ذیشان خان

Administrator
دعوت فکر و عمل

عتیق الرحمن ریاضی کلیہ سمیہ بلکڈیہوا نیپال

سر تاج رسل کے پیٹ پر مٹی اور غبار!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزوہ احزاب کیلئے جب خندق کھودنے کا وقت آیا تو رحمة اللعالمین خاتم النبیین حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم گھر میں بیٹھے نہ رہے ، یا صرف کھدائی کی نگرانی میں مصروف نہ رہے ، بلکہ آپ کا جذبہ اخلاص دیکھنے کے لئے صحیح بخاری کی حدیث ملاحظہ فرمائیں ۔۔۔۔۔۔
حضرت براء بن عازب رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم کو خندق والے دن دیکھا کہ آپ مٹی ڈھو رہے تھے ، آپ صلی اللہ وسلم کی حالت یہ تھی کہ مٹی نے آپ کے گورے گورے پیٹ مبارک کو چھپا رکھا تھا ، یعنی مٹی کا پرت جمنے سے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے پیٹ کی سفیدی نظر نہیں آ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
عَنِ الْبَرَاءِ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ، قَالَ : رَأَيْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَوْمَ الْأَحْزَابِ يَنْقُلُ التُّرَابَ، وَقَدْ وَارَى التُّرَابُ بَيَاضَ بَطْنِهِ (صحیح بخاری ٢٨٣٧)

قارئین محترم!
اخلاص والوں کی پہلی نشانی یہی ہے کہ وہ رب کی رضا کے لیے بظاہر کم تر اور محنت والے کام کرنے میں بھی کوئی عار محسوس نہیں کرتے۔۔۔۔۔۔!

توجہ فرمائیں!
آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی شان و شوکت و عظمت کا مقام یہ ہے کہ آپ کے سر پر نبوت و رسالت کا تاج ہے اور اخلاق کا عالم یہ ہے کہ رضائے الہی کیلئے پیٹ پر مٹی اور گرد و غبار ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔!!!

مسلمانو! ہمارے قائدین جب تک اس حد تک مخلص نہیں ہوتے ، ہماری اصلاح نہیں ہو سکتی!
ہماری شان و شوکت واپس نہیں آ سکتی!
اور نہ ہی کسی انقلاب کی امید کی جا سکتی!

اللہ تعالی ہم سبھی لوگوں اور ہمارے سیاسی و مذہبی لیڈروں و رہنماؤں کو مفادات اور عیش و عشرت کی دلدل سے نکل کر خالصۃ لوجہ اللہ کام کرنے کی توفیق عطا فرمائے ، آمین
 

ذیشان خان

Administrator
دعوت فکر و عمل

وہ بڑا ہی نیک اور اچھا تھا!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عتیق الرحمن ریاضی، کلیہ سمیہ، بلکڈیہوا، نیپال
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا ہم نے کبھی غور کیا کہ ہمارا اصل اثاثہ کیا ہے ؟
کیا مرنے کے بعد بھی ہم زندہ رہنا چاہتے ہیں؟
کیا ہم چاہتے ہیں کہ آنے والی نسلیں ہمارے علم و عمل سے فائدہ اٹھائیں؟
محبت و احترام سے ہمیں یاد کیا جائے ؟
کیا ہم چاہتے ہیں کہ ہمیں رب کی رضا حاصل ہوجائے

یہ سوالات اگر ہر وقت سامنے رکھے جائیں تو یقینا ہمارے اعمال اچھے اور اچھے ہی ہوں گے! ان شاءاللہ

ہم فوری نتائج کے قائل نہیں رہیں گے ، بلکہ آنے والے کل کو دیکھیں گے ۔۔۔۔۔۔
سبزیاں جلد اگتی ہیں اور ختم بھی جلد ہو جاتی ہیں ، درخت جلدی سے بڑے نہیں ہوتے! لیکن وہ تادیر قائم رہتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔
کیا کوئی آلو گوبھی ٹماٹر کے پودوں کا سایہ بھی لینا چاہتا ہے ؛ ہر کوئی گھنی چھاؤں والے پیڑ کی تلاش میں ہوتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔

