور قبر پر(مجاور بن کر)بیٹھنا:
🌠حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ حَدَّثَنَا حَفْصُ بْنُ غِيَاثٍ عَنْ ابْنِ جُرَيْجٍ عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ عَنْ جَابِرٍ قَالَ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنْ يُجَصَّصَ الْقَبْرُ وَأَنْ يُقْعَدَ عَلَيْهِ وَأَنْ يُبْنَى عَلَيْهِ.
حفص بن غیاث نے ابن جریج سے ، انھوں نے ابو زبیر سے اور انھوں نے حضرت جابر رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت کی ، انھوں نے کہا : رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ( اس بات سے ) منع فرمایا کہ قبر پر چونا لگایا جائے اور اس پر بیٹھا جائے اور اس پر عمارت بنائی جائے ۔"
[صحیح المسلم،کتاب الجنائز،باب النھی عن تجصیص القبر....الخ:۲۲۴۵/۹۷۰]
حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ الْأَسْوَدِ أَبُو عَمْرٍو الْبَصْرِيُّ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ رَبِيعَةَ عَنْ ابْنِ جُرَيْجٍ عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ عَنْ جَابِرٍ قَالَ نَهَى النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنْ تُجَصَّصَ الْقُبُورُ وَأَنْ يُكْتَبَ عَلَيْهَا وَأَنْ يُبْنَى عَلَيْهَا وَأَنْ تُوطَأَ قَالَ أَبُو عِيسَى هَذَا حَدِيثٌ حَسَنٌ صَحِيحٌ قَدْ رُوِيَ مِنْ غَيْرِ وَجْهٍ عَنْ جَابِرٍ وَقَدْ رَخَّصَ بَعْضُ أَهْلِ الْعِلْمِ مِنْهُمْ الْحَسَنُ الْبَصْرِيُّ فِي تَطْيِينِ الْقُبُورِ و قَالَ الشَّافِعِيُّ لَا بَأْسَ أَنْ يُطَيَّنَ الْقَبْرُ۔
ترجمہ:جابر رضی اللّٰہ عنہ کہتے ہیں کہ نبی اکرمﷺ نے اس بات سے منع فرمایاہےکہ قبریں پختہ کی جائیں ۱ ؎ ،ان پر لکھا جائے۲؎ اور ان پر عمارت بنائی جائے ۳؎ اورانہیں رونداجائے ۴؎ ۔ امام ترمذی کہتے ہیں:۱- یہ حدیث حسن صحیح ہے،۲- یہ اوربھی طرق سے جابر سے مروی ہے،۳- بعض اہل علم نے قبروں پرمٹی ڈالنے کی اجازت دی ہے، انہیں میں سے حسن بصری بھی ہیں،۴- شافعی کہتے ہیں: قبروں پرمٹی ڈالنے میں کوئی حرج نہیں ہے۔
{جامع ترمذی,أَبْوَابُ الْجَنَائِزِ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ ﷺ,بَاب مَا جَاءَ فِي كَرَاهِيَةِ تَجْصِيصِ الْقُبُورِ وَالْكِتَابَةِ عَلَيْهَا:١٠٥٢،وھو صحیح}
تشریح:۱؎:اس ممانعت کی وجہ ایک تویہ ہے کہ اس میں فضول خرچی ہے کیونکہ اس سے مردے کوکوئی فائدہ نہیں ہوتا دوسرے اس میں مردوں کی ایسی تعظیم ہے جو انسان کو شرک تک پہنچادیتی ہے۔ ۲؎ : یہ نہی مطلقاً ہے اس میں میت کا نام اس کی تاریخ وفات اورتبرک کے لیے قرآن کی آیتیں اوراسماء حسنیٰ وغیرہ لکھنا سبھی داخل ہیں۔ ۳؎ : مثلاً قبّہ وغیرہ۔ ۴؎ : یہ ممانعت میت کی توقیروتکریم کی وجہ سے ہے اس سے میت کی تذلیل وتوہین ہوتی ہے اس لیے اس سے منع کیا گیا
🍁🍁قبرستان کی زیارت🍁🍁
🌼قبرستان کی زیارت کی اہمیت:
🌠حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عُبَيْدٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ يَزِيدَ بْنِ كَيْسَانَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي حَازِمٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ زُورُوا الْقُبُورَ فَإِنَّهَا تُذَكِّرُكُمُ الْآخِرَةَ.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: قبروں کی زیارت کیا کرو، اس لیے کہ یہ تم کو آخرت کی یاد دلاتی ہیں۔"
[سنن ابنِ ماجہ،کتاب الجنائز،باب ماجاء فی زیارۃ القبور:۱۵۶۹،وھوصحیح]
🌼عورتوں کا قبرستان جانا:
🌠 حَدَّثَنِي هَارُونُ بْنُ سَعِيدٍ الْأَيْلِيُّ حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ وَهْبٍ أَخْبَرَنَا ابْنُ جُرَيْجٍ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ كَثِيرِ بْنِ الْمُطَّلِبِ أَنَّهُ سَمِعَ مُحَمَّدَ بْنَ قَيْسٍ يَقُولُ سَمِعْتُ عَائِشَةَ تُحَدِّثُ فَقَالَتْ أَلَا أُحَدِّثُكُمْ عَنْ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَعَنِّي قُلْنَا بَلَى ..حَدَّثَنِي مَنْ سَمِعَ حَجَّاجًا الْأَعْوَرَ وَاللَّفْظُ لَهُ قَالَ حَدَّثَنَا حَجَّاجُ بْنُ مُحَمَّدٍ حَدَّثَنَا ابْنُ جُرَيْجٍ أَخْبَرَنِي عَبْدُ اللَّهِ رَجُلٌ مِنْ قُرَيْشٍ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ قَيْسِ بْنِ مَخْرَمَةَ بْنِ الْمُطَّلِبِ أَنَّهُ قَالَ يَوْمًا أَلَا أُحَدِّثُكُمْ عَنِّي وَعَنْ أُمِّي قَالَ فَظَنَنَّا أَنَّهُ يُرِيدُ أُمَّهُ الَّتِي وَلَدَتْهُ قَالَ قَالَتْ عَائِشَةُ أَلَا أُحَدِّثُكُمْ عَنِّي وَعَنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قُلْنَا بَلَى قَالَ قَالَتْ لَمَّا كَانَتْ لَيْلَتِي الَّتِي كَانَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِيهَا عِنْدِي انْقَلَبَ فَوَضَعَ رِدَاءَهُ وَخَلَعَ نَعْلَيْهِ فَوَضَعَهُمَا عِنْدَ رِجْلَيْهِ وَبَسَطَ طَرَفَ إِزَارِهِ عَلَى فِرَاشِهِ فَاضْطَجَعَ فَلَمْ يَلْبَثْ إِلَّا رَيْثَمَا ظَنَّ أَنْ قَدْ رَقَدْتُ فَأَخَذَ رِدَاءَهُ رُوَيْدًا وَانْتَعَلَ رُوَيْدًا وَفَتَحَ الْبَابَ فَخَرَجَ ثُمَّ أَجَافَهُ رُوَيْدًا فَجَعَلْتُ دِرْعِي فِي رَأْسِي وَاخْتَمَرْتُ وَتَقَنَّعْتُ إِزَارِي ثُمَّ انْطَلَقْتُ عَلَى إِثْرِهِ حَتَّى جَاءَ الْبَقِيعَ فَقَامَ فَأَطَالَ الْقِيَامَ ثُمَّ رَفَعَ يَدَيْهِ ثَلَاثَ مَرَّاتٍ ثُمَّ انْحَرَفَ فَانْحَرَفْتُ فَأَسْرَعَ فَأَسْرَعْتُ فَهَرْوَلَ فَهَرْوَلْتُ فَأَحْضَرَ فَأَحْضَرْتُ فَسَبَقْتُهُ فَدَخَلْتُ فَلَيْسَ إِلَّا أَنْ اضْطَجَعْتُ فَدَخَلَ فَقَالَ مَا لَكِ يَا عَائِشُ حَشْيَا رَابِيَةً قَالَتْ قُلْتُ لَا شَيْءَ قَالَ لَتُخْبِرِينِي أَوْ لَيُخْبِرَنِّي اللَّطِيفُ الْخَبِيرُ قَالَتْ قُلْتُ يَا رَسُولَ اللَّهِ بِأَبِي أَنْتَ وَأُمِّي فَأَخْبَرْتُهُ قَالَ فَأَنْتِ السَّوَادُ الَّذِي رَأَيْتُ أَمَامِي قُلْتُ نَعَمْ فَلَهَدَنِي فِي صَدْرِي لَهْدَةً أَوْجَعَتْنِي ثُمَّ قَالَ أَظَنَنْتِ أَنْ يَحِيفَ اللَّهُ عَلَيْكِ وَرَسُولُهُ قَالَتْ مَهْمَا يَكْتُمِ النَّاسُ يَعْلَمْهُ اللَّهُ نَعَمْ قَالَ فَإِنَّ جِبْرِيلَ أَتَانِي حِينَ رَأَيْتِ فَنَادَانِي فَأَخْفَاهُ مِنْكِ فَأَجَبْتُهُ فَأَخْفَيْتُهُ مِنْكِ وَلَمْ يَكُنْ يَدْخُلُ عَلَيْكِ وَقَدْ وَضَعْتِ ثِيَابَكِ وَظَنَنْتُ أَنْ قَدْ رَقَدْتِ فَكَرِهْتُ أَنْ أُوقِظَكِ وَخَشِيتُ أَنْ تَسْتَوْحِشِي فَقَالَ إِنَّ رَبَّكَ يَأْمُرُكَ أَنْ تَأْتِيَ أَهْلَ الْبَقِيعِ فَتَسْتَغْفِرَ لَهُمْ قَالَتْ قُلْتُ كَيْفَ أَقُولُ لَهُمْ يَا رَسُولَ اللَّهِ قَالَ قُولِي السَّلَامُ عَلَى أَهْلِ الدِّيَارِ مِنْ الْمُؤْمِنِينَ وَالْمُسْلِمِينَ وَيَرْحَمُ اللَّهُ الْمُسْتَقْدِمِينَ مِنَّا وَالْمُسْتَأْخِرِينَ وَإِنَّا إِنْ شَاءَ اللَّهُ بِكُمْ لَلَاحِقُونَ۔
عبداللہ بن وہب نے ہمیں حدیث سنائی اور کہا : ابن جریج نے عبداللہ بن کثیر بن مطلب سے روایت کی ، انھوں نے محمد بن قیس بن مخرمہ بن مطلب ( المطلبی ) کو کہتے ہوئے سنا کہ میں نے حضرت عائشہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا سے سنا ، وہ حدیث بیان کررہی تھیں ، انھوں نے کہا : کیا میں تمھیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اور اپنی طرف سے حدیث نہ سناؤں؟ہم نے کہا : کیوں نہیں ۔ ۔ ۔ اور حجاج بن محمد نے ہمیں حدیث سنائی ، کہا : ہمیں ابن جریج نے حدیث سنائی ، کہا : قریش کے ایک فرد عبداللہ نے محمد بن قیس بن مخرمہ بن مطلب سے روایت کی کہ ایک دن انھوں نے کہا؛کیا میں تمھیں اپنی اور اپنی ماں کی طرف سے حدیث نہ سناؤں؟کہا : ہم نے سمجھا کہ ان کی مراد اپنی اس ماں سے ہے جس نے انھیں جنم دیا ( لیکن انھوں نے ) کہا : حضرت عائشہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا نے فرمایا : کیا میں تمھیں اپنی طرف سے اور ر سول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی طرف سے حدیث نہ سناؤں؟ہم نے کہا : کیوں نہیں!کہا:(حضرت عائشہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا نے فرمایا: ایک دفعہ)جب میری ( باری کی )رات ہوئی جس میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم میرے ہاں تھے ، آپ ( مسجد سے ) لوٹے ، اپنی چادر ( سرہانے ) رکھی ، اپنے دونوں جوتے اتار کر اپنے دونوں پاؤں کے پاس رکھے اور اپنے تہبند کا ایک حصہ بستر پر بچھایا ، پھر لیٹ گئے ۔ آپ نے صرف اتنی دیر انتظار کیا کہ آپ نے خیال کیا میں سو گئی ہوں ، تو آپ نے آہستہ سے اپنی چادر اٹھائی ، آہستہ سے اپنے جوتے پہنے اور آہستہ سے دروازہ کھولا ، نکلے ، پھر آہستہ سے اس کو بند کردیا ۔ ( یہ دیکھ کر ) میں نے بھی اپنی قمیص سر سے گزاری ( جلدی سے پہنی ) اپنا دوپٹا اوڑھا اور اپنی آزار ( کمر پر ) باندھی ، پھر آپ کے پیچھے چل پڑی حتیٰ کہ آپ بقیع ( کے قبرستان میں )پہنچے اور کھڑے ہوگئے اور آپ لمبی دیر تک کھڑے رہے ، پھر آپ نے تین دفعہ ہاتھ اٹھائے ، پھر آپ پلٹے اور میں بھی واپس لوٹی ، آپ تیز ہوگئے تو میں بھی تیز ہوگئی ، آپ تیز تر ہوگئے تو میں بھی تیز تر ہوگئی ۔ آپ دوڑ کر چلے تو میں نے بھی دوڑنا شروع کردیا ۔ میں آپ سے آگے نکل آئی اور گھر میں داخل ہوگئی ۔ جونہی میں لیٹی آپ صلی اللہ علیہ وسلم بھی گھر میں داخل ہوگئے اور فرمایا:عائشہ! تمھیں کیا ہوا کانپ رہی ہو؟سانس چڑھی ہوئی ہے ۔میں نے کہا کوئی بات نہیں ۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :تم مجھے بتاؤ گی یا پھر وہ مجھے بتائے گا جو لطیف وخبیر ہے ( باریک بین ہے اور انتہائی باخبر ) ہے ۔میں نے کہا : اے اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم میرے ماں باپ آپ پر فدا ہوں!اور میں نے ( پوری بات ) آپ کو بتادی ۔ آپ نے فرمایا :تو وہ سیاہ ( ہیولا )جو میں نے اپنے آگے دیکھا تھا، تم تھیں؟میں نے کہا : ہاں ۔ آپ نے میرے سینے کو زور سے دھکیلا جس سے مجھے تکلیف ہوئی ۔ پھر آپ نے فرمایا : کیا تم نے یہ خیال کیا کہ اللہ تم پر زیادتی کرے گا اور اس کا رسول صلی اللہ علیہ وسلم ؟ ( حضرت عائشہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا نے ) کہا :لوگ( کسی بات کو ) کتنا ہی چھپا لیں اللہ اس کوجانتا ہے ، ہاں ۔ آپ نے فرمایا :جب تو نے ( مجھے جاتے ہوئے ) دیکھاتھا اس وقت جبریل علیہ السلام میرے پاس آئے تھے ۔ انھوں نے ( آکر ) مجھے آواز دی اور اپنی آواز کو تم سے مخفی رکھا ، میں نے ان کو جواب دیا تو میں نے بھی تم سے اس کو مخفی رکھا اور وہ تمہارے پاس اندر نہیں آسکتے تھے تم کپڑے اتار چکیں تھیں اور میں نے خیال کیا کہ تم سوچکی ہو تو میں نے تمھیں بیدار کرنا مناسب نہ سمجھا اور مجھے خدشہ محسوس ہواکہ تم ( اکیلی ) وحشت محسوس کروگی ۔ تو انھوں ( جبریل علیہ السلام ) نے کہا : آپ کا رب آپ کو حکم دیتاہے کہ آپ اہل بقیع کے پاس جائیں اور ان کے لئے بخشش کی دُعا کریں ۔( حضرت عائشہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا نے ) کہا : میں نے پوچھا : اے اللہ کےرسول صلی اللہ علیہ وسلم !میں ان کے حق میں ( دعا کے لئے ) کیسے کہوں؟آپ نے فرمایا :تم کہو ، مومنوں اور مسلمانوں میں سے ان ٹھکانوں میں رہنے والوں پر سلامتی ہو ، اللہ تعالیٰ ہم سے آگے جانے والوں اور بعد میں آنے والوں پر رحم کرے ، اور ہم ان شاء اللہ ضرور تمہارے ساتھ ملنے والے ہیں۔"
[صحیح المسلم،کتاب الجنائز:۲۲۵۶/۹۷۴]
🌠سیّدنا عبداللّٰہ بن ابی ملیکہ رضی اللّٰہ عنہ فرماتےہیں:سیّدہ عائشہ رضی اللّٰہ عنہاایک دن قبرستان سےآرہی تھیں،میں نےپوچھا:اے ام المومنین!آپ کہاں سےتشریف لارہی ہیں؟"فرمانےلگیں:اپنےبھائی عبدالرحمٰن بن ابو بکر(رضی اللّٰہ عنھما)کی قبرسے۔"میں نےکہا:کیا رسول اللّٰہ ﷺ نےاس سےمنع نہیں فرمایاتھا؟"فرمانےلگیں:ہاں،منع کیاتھا،پھراجازت دےدی تھی۔"
