ذیشان خان

Administrator
سیدنا ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ کے کثرت روایت پر اعتراضات کی حقیقت

تحریر: ابوبکر قدوسی

انکار کا کیا ہے وہ تو لوگ اللہ کا بھی کر گزرے ، اور اعتراض کا کیا ہے ، وہ تو نبیوں پر بھی کیا گیا -
سیدنا ابو ہریرہ پر کثرت راویت حدیث کے سبب ایک طبقہ اعتراض کرتا ہے -
جو احترام کرتے ہیں ان کو بھی یہ خدشہ ہوتا ہے کہ حضرت بھول بھال بھی جاتے ہوں گے ، غلطی کا صدور بھی ہوتا ہو گا - ظاہر ہے زیادہ جو بیان کرتے تھے -
ایک اعتراض یہ آتا ہے کہ آپ چار برس قبل تو نبی کریم کی خدمت میں آئے ، اس میں سے بھی ایک برس آپ گورنر بن کے چلے گئے - اور ان تین برسوں میں یہ ہزاروں احادیث کیونکر بیان ہو گئیں -
ایک اعتراض سیدنا عبد اللہ بن عمر کے حوالے سے کیا جاتا ہے -
ایک سیدہ عائشہ کے حوالے بھی بیان کیا جاتا ہے -
یہ اعتراضات کرنے والے تین طبقات ہیں
ایک وہ جو سن سنا کے ، کسی کا پڑھ پڑھا کے اعتراض جڑنے والے ہیں - خود ان کی کوئی تحقیق ، نہ ایسی تحقیق تک پہنچ ہوتی ہے -
بس شوق ہوتا ہے کہ کچھ نیا ہو ، ہٹ کے بات کی جائے -
ایسے دوست کسی کی لکھی بات کو مستعار لے کے اپنی دانش وری بگھارتے ہیں -
دوسرا گروہ وہ جو ان معاملات کی گہرائی کو سمجھتا تو ہے ، لیکن اندر انکار حدیث اور استخلاف حدیث سانپ بن کے کنڈلی مارے بیٹھا ہوتا ہے ، اور بوقت ضرورت پھنکارتا ہے
تیسرا گروہ مستشرقین کا ہے ، جس کا بنیادی مقصد ہی ذخیرہ حدیث کو مشکوک ٹہرانا ہے -
سیدنا ابو ہریرہ پر اعتراضات کو ہوا دینے میں ایک بڑا نام گولڈ زیہر کا ہے -
جس نے خاص طور پر کھیتی کے کتے کو پالنے والی حدیث کو بیان کر کے بہت " مہارت " کے ساتھ اس شک کو پیدا کیا -
ان اعتراضات کی حقیقت کچھ بھی نہیں - کوئی بھی اگر معمولی سا غور فکر کرے تو اس کو اصل معاملہ سمجھ آ جائے گا -

پہلا اعتراض کہ بندہ بھول بھی تو سکتا ہے ، اتنی باتیں کس طرح ممکن ہے یاد رکھنا ؟؟
اس پر ہم آخر میں بات کریں گے کہ "باتیں " یعنی حدیثیں تھیں کتنی ، جن کا شور کیا جاتا ہے - لیکن پہلے بھولنے کی بات اور یہ کہ کیا اتنا یاد رکھنا ممکن ہے؟ -
عالم اسلام میں اس وقت ہر سو ، بھلے عجم ہو یا عرب ، حفاظ قران بکھرے پڑے ہیں -
آپ مجھے بتائیے کہ اگر میں کہوں کہ لاکھوں میں نہیں "میلینز" میں حفاظ موجود ہیں تو کیا غلط ہو گا ؟
حفاظ قران کو رمضان میں مسجد خالی نہیں ملتی - تو جب لاکھوں بچے ، بڑے قران کی ایک ایک آئت یاد رکھ سکتے ہیں ، ایک ایک حرف ، ایک ایک حرکت یعنی زیر زبر ان کی نظر میں ہوتی ہے - کوئی غلطی کرے ، صرف زبر زیر کی غلطی ، لفظ تو بڑی بات ہو گی - جی ہاں صرف ایک زیر یا زبر کی غلطی بھی کر لے تو اس کا بچ کے جانا ممکن نہیں -
تو سیدنا ابو ہریرہ کی بیان کردہ احادیث اس قران کی آیات سے تو زیادہ نہیں جناب - اور جب سیدنا ابو ہریرہ کی زندگی کا بنیادی مقصد ہی آپ کی باتیں سننا ، یاد رکھنا اور محفوظ کرنا تھا - جب بندہ کسی خاص مقصد کو سامنے رکھ کے کام کرے تو اس کی کارکردگی بہت بڑھ جاتی ہے -

پھر یہ بھی کہ سیدنا ابوہریرہ کو نبی کریم صلی اللہ علیه وسلم کی خصوصی دعا بھی تھی - کم از کم مسلمان ہوتے ہووے آپ اس دعا کو کس طرح نظر انداز کر سکتے ہیں ؟
بندے کی گواہی بندے کے اپنے حق میں قبول نہیں ہوتی ، لیکن دوسرے کی گواہی کا آپ کس طرح انکار کر سکتے ہیں ؟
لیجئے یہ واقعہ پڑھیے اور غور کیجئے کہ دعائے رسول نے کس طرح اپنے اثرات دکھائے اور ہم تک پہنچے :
سیدنا زید بن ثابت رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ :
"ہم مسجد میں بیٹھے ذکر و فکر میں مشغول تھے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم تشریف لے آئے اور ہمارے ساتھ بیٹھ گئے ۔ (ہم جو رک گئے تو )
فرمایا اپنا کام جاری رکھو ۔ میں نے اور میرے ساتھیوں نے دعا کی تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ہماری دعا پر آمین کہی -
پھر ابوہریرہ نے یہ دعا کی:
"انی اسئلک مثل ما سال صاحباک واسالک علما لاینسی"
کہ اے اللہ میں اس چیز کا سوال بھی کرتا ہوں جس کا میرے ساتھیوں نے کیا اور مزید مجھے ایسا علم عطافرما جو کبھی نہ بھولے ۔
فقال رسول اللہ آمین فقلنا یارسول اللہ ونحن نسالک علما لاینسی فقال سبقکم بھا الغلام الدوسی"
تو رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے آمین فرمائی -
اس پر ہم نے بھی رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے عرض کیا کہ ہم بھی اللہ سے ایسے ہی علم کا سوال کرتے ہیں جو کبھی نہ بھولے -
تو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ دوسی[اشارہ ابو ہریرہ کی طرف] تم دونوں سے سبقت لے گیا۔
(الاصابۃ ج4ص2391،سیراعلام النبلاء ج3ص522)
دیکھئے یہ روایت سیدنا ابوہریرہ نہیں بیان کر رہے ، دوسرے صحابی کا بیان ہے - اور جس دعا پر خاتم النبین آمین کہیں ، اور بشارت بھی دیں کہ ابو ہریرہ بازی لے گئے ..کیا اس کی قبولیت میں کوئی شک ہو سکتا ہے ؟
میں تو کہتا ہوں کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا یہ فرمانا کہ " دوسی تم پر سبقت لے گیا " اصل میں ایک لطیف اشارہ بھی ہے کہ قبولیت ہو گئی -

اسی طرح طلحہ بن عبیداللہ رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں:لا اشک ان اباہریرۃ سمع من رسول اللہ مالم نسمع (الاصابۃ ج4ص2391)
مجھے اس بات میں کوئی شک نہیں کہ ابوہریرہ نے جو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے وہ احادیث سنی ہیں جو ہم نے نہیں سنیں۔