ہمیں چاہئے کہ اپنے کام کے ساتھ ساتھ معاشرتی ذمہ داریوں کو بھی سامنے رکھیں ، قلیل مدتی فائدے والے کام کے بجائے طویل مدتی والے فوائد کیلئے درست کام ہی کریں ، بھٹکنے سے بہتر ہے کہ حق اور سیدھے راستے پر ڈٹ جائیں ۔۔۔۔۔۔۔
عظیم لوگ زندگی میں فعال اور متحرک رہتے ہیں اور ان کی محنت اور کوشش دوسروں کے لئے باعث تحریک ہوتی ہے ۔۔۔۔۔۔
کسی انسان کو اس بات پر عزت و محبت نہیں ملی کیا اس نے کیا کچھ حاصل کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟
بلکہ محبتیں اور دعائیں اس بات پر ملتی ہیں کہ اس نے جوکچھ دوسروں کو دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔
زندگی یہ نہیں کی ہم کتنے خوش ہیں!
زندگی یہ ہے کہ ہم سے دوسرے اور ہمارا رب کتنا خوش ہے ۔۔۔۔۔۔!
عظیم انسان بھی مرتے ہیں لیکن مرنے کے بعد بھی لوگوں کے دل و زبان پر ہوتے ہیں کہ "وہ بڑا ہی نیک اور اچھا تھا"
سلف صالحین اپنے اچھے کارناموں اور قوم وملت کی خدمات سے ہی آج بھی لوگوں کے خوابوں ،خیالوں اور دعاؤں میں پائے جاتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔

امام غزالی کہتے ہیں کہ سارے لوگ مردہ ہیں ، زندہ وہی ہیں جو علم والے ہیں اور سارے علم والے نقصان میں ہیں ، فائدے میں وہی ہیں جو عمل والے ہیں ۔۔۔
سارے عمل والے خسارے میں ہیں ، خسارے سے محفوظ اور کامیاب وہی ہیں جو اخلاص والے ہیں ۔۔۔۔۔

قابل مبارک باد ہیں وہ لوگ جو علم کی نشر و اشاعت کا ذریعہ بن رہے ہیں ۔۔۔۔۔
قابل مبارک باد ہیں وہ لوگ جو صدقہ جاریہ والے پودے اگارہے ہیں ۔۔۔۔۔۔
قابل مبارک باد ہیں وہ لوگ جو قوم وملت کی خدمت میں صدق دل سے پیش پیش رہتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔
قابل مبارک باد ہیں وہ لوگ جن کے بچے نیک اور صالح ہیں ۔۔۔۔۔۔۔
یا اللہ! ہمیں اور ہماری اولاد کو صالح بنائے، آمین

" ربنا ھب لنا من ازواجنا و ذریاتنا قرة اعین و اجعلنا للمتقین اماما"
 

ذیشان خان

Administrator
دعوت فکر و عمل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ عتیق الرحمن ریاضی

نفس کی بندگی ۔۔۔۔۔۔
باس اور عہدے داروں کی بندگی ۔۔۔۔
مال و دولت اور مالداروں کی بندگی ۔۔۔۔۔
اور ان بتوں کی بندگی کے ساتھ اسلام کا دعوی بھی!
ہم نے پتھر کے بتوں کو یقینا توڑ دیا۔۔۔۔۔۔۔
اینٹ اور چونے سے بنے ہوئے بت خانے بھی توڑ دیئے۔
مگر سینوں میں جو بت موجود ہے اس بت کی طرف توجہ ہی نہیں۔۔۔۔۔!!!
پھر ہم یہ کیسے امید کر سکتے ہیں کہ ہم پر ان رحمتوں کی بارش ہوگی جن کا سچے مسلمانوں سے وعدہ کیا گیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔!

ہر چیز کیلئے وقت ہمیں مل جاتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔
دوستوں سے گفتگو اور تفریح کا موقع مل جاتا ہے۔
دوسروں پر تجزیہ اور تبصرہ کا موقع مل جاتا ہے۔
پر یہ کتنی بڑی محرومی ہے کہ ۔۔۔۔۔۔۔۔
اپنے ساتھ بیٹھنے کا ۔۔۔۔۔۔۔۔!
اپنے اندر جھانکنے کا ۔۔۔۔۔۔۔!
اپنی فلم دیکھنے کا۔۔۔۔۔۔۔۔!
وقت ہمیں نہیں ملتا۔۔۔۔۔۔!