[مستدرک حاکم:۳۷۶/۱،حفاظت:۱۳۹۲،وھوصحیح
🌼لیکن عورتوں کا قبرستان میں کثرت سےجانا درست نہیں:
🌠حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ خَلَفٍ الْعَسْقَلَانِيُّ أَبُو نَصْرٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ طَالِبٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا أَبُو عَوَانَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عُمَرَ بْنِ أَبِي سَلَمَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِيهِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏لَعَنَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ زُوَّارَاتِ الْقُبُورِ .
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے قبروں کی بہت زیادہ زیارت کرنے والی عورتوں پر لعنت بھیجی ہے۔ "
[سنن ابنِ ماجہ:۱۵۷۶۔وسنن الترمِذی،کتاب الجنائز:۱۰۵۶،وسندہ حسن]
🌼دس محرم کو اور دیگر تہواروں پرعورتیں بن سنور کرقبرستان جاتی ہیں،یہ ٹھیک نہیں ہے۔کیونکہ اس میں نہ صرف قبرستان جانےکامقصد فوت ہوجاتاہے،بلکہ بےپردگی بھی ہوتی ہے۔
🍁🍁قبرستان میں کرنےکےکام🍁🍁
🌼قبرستان میں داخل ہوتےہوئےیہ دُعا پڑھیں:
🌠اَلسَّلَامُ عَلَیْکُمْ أَهْلِ الدِّيَارِ مِنَ الْمُؤْمِنِيْنَ وَالْمُسْلِمِيْنَ،وَاِنَّا اِنْ شَآءَ اللّٰہُ بِکُمْ لَلَاحِقُوْنَ، وَيَرْحَمُ اللّٰهُ الْمُسْتَقْدِمِيْنَ مِنَّا وَالْمُسْتَأْخِرِيْنَ ،أَسْأَلُ اللّٰهَ لَنَا وَلَكُمُ الْعَافِيَةَ۔"
[صحیح المسلم:۹۷۴،۹۷۵(۲۲۵۷،۲۲۵۶،۲۲۵۵)۔سنن ابنِ ماجہ:۱۵۴۷]
🌼قبر پر ہاتھ اُٹھا کر دُعا کرنا:
🌠سیّدہ عائشہ رضی اللّٰہ عنھا فرماتی ہیں:
جَاءَ الْبَقِيْعَ فَقَامَ فَأَطَالَ الْقِيَامَ ثُمَّ رَفَعَ يَدَيْهِ۔
رسول اللّٰہ ﷺ بقیع میں تشریف لائے،دیرتک کھڑےرہے،پھرہاتھ اُٹھا کردُعا کرنےلگے۔"
[صحیح المسلم،کتاب الجنائز،باب مایقال عنددخول المقابر.....الخ:۲۲۵۶/۹۷۴]
🌼بلندقبر کو زمین سےایک بالشت کےبرابر چھوڑ کر اوپر والی گرا دیں:
🌠حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَحْيَى وَأَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ وَزُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ قَالَ يَحْيَى أَخْبَرَنَا وَقَالَ الْآخَرَانِ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ عَنْ سُفْيَانَ عَنْ حَبِيبِ بْنِ أَبِي ثَابِتٍ عَنْ أَبِي وَائِلٍ عَنْ أَبِي الْهَيَّاجِ الْأَسَدِيِّ قَالَ قَالَ لِي عَلِيُّ بْنُ أَبِي طَالِبٍ أَلَا أَبْعَثُكَ عَلَى مَا بَعَثَنِي عَلَيْهِ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنْ لَا تَدَعَ تِمْثَالًا إِلَّا طَمَسْتَهُ وَلَا قَبْرًا مُشْرِفًا إِلَّا سَوَّيْتَهُ.
