ذیشان خان

Administrator
بسم الله الرحمن الرحيم وبه نستعين
سب سے بہترین صدقہ
ازقلم: عبیداللہ بن شفیق الرحمٰن اعظمیؔ محمدیؔ مہسلہ​

اپنی بساط اور استطاعت کے مطابق صدقہ وخیرات کرتے رہنا چاہیے، کیونکہ صدقات وخیرات کے بڑے فوائد ہیں، جیسا کہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا: "اَلَّذِينَ يُنْفِقُونَ أَمْوَالَهُمْ بِاللَّيْلِ وَالنَّهَارِ سِرًّا وَعَلَانِيَةً فَلَهُمْ أَجْرُهُمْ عِنْدَ رَبِّهِمْ وَلَا خَوْفٌ عَلَيْهِمْ وَلَا هُمْ يَحْزَنُونَ" (البقرة:274) جولوگ اپنے مالوں کو دن ورات چپکے اور کھلے طور پر اللہ کے راستے میں خرچ کرتے ہیں ایسے لوگوں پر کوئی خوف ودہشت نہیں ہے اورنہ ہی وہ لوگ غم گین ہوں گے-
صدقہ کرنے سے گناہ معاف ہوتے ہیں، جیسا کہ پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: "وَالصَّدَقَةُ تُطْفِىءُ الْخَطِيْئَةَ كَمَا تُطْفِىءُ الْمَاءُ النَّارَ" (سنن ترمذی:613/صحيح) اور صدقہ گناہوں کو ایسے ہی مٹاتا ہے جیسے پانی آگ کو بجھا دیتا ہے-
صدقہ کرنے سے رب کا غضب ٹھنڈا ہوتا ہے، جیسا کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ و سلم نے فرمایا: "صَدَقَةُ السِّرِّ تُطْفِئُ غَضَبَ الرَّبِّ" (سلسلة الأحاديث الصحيحة:1908/صحيح) پوشیدہ صدقہ تو رب العالمين کے غصے کو ٹھنڈا کر دیتا ہے-
صدقہ کرنے سے مال کم نہیں ہوتا ہے بلکہ مال میں برکت ہوتی ہے، پیارے نبی صلی اللہ علیہ و سلم نے فرمایا:‏ "مَا نَقَصَتْ صَدَقَةٌ مِنْ مَالٍ" (صحیح مسلم، كتاب البر والصلة، باب استحباب العفو والتواضع، حديث رقم:4817) صدقہ سے مال کم نہیں ہوتا-
آیت وحدیث میں صدقہ وخیرات کی ترغیب دی گئی ہے لہٰذا صدقہ کرنے میں بخیلی نہیں کرنا چاہیے، آئیے آج دیکھتے ہیں کہ کونسا صدقہ سب سے بہترین ہے-
قارئین کرام! بیوی اور بال بچوں پر خرچ کرنا یہ سب سے افضل صدقہ ہے، جیسا کہ حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: "دِينَارٌ أَنْفَقْتَهُ فِي سَبِيلِ اللَّهِ، وَدِينَارٌ أَنْفَقْتَهُ فِي رَقَبَةٍ، وَدِينَارٌ تَصَدَّقْتَ بِهِ عَلَى مِسْكِينٍ، وَدِينَارٌ أَنْفَقْتَهُ عَلَى أَهْلِكَ، أَعْظَمُهَا أَجْرًا الَّذِي أَنْفَقْتَهُ عَلَى أَهْلِكَ" (صحيح مسلم:2358) ایک دینار جسے تم نے اللہ کے راستے میں خرچ کیا، ایک دینار جسے تم نے گردن آزاد کرنے میں خرچ کیا، ایک دینار جسے تم نے کسی مسکین پر خرچ کیا، اور ایک وہ دینار جسے تم نے اپنے اہل وعیال پر خرچ کیا تو اجر و ثواب کے اعتبار سے سب سے بڑا وہ ہے جسے تم نے اپنے اہل وعیال پر خرچ کیا ہے-
پانی پلانا افضل صدقہ ہے، جیسا کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے سوال کیا گیا "أَيُّ الصَّدَقَةِ أَفْضَلُ؟ سب سے افضل صدقہ کونسا ہے؟ تو آپ نے فرمایا: "سَقْيُ الْمَاءِ" پانی پلانا (سنن ابن ماجہ:3674/حسن)
ایسا صدقہ جس کا فائدہ عام ہو تو مرنے کے بعد بھی ثواب ملتا ہے، جیسا کہ پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: "إِذَا مَاتَ الإِنْسَانُ انْقَطَعَ عَنْهُ عَمَلُهُ، إِلاَّ مِنْ ثَلاَثَةٍ إِلاَّ مِنْ صَدَقَةٍ جَارِيَةٍ، أَوْ عِلْمٍ يُنْتَفَعُ بِهِ، أَوْ وَلَدٍ صَالِحٍ يَدْعُو لَهُ" (صحيح مسلم:4310) جب انسان مر جاتا ہے تو اس کے عمل کا سلسلہ منقطع ہو جاتا ہے، مگر تین اعمال ایسے ہیں جن کا ثواب میت کو برابر ملتے رہتا ہے (1) صدقہ جاریہ (2) وہ علم جس سے لوگ فائدہ اٹھائیں (3) وہ صالح اولاد جو اپنے والدین کے حق میں دعا کرے-
اپنے رشتے داروں پر خرچ کرنا یہ سب سے افضل صدقہ ہے، نبی صلی اللہ علیہ و سلم نے فرمایا: "اَلصَّدَقَةُ عَلَى الْمِسْكِينِ صَدَقَةٌ، وَعَلَى ذِي الْقَرَابَةِ اثْنَتَانِ: صَدَقَةٌ، وَصِلَةٌ" (سنن ابن ماجہ:1494/صحيح) مسکین کو صدقہ دینا صدقہ ہے، اور رشتہ دار کو صدقہ دینا دو نیکیاں ہیں، ایک صدقہ اور دوسری صلہ رحمی-
جب یہ آیت نازل ہوئی، "لَنْ تَنَالُوا البِرَّ حَتَّى تُنْفِقُوا مِمَّا تُحِبُّونَ" (آل عمران:92) تم نیکی نہیں پا سکتے ہو جب تک کہ تم اپنی پسندیدہ چیز خرچ نہ کرو- اس آیت کے نزول کے بعد ابوطلحہ انصاری رضی اللہ عنہ اپنے پسندیدہ اور قیمتی باغ کو اللہ کی راہ میں خرچ کر دیا تو اللہ کے نبی نے انہیں حکم دیا کہ اپنے قریبی رشتہ دار میں خرچ کر دو تو ابوطلحہ انصاری رضی اللہ عنہ نے اپنے قریبی رشتہ داروں پر خرچ کر دیا (صحيح بخاری:2758)
قرض دینا بھی ایک قسم کا بہترین صدقہ ہے، جیسا کہ پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: "مَنْ أَنْظَرَ مُعْسِرًا، كَانَ لَهُ كُلَّ يَوْمٍ صَدَقَةٌ" (مسند احمد:22367) جو کسی تنگ دست کو (قرض کی ادائیگی میں) مہلت دے تو اسے ہر روز اتنا مال (جتنا قرض دیا ہے) صدقے کا ثواب ملتا ہے-
دعا ہے کہ اللہ تعالیٰ ہم سبھوں کو بکثرت صدقات وخیرات کرنے کی توفیق عطا فرمائے آمین-
══════════ ❁✿❁ ══════════
 
Top