یاد رکھیں! بنیادوں میں جو پتھر رکھے جاتے ہیں، وہ سب کے پیروں تلے آتے ہیں ، مکان تعمیر ہونے کے بعد پھر وہ کسی کو دکھائی نہیں دیتے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!!
میرے بھائی! دین کا کام کرنے والے حقیقت میں سب ایک دوسرے کے مددگار ہیں ، رقابت کا جذبہ اگر پیدا ہو سکتا ہے تو اسی وقت جب کہ ہم اللہ اور قوم کے نام پر دوکانداری کر رہے ہوں ۔۔۔۔۔
اس صورت میں تو بیشک ہر دوکاندار یہی چاہے گا کہ میرے سوا اس بازار میں کوئی اور دوکان نظر نہ آئے۔

نیک ضرور بنیں ؛ پر اتنے بھی نہیں کہ ہر کوئی گنہگار ہی نظر آنے لگے ۔۔۔۔۔۔!
 

ذیشان خان

Administrator
دعوت فکر و عمل

✍ عتیق الرحمن ریاضی کلیہ سمیہ بلکڈیہوا نیپال
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

👈 کھو دینے کا خوف اور پالینے کی حرص دو ایسی بیڑیاں ہیں جو انسان کی حق گوئی ، سچائی اور اصول پرستی کو جکڑ لیتی ہیں ، اگر آزاد انسان کی طرح جینا چاہتے ہو تو سود و زیاں سے بے نیاز ہوکر اللہ تعالیٰ پر مکمل توکل و بھروسہ کرو ۔۔۔۔۔
"ومن یتوکل علی اللہ فھو حسبہ"
ویسے تو رنگین دنیا میں یہ مشکل ضرور ہے ؛ لیکن وہ دن دور نہیں جب سود و زیاں تو کیا۔۔۔۔۔۔؟
آپ ہر چیز سے بے نیاز ہوجاؤ گے اور سب آپ سے بے نیاز ہوجائیں گے۔۔۔۔۔۔!
ایسے کتنے بوڑھوں یا بیماروں اور لوگوں کو آپ نے اپنی آنکھوں سے دیکھا ہوگا ۔۔۔۔۔۔۔!

اس لیے ہمیشہ حقیقت پر نظر رکھو اور حق پر جمے رہو ، اگر حقیقت دیکھ کر خود کو سنوارنے کے بجائے آپ نے آئینہ ہی توڑ ڈالا تو آپ کی بدصورتی بکھری ہوئی درجنوں کرچیوں میں منعکس ہونے لگے گی، پھر نہ کہنا کہ بدنام ہو گئے۔۔۔۔۔۔
یعنی ۔۔۔۔۔۔
جب کوئی خیرخواہ آپ کی غلطی کی نشاندہی کرے تو اپنی اصلاح کی بجائے اسے خود سے دُور کردو گے تو پھر غلطی نہیں غلطیاں ہوں گی ۔۔۔۔۔۔

آپ نے دیکھا ہوگا کہ پرندے بلندی پرواز کے ساتھ ساتھ نیچے گہری پستیوں سے اپنی نظریں نہیں ہٹاتے!
پر حیرت ہے ان انسانوں پر جو بلندیوں تک تو پہنچ جاتے ہیں لیکن نیچے اس جگہ نہیں دیکھ پاتے جہاں ایک دن ان کی لاش کو گرنا ہے۔۔۔۔۔۔۔!

عموما ہر شخص سوچتا ہے کہ ابھی کہاں مرنا!
بھائی میرے بھائی! اگر یہ سوچ کسی وقت غلط ثابت ہوگیا تو پھر کیا ہوگا۔۔۔۔۔۔؟
لہٰذا ہمیشہ یہ سوچ رکھو کہ مجھےجلد مرجانا ہے۔۔۔
جس دن یہ سوچ غالب ہوگا ، اس دن دنیا کی رنگینیوں کو بھول جاؤ گے اور حق پرست و اصول پرست بن جاوگے۔۔۔۔۔۔

اللہ ہم سب کا حامی و ناصر ہو، آمین
 

ذیشان خان

Administrator
دعوت فکر و عمل

✍ عتیق الرحمن ریاضی کلیہ سمیہ بلکڈیہوا نیپال
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چوری کرنے والے سے ہماری دوستی نہیں ہو سکتی!
ڈاکہ ڈالنے والے کے ساتھ اٹھنا بیٹھنا جرم ہے!
بدکاری کرنے والا تو بہت بڑا گنہگار ہے!
شراب پینے والے کا تو نام سن کر ہی غصہ آتا ہے ، ساتھ رہنا اور رشتہ لگانا تو دور کی بات!