وکیع نے سفیان سے ، انھوں نے حبیب بن ابی ثابت سے ، انھوں نے ابو وائل سے اور انھوں نے ابو الہیاج اسدی سے روایت کی ، انھوں نے کہا : حضرت علی بن ابی طالب رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے مجھ سے کہا : کیا میں تمھیں اس ( مہم ) پر روانہ نہ کروں جس پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھے روانہ کیا تھا؟ ( وہ یہ ہے ) کہ تم کسی تصویر یا مجسمے کو نہ چھوڑنا مگر اسے مٹا دینا اور کسی بلند قبر کو نہ چھوڑنا مگر اسے ( زمین کے ) برابر کردینا۔"
[صحیح المسلم،کتاب الجنائز،باب الامر بتسویۃ القبر:۲۲۴۳/۹۶۹]
🌠سیّدنا جابربن عبداللّٰہ رضی اللّٰہ عنہما رسول اللّٰہ ﷺ کی قبر مبارک کےبارےمیں فرماتےہیں کہ آپ ﷺ کی قبر مبارک زمین سےتقریبًا ایک بالشت اونچی کی گئی تھی۔"
[وفاۃ النبی ﷺ،صفحہ:۱۴۷،بحوالہ السنن الکبریٰ للبیھقی:۴۰۷/۳،وصححہ ابنِ حبان:۶۶۳۵ وسندہ صحیح]
🍁🍁بدعت کا بیان🍁🍁
بدعت کا لغوی معنی نیا یا انوکھاپن ہےاور دین میں ہر اس قول،فعل یا عقیدےکوبدعت کہیں گےجوقرآن و حدیث سےثابت نہ ہو۔
پس جنازےکےمتعلق چند بدعات درج ذیل ہیں۔
ان سےبچنا ہرمسلمان پر فرض ہے۔
🌼میت کو غسل دیتےوقت اور جنازہ کیساتھ چلتےوقت بلندآواز سے ذکر کرنا۔جیسےکلمہ شہادت بلند آواز سےپڑھنا۔
🌼جنازہ کےساتھ سست روی سےچلنا۔جبکہ سنت کےمطابق تیزتیز چلنا ہے۔
🌼میت کوقبرمیں داخل کرتےوقت یادفن کرنےکےبعد قبرپر آذان و اقامت کہنا۔
🌼قبرکےپاس صدقہ کرنا۔
🌼اہلِ میت کےپاس لوگوں کاجمع ہونا۔
🌼اہلِ میت کا تین روز تک لوگوں کی کھانے سےضیافت کرنا۔
🌼اہلِ میت کی طرف سےپہلے،ساتویں،چالیسویں اور برسی سالانہ ختم،قل خوانی،فاتحہ خوانی اور چہلم کرنااور لوگوں کی کھانے سےضیافت کرنا۔
🌼قرآنِ کریم کی تلاوت اور دیگر عبادات کےلیےکوئی مال وغیرہ وقف کرنااور اس کا ثواب میت کوروح کو پہنچانا۔
🌼نمازی کی طرح ہاتھ باندھ کر قبر کےسامنے کھڑا ہونا۔
🌼قبر کو بوسہ دینا۔
🌼مُردوں کیلیےیا ان کی روحوں کےلیےفاتحہ خوانی کرنا۔
