ذیشان خان

Administrator
بسم الله الرحمن الرحيم وبه نستعين

ناپ تول میں کمی ایک سماجی جرم
ازقلم: عبیداللہ بن شفیق الرحمٰن اعظمیؔ محمدیؔ مہسلہ
.......................................................
ناپ تول میں کمی کرنا، ڈانڈی مارنا ایک سماجی جرم ہے، سامان کی قیمت پوری لینا اور سامان کم دینا یا ٹیڑھے ترازو سے تول کر سامان فروخت کرنا بہت بڑا گناہ ہے، ڈانڈی مارنا یہ ایسا گناہ ہے کہ اللہ تعالیٰ نے بربادی اور تباہی کی وعید سنائی ہے، جیسا کہ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے: "وَيْلٌ لِلْمُطَفِّفِينَ" (المطففين:1) ناپ تول میں کمی کرنے والوں کے لیے ہلاکت ہے-
اللہ تعالیٰ نے قرآن مجید کی متعدد آیتوں میں ترازو کو سیدھا رکھنے، قیمت کے مطابق سامان مکمل دینے کا حکم دیا ہے مزید ڈانڈی مارنے اور ناپ تول میں کمی کرنے سے منع کیا ہے، جیسا کہ اللہ تعالیٰ کہتا ہے: "وَأَقِيمُوا الْوَزْنَ بِالْقِسْطِ وَلَا تُخْسِرُوا الْمِيزَانَ" (الرحمٰن:9) اور انصاف کے ساتھ ترازو کو قائم کرو اور ناپ تول میں کمی نہ کرو-
دوسری جگہ فرمایا: "وَ اَوْفُوا الْكَیْلَ اِذَا كِلْتُمْ وَ زِنُوْا بِالْقِسْطَاسِ الْمُسْتَقِیْمِ" (الإسراء:35) اور جب تم تولو تو پورا پورا تولو اور برابر سیدھے ترازو سے وزن کرو-
دوسری جگہ فرمایا: "اَوْفُوا الْكَیْلَ وَ لَا تَكُوْنُوْا مِنَ الْمُخْسِرِیْنَ، وَزِنُوْا بِالْقِسْطَاسِ الْمُسْتَقِیْمِ، وَ لَا تَبْخَسُوا النَّاسَ اَشْیَآءَهُمْ وَ لَا تَعْثَوْا فِی الْاَرْضِ مُفْسِدِیْنَ" (الشعراء:181-183) پیمانے کو پورا کرو اور تم گھٹانے والوں میں نہ ہو جاؤ، اور سیدھے ترازو سے تولو، اور لوگوں کی چیزیں کم کرکے نہ دو اور تم زمین میں فساد پھیلاتے نہ پھرو-
قارئین کرام! ناپ تول میں کمی کرنا یہ اتنا خطرناک گناہ ہے کہ اس کی وجہ سے روئے زمین پر زبردست عذاب آتا ہے، قحط سالی، غربت اور تنگی کا سبب بنتا ہے، جیسا کہ پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: "وَلَمْ يَنْقُصُوا الْمِكْيَالَ وَالْمِيزَانَ إِلاَّ أُخِذُوا بِالسِّنِينَ وَشِدَّةِ الْمَؤُنَةِ وَجَوْرِ السُّلْطَانِ عَلَيْهِمْ" (سنن ابن ماجه:4009/حسن) جب ناپ تول میں کمی کی جاتی ہے تو اس کی وجہ سے قحط سالی، تنگی، غربت اور بادشاہ کا ظلم مسلط کر دیا جاتا ہے-
اس حدیث پاک سے یہ بات معلوم ہوئی کہ ڈانڈی مارنا تباہی و بربادی کا ذریعہ ہے اللہ کے عذاب کو دعوت دینا ہے، ہم اور آپ غور کریں کہ اللہ تعالیٰ نے قوم شعیب پر تین طرح کا عذاب بھیجا، نمبر ایک بھونچال زلزلہ، نمبر دو چیخ (تیز آواز) نمبر تین آگ کی بارش، آخر اس کی وجہ کیا تھی؟ جی ہاں! قوم شعیب کی خرابی یہ تھی کہ یہ قوم سماجی برائی میں ملوث تھی، ناپ تول میں کمی کرتی تھی، بس اللہ نے انہیں لگاتار تین بڑے عذاب میں دبوچ لیا یہاں تک کہ صفحہ ہستی سے ان کا نام ونشان مٹا دیا، اس لیے ہماری اور آپ کی ذمہ داری بنتی ہے کہ ہم سب ڈانڈی مارنے سے بچیں، حلال طریقے سے مال کمائیں، دھوکہ دھڑی اور خیانت سے پرہیز کریں، ترازو اور وزن کو بالکل سیدھا رکھیں، انصاف کے ساتھ تولیں بلکہ بہتر ہے کہ قیمت سے زائد سامان تول دیں، احسان کریں، کیونکہ پیارے نبی کا فرمان ہے: "إِذَا وَزَنْتُمْ فَأَرْجِحُوا"(سنن ابن ماجہ:2213/صحيح) جب تم وزن کرو تو ترازو کے پلڑے کو جکھا دو یعنی پیمانہ سے سامان کچھ زیادہ ہی دے دو-
اللہ تعالیٰ ہم سب کو حلال طریقے سے مال کمانے اور حلال روزی کھانے کی توفیق عطا فرمائے آمین-
══════════ ❁✿❁ ══════════
 
Top