ان تمام لوگوں سے تو ہم بہت دور رہتے ہیں!
میرے بھائی! آپ کی ایمانی غیرت کو بہت بہت سلام!
لیکن ایک سوال ہے کہ نماز چھوڑنے والا شخص مذکورہ تمام لوگوں سے بھی بڑا مجرم اور گنہگار ہے!

مگر۔۔۔۔ مگر۔۔۔۔ مگر ۔۔۔۔۔

بے نمازی ہمارا ملازم!
بے نمازی ہمارا کرایہ دار!
بےنمازی ہمارا دوست!
بے نمازی ہمارا بیٹا!
بے نمازی ہمارا بھائی!
بے نمازی ہمارا داماد!
بے نمازی ہمارا رشتے دار!

جبکہ احادیث صحیحہ کے مطابق ۔۔۔۔۔۔
" آدمی اور کفر کے درمیان فرق نماز کو چھوڑنا ہے"
" ہمارے اور ان (کافروں) کے درمیان عہد نماز ہے ، لہذا جو شخص اسے چھوڑ دے اس نے یقینا کفر کیا"
" صحابہ کرامؓ اعمال میں کسی عمل کے چھوڑنے کو کفر نہیں سمجھتے تھے سوائے نماز کے"

امام ابن القیم رحمہ اللہ کہتے ہیں:
مسلمانوں میں کوئی اختلاف نہیں کہ جان بوجھ کر فرض نماز کو چھوڑنا کبیرہ گناہوں میں سے ہے
اور اس کا گناہ اللہ کے نزدیک قتل کرنے ، مال لوٹنے ، بدکاری اور شراب نوشی سے بھی بڑا ہے ۔۔۔۔۔
(کتاب الصلاة لابن القیم ص ٢١-٢٢)

واو۔۔۔۔۔۔۔ کتنا بڑا جرم اور گناہ ہے نماز کا چھوڑنا!!!
کتنے بد نصیب ہیں وہ لوگ جو مسجدوں اور نمازوں سے دور بھاگتے ہیں۔۔۔۔۔۔!!!

دعا ہے کہ اللہ تعالیٰ ہمیں اور ہمارے اہل و عیال ، دوست و احباب ، رشتے دار اور تمام مسلمانوں کو نماز قائم کرنے کی توفیق عطا فرمائے، آمین
 

ذیشان خان

Administrator
دعوت فکر و عمل​

✍ عتیق الرحمن ریاضی کلیہ سمیہ بلکڈیہوا نیپال
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نیند اور عیش و آرام کے متوالے اپنے خوابوں کو تعبیر سے ہمکنار نہیں کر سکتے!
دوسروں کے بازووں کی قوت پر بھروسہ کرنے والے اپنی زندگی کو تابندگی کا عنوان نہیں دے سکتے!

قانون الہی اہل جنوں کا ذوق پرواز دیکھتی ہے ، جرات رندانہ کی طالب ہوتی ہے اور جب دین کے متوالے قربانی اور نشہ شہادت میں مخمور آگے بڑھتے ہیں تو منزلیں خود آگے بڑھ کر ان کا استقبال کرتی ہیں ۔۔۔۔۔۔

"لیس للانسان الا ما سعی" کا واضح پیغام ہے کہ انسان کو وہی عطا ہوتا ہے جس کے لیے وہ محنت کرتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔

ہم آسمان کی طرف نگاہوں کو اٹھاتے ہوئے شکوہ کناں تو رہتے ہیں؛ لیکن نہ اپنی اداؤں اور اطوار پر غور کرتے ہیں، نہ اپنے اعمال ، افعال ، کردار ، کوشش اور تڑپ کا جائزہ لیتے ہیں ، یہ کبھی نہیں سوچتے کہ آخر ہم اس قدر بے اثر و بے ثمر کیوں ہوتے چلے جا رہےہیں ۔۔۔۔۔ ؟
اپنے ہی لوگ ہمارے نام سے کیوں گھبرا رہے ہیں۔۔۔۔۔؟

دینی وملی بھائیو! سرکار دو عالم صلی اللہ علیہ وسلم سے وفاداری ہم سے حسن عمل کا تقاضا کرتی ہے "من یطع الرسول فقد اطاع اللہ" یعنی جس نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی اطاعت کی اس نے اللہ عزوجل کی اطاعت کی ۔۔۔۔۔۔۔
حق تو یہ ہے کہ اطاعت رسول ہماری زندگی کے ہر پہلو پر محیط ہونی چاہیے ، ہم میں سے کوئی راعی ہو یا رعایا ، حکمراں ہو یا عام شہری ۔۔۔۔ امام ہو یا مقتدی ۔۔۔۔ داعی ہو یا مدعو ۔۔۔۔ خطیب ہو یا سامع۔۔۔۔ ہر ایک کو اطاعت مصطفی کا طوق اپنی گردن میں سجانا پڑے گا ۔۔۔۔۔۔۔

محترم حضرات! اللہ تعالی نے ہمیں بہت کچھ دیا ہے ۔
کتاب و سنت ، مساجد ، مدارس ، دینی و رفاہی ادارے اور مقدس مقامات!