یہی روایت قدرے تفصیل کے ساتھ مستدرک حاکم میں ان الفاظ کے ساتھ ہے :"اللہ کی قسم ، بے شک انہوں نے رسول اللہ سے وہ سنا جو ہم نے نہیں سنا ، اور انھیں وہ کچھ معلوم ہوا جو ہمیں معلوم نہ ہو سکا - بے شک ہم مال دار لوگ تھے - ہمارے گھر اور کنبے تھے - ہم اللہ کے نبی کے ہاں صبح شام حاضر ہوتے تھے اور واپس چلے جاتے تھے - ابو ہریرہ مسکین آدمی تہے نہ ان کا مال تھا نہ کنبہ نہ اولاد - ان کا ہاتھ نبی کریم کے ہاتھ کے ساتھ تھا جہاں کہیں آپ تشریف لے جاتے آپ بھی ساتھ ساتھ ہوتے - ہمیں اس بارے میں کوئی شک نہیں کہ یقینا انہوں نے وہ کچھ جانا جس کا ہمیں کوئی علم نہ تھا - اور انہوں نے وہ سنا جو ہم نے نہ سنا - ہم میں سے کسی ایک نے بھی ان پر یہ تہمت نہ باندھی کہ انہوں نے رسول اللہ سے کچھ ایسا منسوب کیا کہ جو نبی کریم نے نہ بیان کیا ہو "(المستدرک الصحیحین ٥١٢، ٥١٣ /٣ )
اسی طرح امام احمد سیدنا ابن عمر سے روایت کرتے ہیں کہ انہوں نے سیدنا ابو ہریرہ کو مخاطب کر کے فرمایا :"اے ابو ہریرہ آپ رسول اللہ کے ساتھ ہمارے سے زیادہ چمٹنے والے تھے ، اور ان کی حدیث ہم سے زیادہ جاننے والے تھے "(لمبی حدیث ہے ، جس کا آخر میں نے ذکر کیا )
خود سیدنا ابو ہریرہ فرماتے ہیں کہ :
”لوگ کہتے ہیں کہ ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ زیادہ حدیثیں بیان کرتا ہے۔بات یہ ہے کہ میں اپنا پیٹ بھر کر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے دامن سے وابستہ رہا کرتا تھا نہ لذیذ کھانے مجھے نصیب تھے نہ عمدہ کپڑا،نہ میرا کوئی خادم اور نوکر تھا،جب بھوک ستاتی تو میں پیٹ کے بل کنکریوں پر الٹا لیٹ جایا کرتا تھا۔” (بخاری )
اس قول سے اندازہ کیا جا سکتا ہے کہ آپ کو نبی کریم کی محفل میں رہنا ، آپ کے ایک ایک لفظ کو سننا ، یاد رکھنا اور محفوظ کرنا کس قدر پسند تھا - آپ ہم پیچھے بیان کر چکے کہ آپ کو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے دعائے خیر دی تھی ، اور ہمار ایمان ہے کہ آپ کی اس دعا کی برکت سے آپ کا حافظہ بہت مضبوط ہو گیا ..
امام ذھبی آپ کی قوت حفظ بارے ایک واقعہ بیان کرتے ہیں کہ ایک بار مروان بن حکم نے آپ کو آزمانا چاہا اور بلا بھیجا - آپ تشریف لے آئے اسی بیچ مروان نے اپنے کاتب أبو الزعيزعة کو اپنے تخت کے پیچھے چھپا کے بٹھا دیا - کاتب أبوالزعيزعة کہتے ہیں کہ :
"ابوہریرہ رضی اللہ عنہ حدیثیں بیان کرتے رہے اور میں لکھتا رہا۔ مروان نے پھر سال کے شروع میں حضرت ابو ہریرہ کو دوبارہ بلوایا اور مجھے پردہ کے پیچھے بیٹھا یا آپ رضی اللہ عنہ سے وہی احادیث دوبارہ سنانے کی فرمائش کی - آپ رضی اللہ عنہ نے اسی ترتیب سے سنائیں ، کوئی کمی تھی نہ زیادتی، مقدم کو موخر کیا نہ موخر کو مقدم " (سیر اعلام النبلاء ج3ص522)
ممکن ہے کسی کو یہ واقعہ عجیب لگے ، لیکن آج بھی ایسی مثالیں مل جاتی ہیں -
