ہم نے خود اپنے نشیمن پھونکے

🖊 صفی الرحمن ابن مسلم فیضی بندوی

کرناٹک ہائی کورٹ فیصلہ کا سب سے خطرناک پہلو یہ ہے کہ "پردہ اسلام میں لازمی نہیں ہے"
ہائی کورٹ کے اس جملے پر غور کیا جائے اور مسلم عورتوں کے حالات پر غور کیا جائے، تو معلوم ہوگا کہ اس کے مجرم ہم خود ہیں۔
پردے کو ہم نے اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کا حکم مان کر استعمال نہیں کیا۔
آج ماڈرن دور کے دلدادہ مسلمانوں نے اپنی بیویوں، ماؤں، بہنوں اور بیٹیوں کی تربیت ہی اس طرح سے کیا، گویا پردہ پرانے اور پچھلے دور کے لوگوں کے لئے تھا، بعض مسلم، دہریت زدہ، جاہل اور فاسقہ عورتوں نے ٹی وی ڈیبیٹ میں چلا چلا کر کے کہا کہ قرآن میں کہاں پردے کا حکم ہے؟
اور ان کے مقابل لوگوں نے دائیں بائیں کر کے صحیح جواب نہیں دیا اور یہ باور کرایا گیا کہ پردے کا اسلام سے تعلق نہیں بلکہ یہ مسلمانوں کا کلچر ہے۔
آج ہم اس کا نتیجہ دیکھ رہے ہیں، اور یہ تو شروعات ہے، یہ فرقہ پرست حکومت مسلمانوں کی مذھبی کمزوری پر وار کر کے اسلام کی اصل پہچان کو ختم کرنا چاہتی ہے، اور اس کے مجرم خود ہم میں سے ہی کچھ نادان، جاھل، شکوک و شبہات اور شہوات میں ملوث مسلمان ہیں۔
اگر ہم نے صحیح معنوں میں اسلامی تعلیمات کو تیزی کے ساتھ نہیں اپنایا، تو ہماری شناخت کو مٹا دیا جائے گا، اور ہندوستان میں اندلس جیسے حالات پیدا کرکے، اسلام کے نام لیوا لوگوں پر ظلم و ستم کرکے ختم کر دیا جائے گا، یا اس میں دبے کچلے، کمزور مسلمانوں کو مجبور کر دیا جائے گا، کہ وہ اسلام سے عاری ذلت و مسکنت کی زندگی گزارنے پر مجبور ہوجائیں گے۔
اس لئے ہمیں جذباتیت سے اوپر اٹھ کر، بہترین لائحہء عمل تیار کرکے، یکجہتی اور اتحاد کے ساتھ سر جوڑ کر بیٹھنا ہوگا، اور ملی مسائل کو، ایک سلیقے سے، ذمہ داران کے سامنے حکومتوں کے سامنے، کورٹوں میں رکھنا ہوگا، ہر مسئلہ میں احتجاج اور ہو ھلا مچا کر اسے بدترین شکل نہ دیاجائے۔
سنجیدگی، دانشمندی اور اتحاد سے ایک مضبوط طاقت کا مظاہرہ کرکے، اپنے وجود، اپنے مذہبی وجود، اپنے سیاسی، سماجی، انسانی اور ہندوستانی وجود کو منوانے کی پوری کوشش کی جائے۔
کیوں کہ اب ہم آخری پڑاؤ پر ہیں۔
اس کے بعد ہماری تباہیوں کے دن ہم پر مسلط کر دیئے جائیں گے، اور شاید اس وقت ہم چاہنے کے بعد بھی کچھ نہ کر سکیں گے، آج ہم اس پوزیشن میں ہیں کہ کچھ سیکولر ہندو بھی ہمارے ساتھ کھڑا ہو جائے گا، کل ہو سکتا ہے یہ سیکولر ہندو بھی ہم سے جان چھڑانے میں ہی بھلائی سمجھنے لگے۔

اللہ تعالی ہمیں صحیح سمجھ دے، ہمارا بہترین محافظ و نگہبان ہو۔ آمین
 
Top