اسلام کی حقیقت (توحید کی حقیقت)

بسم اللہ الرحمن الرحیم

دین اسلام کی بنیاد کیا ہے ؟

امام محمد بن عبدالوہاب رحمہ اﷲ اسلام کی تعریف ان الفاظ میں کرتے ہیں:

دین کی بنیاد دو چیزیں ہے :

۱۔عبادت: اس پر دوسروں کو بھی راغب کرنا اسی کی بنا پر تعلقات رکھنا اور اس کو ترک کرنے والے کو کافر سمجھنا۔

۲۔اﷲ کی عبادت میں شرک سے ڈرانا اور اس میں سختی سے کام لینا شرک کی وجہ سے ہی دشمنی کرنا۔ شرک کرنے والے کو کافر سمجھنا۔

(الدررالسنیۃ: ۲/۲۲)

شیخ عبدالرحمن بن حسن رحمہ اﷲ کہتے ہیں:

اسلام کی بنیاد یہ ہے کہ انسان اپنے دل اور اعضاء سے اﷲ کا اطاعت گذار بن جائے اس کی توحید کا اقرار کرے اسے ربوبیت والوہیت دونوں میں یکتا و اکیلا مانے اپنے رب کی مرضی کو اپنی تمام خواہشات پر مقدم رکھے۔

(مجموعۃ الرسائل والمسائل النجدیہ: ۴/۴۲۰)

شیخ محمد بن عبدالوہاب رحمہ اﷲ فرماتے ہیں :

یاد رکھو کہ اﷲ کا دین یہ ہے کہ دل سے اعتقاد اور محبت ونفرت کا زبان سے اقرار اور کفر کے ترک اور اعضاء سے عمل کیا جائے۔ کفر کا سبب بننے والے عمل ترک کر دئیے جائیں اگر کسی نے ان میں سے ایک بھی کام کر دیا تو وہ کافر ومرتد کہلائے گا۔

(الدررالسنیۃ: ۱۰/۸۷)
 
Top