اس کے باوجود آج چاروں طرف مسلمانوں کی سسکیاں ہیں ، آہیں ہیں ، نالہ و فریاد ہے ، بدحالی ، بیکاری و بیقراری ہے!
ایسے پر آشوب دور میں اللہ کی رحمت کے سہارے
کاش! ہم انسانیت کی سرفرازی کا پرچم اٹھا کے تو چلیں۔۔۔۔۔۔۔!
کا ش! ہم فلک بوس محلات سے نیچے اترکے تو دیکھیں ۔۔۔۔۔۔۔!
‌کاش! ہم مسکینوں و محتاجوں کی طرف خلوص و محبت کی نظریں ملا کر تو دیکھیں ۔۔۔۔۔۔۔!
کاش! ہم جہالت و ضلالت کے خاتمے اور اللہ کے دین کی سر بلندی کیلئے زمینی سطح پر اتر کر تو دیکھیں!

میرے بھائی! اگر صاحبان اقتدار، وارثین انبیاء ایک دفعہ بھی مسلمانوں کی بے دینی ، بے حسی ، مفلسی و بد حالی دیکھ کر شرمندگی سے دوچار ہوگئے تو پھر لوگ زندگی کے لیے نہیں ترسیں گے ، بلکہ زندگی کی خوشحالیاں ان کے قدموں کی بلائیں لیں گی ، پھر ایک سنہرے مستقبل کا سورج طلوع ہوگا ، ایک نئی زندگی جگمگاہٹیں بکھیرے گی اور اس زندگی کا حسن عارضی یا لمحاتی نہیں ہوگا ، بلکہ اس سے دوام کے سر چشمے پھوٹیں گے ۔۔۔۔۔

بس اتنا سا عرض ہے کہ ۔۔۔۔۔۔۔۔
قصر مرمر کی بلندی سے نظر کیا آئے گا
خلق سے ملنا ہے تو پھر نیچے اترنا چاہیے
پھر ابھر آئیں یہاں تعمیر کی رعنائیاں
ان خوابوں میں کچھ ایسا رنگ بھرنا چاہیے
 

ذیشان خان

Administrator
دعوت فکر و عمل

✍ عتیق الرحمن ریاضی، استاذ کلیہ سمیہ بلکڈیہوا نیپال
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ایک حادثہ میں کچھ لوگ ہلاک ہو چکے تھے تو کچھ لوگ پریشان حال مجبور اور زخمی کراہ رہے تھے ، جنہیں فوری مدد کی ضرورت تھی ۔۔۔۔۔۔

ایک شخص کا گزر اس راستہ سے ہوتا ہے وہ حادثہ کا منظر دیکھتا ہے ، اسے تکلیف بھی ہوتی ہے مگر سرد آہیں بھرتا ہوا اور یہ سوچتا ہوا نکل جاتا ہے کہ اتنا بڑا حادثہ میں کیا کر سکتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔؟

وہیں ایک دوسرے شخص کو حادثہ کے نتائج دیکھ کر بہت تکلیف ہوتی ہے، لیکن وہ شخص بس اتنا ہی نہیں کہ صرف تکلیف محسوس کرتے ہوئے وہاں سے چلتا بنے۔۔۔۔۔۔
اس نے سوچا کہ ان لوگوں کے لیے ضرور کچھ نہ کچھ کرنا چاہیے،گرچہ اس کے پاس ان کی امداد کیلئے وہاں کچھ نہیں تھا سوائے ایک سوچ اور فکر کے ۔۔۔۔۔۔۔۔!

پھر اس نے اپنے دوست و احباب ، متعلقین اور گاوں والوں کے درمیان جا کر بڑے ہی اچھے اسلوب میں لوگوں کو مدد کے لئے اپیل کرتا ہے اور پھر دیکھتے ہی دیکھتے بہت سارے لوگ اس امدادی کام میں حصہ لیتے ہیں اور زخمی لوگوں کی زندگی بچانے میں بہت حد تک کامیاب ہوجاتےہیں ۔۔۔۔۔!

