رمضان المبارک کے سائے میں

🖊: صفی الرحمن ابن مسلم بندوی فیضی

رمضان المبارک کے سائے میں
سب پہلے مقصد صیام یعنی تقوی وخوف الہی کو پانے کی خوب جد جہد کریں۔

تہذیب نفس کو خوب سے خوب تر بنانے اور سنوانے کی کوشش کریں ۔

رب کو خوش کرنے کا سلیقہ سیکھ لیں۔
قیام اللیل سے لطف اندوزی اور اس کی ادائیگی کیلئے اپنے آپ کو پورے سال کیلئے تیار کرلیں۔

تلاوت قرآن کا وہ مزہ جس کی مثال نبی صلی الله علیہ وسلم نے اُتْرُجّة سے
دی ہے جو مالٹا کی طرح (عرب کا ایک) لذیذ پھل ہے، جس کی خوشبو بھی اچھی اور مزہ بھی خوب اور پاکیزہ ہوتا ہے، اس طرح دلوں کی جلوہ گا، روح کی تسکین اور زندگی کو پاکیزہ بنائیں

دعا و توبہ و استغفار سے رب کی رضا اور اپنی حاجات کی بر آوری کا ایک نسخہء کیمیا سدا اپنے پاس رکھیں۔

غریبوں، مسکینوں کی بھوک و پیاس کا تجربہ ہوجائے اور ان سے ہمدردی اور پیار کو بڑھا کر ان کی غمخواری اپنے اندر پیدا کرلیں۔

اور یہ سب اسپریٹ رب سے ملاقات اور اس کے ہاتھوں انعام حاصل کرنے کے شوق سے بیدار ہو۔

باب الریان سے نام پکارے جانے کے جذبہ سے ہو ۔

صیام و قرآن رب سے آپ کیلئے شفارش کریں گے اس حوصلہ سے ہو ۔

قیام و صیام سے پچھلے ایک سال کے گناہ کی معافی کی تڑپ کیساتھ ہو۔

اس صوم کا بدلہ صرف جنت ہے اس تمنا سے ہو۔

یا اللہ ہمیں کامیاب لوگوں میں سے بنادے۔ آمین ۔
 
Top