ذیشان خان

Administrator
جن کے رتبے میں سوا ہے ان کو سوا مشکل ہے.

ابو احمد کلیم الدین یوسف
جامعہ اسلامیہ مدینہ منورہ

امام قرطبی رحمہ اللہ فرماتے ہیں: بعض اہل تحقیق نے کہا ہے کہ جب یوسف علیہ الصلاۃ والسلام پر بہتان لگا تو اللہ رب العالمین نے ایک دودھ پیتے بچے سے ان کی براءت ثابت کی، اور جب سیدہ مریم علیہا الصلاۃ والسلام پر الزام لگایا گیا تو اللہ رب العزت نے ان کے دودھ پیتے بیٹے عیسی علیہ الصلاۃ والسلام کی زبانی براءت کا اعلان کروایا، لیکن........
جب ام المؤمنين طاہرہ، عفیفہ، محصنہ، فقیہہ، مُحدِّثۃ، دنیا کی افضل ترین خاتون، نبی کی چہیتی، رب کی پسندیدہ عائشہ صدیقہ بنت الصدیق رضی اللہ عنہما پر بہتان تراشی کی گئی تو رب نے کسی دودھ پیتے بچے کو ان کی براءت کیلئے نہیں چنا، اور نہ ہی کسی نبی کو چنا، حالانکہ کہ اس وقت دودھ پیتے بچے بھی موجود تھے، اور تمام نبیوں کے سردار تاجدار مدینہ فاتح عالم خاتم النبیین بھی موجود تھے، لیکن عرش والے رب نے خود مؤمنوں کی ماں اور سردار دو جہاں کی زوجہ طاہرہ کی براءت کا اعلان ساتویں آسمان سے کیا، اور جبریل علیہ الصلاۃ والسلام کو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس سورہ نور کی آیات کی شکل میں سوغات بھیجا، اور پوری دنیا والوں کو یہ پیغام دیا کہ پچھلے لوگوں کی براءت کے قصے سنے جاتے تھے، لیکن اہل ایمان کی ماں اور سید المرسلین کی پاکیزہ بیوی کی براءت کے قصے سنے بھی جائیں گے، پڑھے بھی جائیں گے، اس کی تلاوت بھی کی جائے گی، اور ہر حرف باعث اکرو ثواب اور رب کی رضا کے حصول کا ذریعہ ہوگا.
تفسیر القرطبی (12/ 212).
در اصل ام المؤمنين عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا کا دفاع کا سید الاولین والآخرين محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی عزت کا دفاع تھا، اس لئے رب ذوالجلال نے ایسا نادر نمونہ پیش کیا کہ اقوام سابقہ اور پچھلے زمانوں میں اس کی مثال ہی نہیں ملتی.
اور یہ بات بھی یاد رہے کہ اگر کوئی کسی دوسرے صحابی رسول کو سب وشتم کا نشانہ بناتا ہے تو اس کے کافر ہونے میں علماء کرام نے اختلاف کیا ہے، لیکن اگر کوئی ام المؤمنین عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا کو نشانہ بناتا ہے تو اس کے کافر ہونے پر اتفاق ہے.

رضی اللہ عنہا وارضاھا.

ہماری اور ہمارے اہل خانہ کی رگوں میں دوڑتے خون کا ہر قطرہ اماں عائشہ صدیقہ اور دیگر صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اجمعین کی عظمت، اور ان کی عزت کے دفاع پر قربان، اللہ رب العالمین ہمیں صحابہ کرام سے سچی محبت کرنے والا، اور ہر قدم پر ان کا دفاع کرنے والا بنائے.
 
Top