ایک اور اہم بات یاد رکھیے کہ جب کوئی طالب علم حصول علم کو اپنی زندگی حاصل بنا کے کلاس میں بیٹھتا ہے تو اس سی توجہ استاد کی طرف کسی کی نہیں ہوتی - اور آپ سیدنا کا بیان پڑھ چکے ہیں کہ ان کی زندگی کا مقصد ہی آپ کا ایک ایک لفظ سننا تھا - سیدنا ابو ہریرہ کو علم کے حصول کا کیسا شوق تھا اس کا اندازہ اس واقعے سے بخوبی کیا جا سکتا ہے -بخاری میں روایت ہے کہ ایک بار سیدنا نے نبی کریم صلی اللہ علیه وسلم سے پوچھا کہ :
"لوگوں میں آپ کی شفاعت کا سب سے زیادہ حق دار کون ہے ؟"
اس پر نبی کریم صلی اللہ علیه وسلم نے فرمایا :
"میرا گمان بھی یہی تھا کہ لوگوں میں تم سے پہلے یہ سوال مجھ سے کوئی نہیں کرے گا -
کیونکہ میں نے دیکھا ہے کہ تم میں حدیث سننے کی طلب سب سے زیادہ ہے "
سو اس شوق کا سبب ہے کہ آپ کے پاس نبی کریم کی احادیث دوسروں سے کہیں زیادہ جمع ہو گئیں -
امید ہے کہ آپ سیدنا ابو ہریرہ کی کثرت روائیت کے پس منظر کو سمجھ گئے ہوں گے -
اب ہم آتے ہیں ان کی روایات کے تجزیے کی طرف - اور یہاں آپ کو جب حقائق سے آشنائی ہو گی تو آپ حیرت کے سمندر میں اتر جائیں گے -
سوال یہ ہے کیا سیدنا ابو ہریرہ واقعی ایسی کثرت سے روایت کرتے تھے کہ ان کا ثانی کوئی نہ تھا ؟
ایسا بالکل نہیں ہے - دوسرے بہت سے صحابہ بھی ایسے ہیں کہ جن کی روایات خاصی زیادہ ہیں گو آپ کے برابر نہیں پہنچتیں -
خود سیدنا ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سیدنا عبد اللہ بن عمرو بن عاص رضی اللہ عنہ کے بارے میں کہتے تھے کہ:
" ان کے پاس نسبتا زیادہ روایات جمع تھیں ، کیونکہ وہ لکھ لیا کرتے تھے جب کہ میں لکھتا نہیں تھا "
سوال یہ ہے کہ سیدنا ابو ہریرہ کی روایات ایسی منفرد تھیں کہ کسی نے نہ کی ہوں ؟
اس کا جواب بھی آپ کو حیرت میں مبتلا کر دے گا

- سیدنا ابو ہریرہ کی کل روایات کی تعداد ٥٣٧٤ ہے- اس میں سے مکرارت کو حذف کر دیجیے جن کی تعداد ٤٠٧٤ ہے
-
مکرارت کو آپ آسان الفاظ میں کہہ لیں کہ جو حدیث مختلف سند کے ساتھ ، دوبارہ کسی مقام پر آئے - یعنی آپ نے ایک حدیث بیان کی، آپ سے آگے دس افراد نے بیان کی توعلم حدیث میں اس کو دس احادیث کہا جائے گا حالانکہ وہ ایک حدیث ہی ہو گی -
اب آپ نے تکرار کو سمجھ لیا ؟
تو جناب بخاری کی کل حدیثیں ساڑھے سات ہزار سے زائد ہیں ...
اب ان ساڑھے سات ہزار میں مکرارت کو حذف کر کے سیدنا ابوہریرہ کی احادیث صرف تین سو چودہ ہیں ...
اب بتائیے کہاں گئی کثرت روایات ؟
آپ ہمارے ساتھ ساتھ چلیے ...
سفر کچھ باقی ہے -
بخاری کو شامل کر کے باقی کتب حدیث میں ہم ذکر کر چکے کہ
سیدنا ابوہریرہ کی روایات کی تعداد ٥٣٧٤ ہے ..
اس میں سے مکرارت کو حذف کیجئے ..
ہر حدیث کے متن کو ایک بار گنتی کیجئے ..
لیں
سیدنا ابو ہریرہ کی حدیثوں کی تعداد سامنے آ رہی ہے -
جی مکرارت ہم اوپر لکھ چکے کہ ٤٠٧٤ ہیں -
تو جناب اس کے بعد " صافی " احادیث رہ جاتی ہیں ١٣٠٠
جی برداران ! محض تیرہ سو ، جن کو ایک ہزار تین سو بھی بولتے ہیں ...