اس طرح پہلے شخص کے لئے جو کام مشکل اور ناممکن تھا دوسرے شخص کی سوچ تڑپ اور نیک جذبہ نے اسے اس کے مشن اور نیک ارادے میں کامیاب بنا دیا۔۔۔۔۔۔۔!!

میرے بھائی! کوئی بھی معاشرہ اسی وقت پھل پھول سکتا ہے ، پنپ سکتا ہے، اچھا ہوسکتا ہے جب لوگ ایک دوسرے کا ساتھ دیں ، ایک دوسرے کو اپنائیں اور کسی بھی پریشانی ، درد و مصیبت میں ایک دوسرے کا خیال رکھیں اور ان کی بھر پور مدد کریں۔۔۔۔۔۔

جہاں یہ جذبہ نہیں ہوتا وہاں ناکامی ، مایوسی، ویرانی اور بے چینی رہ جاتی ہے۔۔۔۔۔۔!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پیغام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم اپنی سوچ کو بلند کریں، فکر کو وسعت دیں، دوسروں کے لیے کچھ کرنا سیکھیں، اپنے علم و ہنر ، بصیرت و بصارت اور مال و دولت سے لوگوں کو گمراہی کے راستے سے بچائیں ۔۔۔۔۔۔

آج ضلالت و جہالت کی تاریکی میں اکثر لوگ ڈوبے ہوئے ہیں، بے دینی اتنی ہے کہ نماز جیسی اہم عبادت سے بھی غافل ہیں ۔۔۔۔۔۔
اللہ تعالی نے ہمیں علم دیا ہے ، ہم علم کی روشنی کو قید کر کے نہ رکھیں، بلکہ زیادہ سے زیادہ اپنے علم سے لوگوں کو فائدہ پہنچائیں۔۔۔۔۔۔۔۔

گناہوں اور گنہگاروں کی کثرت سے ہم ہمت نہ ہاریں۔
یاد رکھیں! ہماری منزل وہاں تک ہے جہاں تک ہم ہمت نہیں ہارتے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔!

ہم آگے بڑھیں ، گاؤں گاوں کا دورہ کریں، لوگوں کی اصلاح و راہنمائی کریں ، بنی آدم کو جہنم کی آگ اور عذاب سے بچانے کی سچی فکر کریں ۔۔۔۔۔۔
مدد اور توفیق اللہ رب العالمین دینے والا ہے ۔۔۔۔۔۔

وہ طائف کی وادی میں کھا کھا کے پتھر؛ ہمارے لئے جو تڑپتا رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔!!
کتنی حیرت کی بات ہے کہ آج اسی کے وارثین عیش و آرام کی زندگی گزارنے میں لگے ہیں۔۔۔۔۔۔!!!!!

اللہ ہمیں اپنے منصب و مقام کو سمجھنے اور اس کے حقوق کے ادا کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔۔۔۔۔۔۔۔ آمین
 

ذیشان خان

Administrator
دعوت فکر و عمل

✍ عتیق الرحمن ریاضی، استاذ کلیہ سمیہ بلکڈیہوا نیپال
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسلام پیش کرنے سے پہلے رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنا اسلامی کلچر پیش کیا، چالیس سال تک آپ نے دعوی نہیں کیا؛ بلکہ جھوٹوں میں سچا ، راہزنوں میں رہبر اور غاصبوں میں امین ہونے کی دلیل پیش کی۔۔۔۔۔۔۔!

چالیس سال کے بعد کہا کہ تم نے میرا بچپن دیکھا، جوانی دیکھی، کوئی لغزش زبان! لغزش نظر! لغزش قدم! کوئی غلط خیال! کوئی غلط کام ۔۔۔۔۔۔؟
بیشک رسول ہمارے لئے اسوہ اور ہم وارث انبیاء ہیں!

مگر افسوس!
آج کتنے ہی وارثین انبیاء اپنے کردار کو داغ دار کر رہے ہیں!
کتنے ہی حسین و جمیل اور اثردار چہرے بد صورت و بے اثر ہو رہے ہیں۔۔۔۔۔!
کتنے ہی علم و فضل والے اب رسوائی کے دہانے پر کھڑے نظر آرہے ہیں۔۔۔۔۔!
کتنے ہی عقل و خرد والے جھوٹی شہرت اور عہدوں کے پیچھے اپنے ظرف و ضمیر کا سودا کر رہے ہیں۔۔!