🌼انبیاءکرام علیہم السّلام کو ذائرین کےواسطےسےسلام پہنچانا۔
🌼قرآن مجید(وصحف)کو قبرستان لےجانااور میت(قبر)پر پڑھنا۔
🌼قبرکےپاس ذکراور قراءت کرنا۔
🌼نبی ﷺ کی قبرمبارک کی زیارت کیلیےثواب کی نیت سےسفر کرنا۔
🌼دعاء و عبادت میں مردوں کا وسیلہ پکڑنا۔
🌼قبر پر میت کا نام اور وفات کی تاریخ وغیرہ لکھنا۔
🌼میت پر ایسی چادر ڈالنا جس پہ آیات لکھی ہوئی ہوں۔
🌼آپ ﷺ کی قبرمبارک کو چھونا،قبرمبارک کو بوسہ دینا اور اس کا طواف کرنا۔"
🍀{تفصیل کیلیےدیکھیں:جنازہ کےاحکام،تالیف:فضیلۃ الشیخ عبداللّٰہ بن جار اللّٰہ بن ابراہیم الجاراللّٰہ رحمۃ اللّٰہ علیہ،صفحات:۶۶،۶۷،۶۸۔واحکام الجنائز للالبانی رحمۃ اللّٰہ علیہ}🍀
🌼تعزیت کےوقت کنکریوں یا کھجور کی گٹک پر ذکر کرنا۔
🌼دانےوالی تسبیح پہ ذکرکرنا دُعا پڑھنا۔
🌼قبر پرچادر چڑھانا۔
🌼قبرپر عمارت بنانا۔
🌼قبر کو پختہ(پکا)کرنا۔
🌼قبر پہ خوشبو لگانا۔
🌼قبرپر زیادہ دیر(مجاور بن کر)بیٹھنا۔
🌼قبر پہ نمازِ جنازہ کےعلاوہ نماز پڑھنا۔
🌼قبر پہ عرس،میلہ لگانا۔
🌼میت کے گھر کھانا کھانا بری بدعت ہے۔
{فتح القدیر(ابنِ ہمام الحنفی:۴۷۳/۱)}
🌼اہلِ میت کےگھر میں ضیافت کا کھانا مکروہ ہے،اس لیے کہ ضیافت خوشی میں ہوتی ہےغمی میں نہیں۔یہ انتہائی بُری بدعت ہے۔"
{شرح النقایہ(ملاعلی قاری الحنفی:۱۴۰/۱)}
🌼نمازِ جنازہ کےفوراً بعد دُعا کرنا۔
{تسہیل الوصول:۳۵۹،نعمانی کتب خانہ}
🌼امام ابوحنیفہ سےروایت کی گئی ہےکہ قبر نہ تو پختہ بنائی جائے۔اور نہ مٹی سےلیپی جائے۔اور قبر پر نہ تو کوئی عمارت کھڑی کی جائے اور نہ خیمہ۔"
{فتاویٰ قاضی خان:۹۳/۱}
🌼قریب الموت کا بستر قبلہ رُخ کرنا۔
🌼قریب الموت شخص کےپاس سورۃ یس کی تلاوت کرنا۔
🌼کفن کو آب زم زم سےدھونا۔
🌼اظہارِ افسوس کیلیےسیاہ لباس پہننا۔
🌼قبر پر اگربتیاں،موم بتیاں اور چراغ وغیرہ کااہتمام کرنا۔
🌼دفن کرنےکےبعد ستر قدم پیچھے ہٹ کردُعا کرنا۔
🌼کسی مخصوص جگہ پھوڑی پر بیٹھنا کہ لوگ تعزیت کیلیےوہاں آئیں۔
وما علینا الا البلاغ
 
Top