ذیشان خان

Administrator
گھریلو جھگڑے: اسباب وعلاج

ازقلم: عبیداللہ بن شفیق الرحمٰن اعظمیؔ محمدیؔ مہسلہ
.........................................................
گھروں یا اپنوں میں اختلاف ہونا فطری بات ہے یہ ہر گھر میں ہوتے ہی رہتا ہے، لیکن جب گھریلو اختلاف شدید ہو جائے، معاملہ طول پکڑ جائے، گھروں میں نفرت بھڑکنے لگے تو یہ بہت بری بات ہے، اور افسوس آج یہی ہو رہا ہے، تقریباً تقریباً ہر گھر کا یہ سنگین مسئلہ بنا ہوا ہے بھائی بھائی میں اختلاف، بہن بہن میں اختلاف، والدین سے اختلاف، الغرض آج سب کو اپنے قریبی لوگوں اور گھر والوں سے شکایت ہے اور ہر آدمی اپنوں سے روٹھا ہے، یہ بہت حساس موضوع ہے اس پر کچھ خامہ فرسائی کرنا مشکل ہے لیکن چونکہ سماج کی ایک اہم ضرورت ہے اس لیے باذن اللہ ادنی سی کوشش کی جا رہی ہے، آئیے سب سے پہلے یہ جانتے ہیں کہ گھروں میں اختلاف کیوں ہوتا ہے اس کے اسباب وعوامل کیا ہیں-
*گھریلو اختلافات کے اسباب*
1) جوائنٹ فیملی کی رسم-
2) خود ماں باپ کا آپس میں بات بات پر لڑنا، بحث کرنا، پھر ظاہر ہے بچے بھی ماں باپ کو دیکھ کر وہی لڑنا سیکھیں گے-
3) والدین کا انصاف نہ کرنا-
4) مالی کرپشن-
5) بہنوں کو وراثت سے محروم کرنا-
6) علم وعمل کی کمزوری-
7) آخرت کے حساب وکتاب سے غفلت اور دنیا کی ہوس-
8) حرام خوری-
9) اختلاف کے انجام سے بےخبر ہونا-
10) شادی کو مشکل بنانا-
11) ماں باپ کا اپنی ذمہ داری ادا نہ کرنا-
12) ساس کا اپنی بہو کے ساتھ بدسلوکی کرنا-
13) صحابہ کرام کی سیرت نہ پڑھنا، صحابہ ایسے تھے کہ دوسروں کو اپنے گھر میں پناہ دیتے تھے، رہنے سہنے، کھانے پینے، اور کاروبار میں شریک کرتے تھے، ہم اپنے ہی گھر کے لوگوں کو اجنبی سمجھتے ہیں اور ان کے ساتھ بدسلوکی کرتے ہیں-
یہ گھریلو اختلافات کے چند اسباب ہیں، اب آئیے کچھ علاج کے بارے میں بھی جان لیتے ہیں تاکہ ہم اچھی طرح ہر اختلافات سے بچ سکیں-
1) ماں باپ، بھائی بہن گھر خاندان کے حقوق کو جانیں-
2) اختلاف کے نقصانات سے باخبر رہیں-
3) جوائنٹ فیملی کی رسم سے بچیں-
4) نیک سیرت خاتون سے شادی کریں-
5) گھروں میں تعلیم وتربیت کا منظم نظم قائم رکھیں-
6) کوشش کریں کہ اپنا زیادہ تر وقت بال بچوں میں گزاریں، زیادہ گھر سے دور نہ رہیں-
7) اختلاف کے خاتمہ کے لیے ہر گاؤں اصلاحی کمیٹی تشکیل دیں، جیسے پہلے دیہاتوں میں پنچایت ہوتی تھی-
8) حلال کمائیں اور حلال کھائیں، حرام سے بچیں، کیونکہ حرام کھانے سے ہر طرح کا بگاڑ پیدا ہوتا ہے-
9) نشہ آور چیزوں سے بچیں، کیونکہ اس سے آدمی دماغی توازن کھو بیٹھتا ہے اور جلد غصے میں آجاتا ہے اور کام بگاڑ کر آدمی سانس لیتا ہے-
10) سوشل میڈیا اور نیوز چینل کا ناجائز استعمال نہ کریں-
11) اپنی اولاد کی تعمیر وترقی کے لیے للہ سے دعائیں کریں، کیونکہ اولاد کے حق میں والد کی قبول ہوتی ہے-
12) گھروں میں نفل نمازوں کا اہتمام کریں، قرآن پڑھیں، کیونکہ اس سے خیر وبرکت ہوتی ہے، اور شیطان ایسے گھروں میں قدم نہیں جما پاتا ہے-
یہ کچھ نصیحتیں ہیں اگر ہم ان پر عمل کریں تو ان شاءاللہ بہت حد تک اختلافات پر قابو پا سکتے ہیں اور محبت والفت کے ساتھ گھروں کو آباد رکھ سکتے ہیں، اللہ تعالٰی سے دعا ہے کہ مولائے کریم ہمارے گھروں میں سکون نصیب فرمائے اور ہر ظاہری وباطنی رنجش اور اختلاف سے بچائے اور ہم سب کو شیطان کے شر سے محفوظ رکھے آمین-
══════════ ❁✿❁ ══════════
 
Top