کتنے ہی درس وتدریس اور جامعہ والے سڑکوں و چوراہوں پر گپ شپ میں مشغول ہوتے ہیں؛ ادھر بالکل قریب ہی مسجدوں میں نمازیں ہو رہی ہوتی ہیں ۔۔۔۔۔!
جناب! آپ ہی بیان کرتے ہیں کہ نبی اکرم صلی اللہ وسلم کمزوری کی حالت میں بھی دو صحابہ کے کندھوں پر سہارا لے کر مسجد نبوی میں نماز کے لیے جاتے ہیں؛ پھر آپ کو نماز کیلئے رخصت کہاں سے مل جاتی ہے۔۔۔۔۔؟

افسوس! اسلام کی جڑوں کو اسلام کے محافظ ہی کھو کھلے کر رہے ہیں ۔۔۔۔۔۔!

اگر یہ کہا جائے تو بے جا نہ ہوگا کہ اس وقت برائی اور بگاڑ ہر گلے کا سہرا ہے، ایسے میں قوم و ملت کی بہتری کیسے ممکن ہے۔۔۔۔۔۔۔۔؟

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پیغام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ضروری ہے کہ ملت کا ہر فرد سب سے پہلے اپنی اصلاح کرے ، اسلام کے رنگ میں مکمل رنگ جائے ، قومی وسماجی بگاڑ کو محسوس کرے اور فلاح انسانیت کیلئے عملی شکل وصورت کو رائج کرے۔
محبت والفت کے ساتھ نوجوانوں کو صحیح سمت دکھلائے، آنے والی نسل کی زندگی کو اجیرن ہونے سے بچائے۔۔۔۔۔

اللہ تعالی ہم تمام لوگوں کو حقیقی معنوں میں قوم ملت کا صحیح خادم اور سچا محافظ بنائے، آمین
 

ذیشان خان

Administrator
دعوت فکر و عمل

✍ عتیق الرحمن ریاضی کلیہ سمیہ بلکڈیہوا نیپال
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جس معاشرے میں اساتذہ و ہنر مند لوگ میٹھے میٹھے الفاظ سے بہلائے جاتے ہوں ، معمولی سی تنخواہ بھی انہیں بھیک کی طرح مانگنے پڑتے ہوں ۔۔۔۔۔۔۔
اور دوسری طرف شان و شوکت ، شہرت و نمود، عزت و شرف اور اپنے کاموں کیلئے روپئے پیسے پانی کی طرح بہائے جاتے ہوں ۔۔۔۔۔۔۔

تو ایسے معاشروں کو بد سے بد تر اور خطرناک صورتحال سے دوچار ہونا پڑے گا، جو جہاں ہے وہیں پریشان نیز سب کچھ ہونے کے باوجود بھی ہمیشہ روتا ہوا نظر آئے گا اور امن و سکون سے وہ دور بہت دور ہوگا۔۔۔۔۔۔۔

ذرا سوچئے!
آخر کیا وجہ تھی کہ مسلمانوں کے سچے خلیفہ اور امیرالمومنین کے گھروں میں شان و شوکت اور عیش و عشرت نام کی کوئی چیز نہ ہوتی تھی پھر بھی ان کی زبان پر کبھی بھی کوئی شکوہ نہ ہوتا ۔۔۔۔۔۔۔!!!

افسوس! آج جس کے پاس جتنا ہے اتنا ہی وہ روتا ہوا نظر آتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔!!!
 

ذیشان خان

Administrator
دعوت فکر و عمل

✍ عتیق الرحمن ریاضی کلیہ سمیہ بلکڈیہوا نیپال
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

👈 کھو دینے کا خوف اور پالینے کی حرص دو ایسی بیڑیاں ہیں جو انسان کی حق گوئی ، سچائی اور اصول پرستی کو جکڑ لیتی ہیں ، اگر آزاد انسان کی طرح جینا چاہتے ہو تو سود و زیاں سے بے نیاز ہوکر اللہ تعالیٰ پر مکمل توکل و بھروسہ کرو ۔۔۔۔۔
"ومن یتوکل علی اللہ فھو حسبہ"
ویسے تو رنگین دنیا میں یہ مشکل ضرور ہے ؛ لیکن وہ دن دور نہیں جب سود و زیاں تو کیا۔۔۔۔۔۔؟
آپ ہر چیز سے بے نیاز ہوجاؤ گے اور سب آپ سے بے نیاز ہوجائیں گے۔۔۔۔۔۔!
ایسے کتنے بوڑھوں یا بیماروں اور لوگوں کو آپ نے اپنی آنکھوں سے دیکھا ہوگا ۔۔۔۔۔۔۔!

