ذیشان خان

Administrator
مال داروں کی برابری کرنے کا فیشن

☆ علامہ ابن عثيمين رحمه اللّٰه فرماتے ہیں :

آج کے وقت میں بہت سارے مالی اعتبار سے کزور یا متوسط طبقہ کے لوگ یہ غلطی کر رہے ہیں کہ وہ امیروں اور مالداروں کی برابری اور ان کے جیسا ہر چیز کرنے کی کوشش میں مبتلا ہیں جو کہ غلط ہے. مثل مشہور ہے کہ آدمی کو اپنی چادر کے بقدر ہی پیر پھیلانا چاہیے.

لہذا اگر تمہاری آمدنی کم ہے اور تم چاہو کہ کھانے پینے کپڑے، شادی بیاہ، گاڑی اور گھر وغیرہ میں امیروں کی برابری کرو تو یہ بیوقوفی والا اور حرام عمل ہے.

📜 |[ شرح رياض الصالحين : ٦/ ٥٥٠ ]|
 
Top