کیسی حیرت کی بات ہے محض تیرہ سو اور جھگڑا کتنا کھڑا کیا ہوا ہے لوگوں نے -
اور ان تیرہ سو احادیث میں آپ کے لیے مزید حیرت کا پہاڑ موجود ہے - وہ یہ کہ ان میں سے تقریبا ساڑھے بارہ سو کے قریب احادیث کسی نہ کسی مقام پر ، کسی دوسرے صحابی سے بھی مروی ہیں -
یہاں یہ لکھ دوں کہ ضروری نہیں کہ اس کے الفاظ حرف حرف ایک ہوں اگر مفھوم مگر ایک ہی رہے - کیونکہ محدثین کے ہاں احادیث کی حفاظت میں اصل مقصود مفھوم کی حفاظت ہے
اور روایت بالمعنی جائز ہے ،
ہاں اگر الفاظ بھی محفوظ ہوں تو سونے پر سہاگہ ہے -
یہاں رک کے ایک بات مزید "سمجھاتا " چلوں - دوستو تیرہ سو احادیث آپ نے روایت کیں ،
جو اکثر کسی نہ کسی اور صحابی سے بھی مروی ہونا ہم لکھ چکے -
یہ آپ کے شاندار اور جان دار حافظے کی دلیل ہے - اور نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی آپ کے حافظے کے لیے کی گئی دعا کی قبولیت کی بین دلیل - کہ جو روایات مختلف صحابہ اپنی اپنی جگہ روایت کر رہے ہیں ،
وہ آپ بھی روایت کر رہے ہیں -
میرے منکرین حدیث " بھائیوں "
کی فہم کمزور ہے
،بات بہت کھول کھول کے لکھنا پڑتی ہے -
جناب ایسی روایات جن کو صرف سیدنا ابو ہریرہ روایت کرتے ہیں ان کی تعداد بیالیس رہ جاتی ہے .....
یعنی ذخیرہ حدیث میں صرف بیالیس حدیثیں ایسی ہیں کہ جن کو آپ کے علاوہ کوئی دوسرا روایت نہیں کرتا -
اب یہاں میں ایک اہم پہلو کی طرف آپ کو لے جاتا ہوں کہ ان تیرہ سو احادیث میں بہت سی ایسی بھی ہوں گی
کہ جو ضعیف ہیں اور جن سے ہم استدلال نہیں کرتے لیکن "احباب کی خوشی " کے لیے ہم ان کو بھی شمار کرتے ہیں -
تو برادران ان تیرہ سو احادیث کو آپ کے قیام مدینہ کے ایام پر تقسیم تو کیجئے -
آپ نبی کریم کے پاس چار برس رہے ،
ان میں سے ایک سال آپ یمن کو نکل گئے -
باقی بچے تین برس .... تین برس کے دن ہوتے ہیں قریب گیارہ سو .......
تو گیارہ سو دن
ایک صاحب اپنے صاحب ذی وقار کے ساتھ رہے ،
ان کی ہر بات پر کان لگائے رکھے ،
ان کی ہر ہر جنبش لب کو آنکھوں سے لگایا -
ایک ایک بات کو دل میں چھپایا ....
تو کیا اس محبت و عقیدت کا حاصل ایک دن کی ایک حدیث بھی نہ بنی ؟
کچھ تو خوف خدا کیجئے کہ اعتراض کرنے میں بھی حیاء دامن گیر کیوں نہیں ہوتی -
کہ جو ان اعداد و شمار کے بعد بھی آپ پر حدیث وضع کرنے کا گھٹیا الزام لگاتے ہیں -
مجھے یاد ہے کہ ایک ایسی ہی رات میں ایک فیس بکی قاری صاحب نے ایسا الزام لگایا تھا
اور کچھ دیر میں بھاگ لیے اور دلیلٹ کر دیا - ایسے لوگوں کو یہ خبر نہیں کہ ان کا الزام ایسے تمام صحابہ پر آ جاتا ہے جو وہی روایت مختلف الفاظ یا انہی الفاظ سے کرتے ہیں -
اور ایسی روایات سیدنا ابو ہریرہ کی پاک بازی کی علامت ہیں -
اصولی طور پر بحث کا محور وہی روایات ہونی چاہئیے
جو پایہ ثبوت کو پہنچتی ہیں -
لیکن ہم نے صحیح ضعیف کو شامل کر کے یہ حساب کیا ہے -
یہ کہہ کے رخصت کہ :
لاکھ ستارے ہر طرف ، ظلمت شب جہاں جہاں۔۔۔
اک طلوع آفتاب ، دشت چمن سحر سحر
 
Top