اس لیے ہمیشہ حقیقت پر نظر رکھو اور حق پر جمے رہو ، اگر حقیقت دیکھ کر خود کو سنوارنے کے بجائے آپ نے آئینہ ہی توڑ ڈالا تو آپ کی بدصورتی بکھری ہوئی درجنوں کرچیوں میں منعکس ہونے لگے گی، پھر نہ کہنا کہ بدنام ہو گئے۔۔۔۔۔۔
یعنی ۔۔۔۔۔۔
جب کوئی خیرخواہ آپ کی غلطی کی نشاندہی کرے تو اپنی اصلاح کی بجائے اسے خود سے دُور کردو گے تو پھر غلطی نہیں غلطیاں ہوں گی ۔۔۔۔۔۔

آپ نے دیکھا ہوگا کہ پرندے بلندی پرواز کے ساتھ ساتھ نیچے گہری پستیوں سے اپنی نظریں نہیں ہٹاتے!
پر حیرت ہے ان انسانوں پر جو بلندیوں تک تو پہنچ جاتے ہیں لیکن نیچے اس جگہ نہیں دیکھ پاتے جہاں ایک دن ان کی لاش کو گرنا ہے۔۔۔۔۔۔۔!

عموما ہر شخص سوچتا ہے کہ ابھی کہاں مرنا!
بھائی میرے بھائی! اگر یہ سوچ کسی وقت غلط ثابت ہوگیا تو پھر کیا ہوگا۔۔۔۔۔۔؟
لہٰذا ہمیشہ یہ سوچ رکھو کہ مجھےجلد مرجانا ہے۔۔۔
جس دن یہ سوچ غالب ہوگا ، اس دن دنیا کی رنگینیوں کو بھول جاؤ گے اور حق پرست و اصول پرست بن جاوگے۔۔۔۔۔۔

اللہ ہم سب کا حامی و ناصر ہو، آمین
 

ذیشان خان

Administrator
دعوت فکر و عمل

✍ عتیق الرحمن ریاضی کلیہ سمیہ بلکڈیہوا نیپال
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

روشنی ہوتو اندھیروں کا ا ثر ٹوٹتا ہے حق کے اظہار سے باطل کا سحر ٹوٹتا ہے

قول و عمل میں تضاد ہونا ، زبان کی لاج نہ رکھنا ۔۔۔۔
اللہ کے پاکیزہ کلام سے رو گردانی کرنا، شریعت کو اپنے فائدے اور اپنی آسانی کے لئے استعمال کرنا ۔۔۔۔۔۔

عالیشان عمارتیں ، اے سی دار کمرے ، کھاتوں پہ کھاتے بینکوں میں خوب پیسے، گاڑیاں اور عیش و زیبائش بھری زندگی، سجے سجائے دسترخوان اشارہ ہے کہ زندگی میں کیا چل رہا ہے ۔۔۔۔۔۔!

مت بھولیں اس دن کو جب قدم ٹہر جائیں گے یہاں تک کہ یہ نہ بتادیں کہ علم کے مطابق عمل کتنا کیا۔۔۔۔۔۔؟
اور مال کیسے کمایا اور خرچ کہاں کیا۔۔۔۔۔۔؟

يٰۤاَيُّهَا الَّذِيۡنَ اٰمَنُوۡا اتَّقُوا اللّٰهَ وَلۡتَـنۡظُرۡ نَـفۡسٌ مَّا قَدَّمَتۡ لِغَدٍ‌ ۚ وَاتَّقُوا اللّٰهَ‌ؕ اِنَّ اللّٰهَ خَبِيۡرٌۢ بِمَا تَعۡمَلُوۡنَ ۞
اے لوگو جو ایمان لائے ہو، اللہ سے ڈرو، اور ہر شخص یہ دیکھے کہ اُس نے کل کے لیے کیا بھیجا ہے۔
اللہ سے ڈرتے رہو، اللہ یقیناً تمہارے اُن سب اعمال سے باخبر ہے جو تم کرتے ہو۔
 
Top