ذیشان خان

Administrator
نماز توڑنے والے امور
==============
مترجم : مقبول احمد سلفی
نماز کو فاسد کرنے والے امور معلوم ہیں اور یہ فقہائے کے درمیان اختلاف کے سبب اس کی تعداد میں فرق ہے۔ ان امور کا ذکر مندرجہ ذیل ہے ۔
(1)جو چیز طہارت کو باطل کردے جیسے حدث یا اونٹ کا گوشت کھانا اس سے نماز بھی باطل ہوجاتی ہے ۔
(2) ستر یعنی چھپانے والی جگہ کو جان بوجھ کر کھولنا، اگر خودبخود کھل جائے تو اس سے نماز باطل نہیں ہوتی۔
(3) قبلہ کی جہت سے زیادہ مائل ہوجانا
(4) بدن یا کپڑا یا جگہ میں نجاست کا ہونا، اگر نجاست کا علم ہوجائے یادوران نماز یاد آجائے اور اس کو زائل کرلے تو نماز درست ہے ۔اسی طرح اگر نمازکے بعد نجاست کا علم ہوا تو بھی نماز درست ہے ۔
(5)بغیر ضرورت کے نماز میں برابر زیادہ حرکت کرنا۔
(6) نماز کے ارکان میں سے کسی رکن کو چھوڑدینا۔
(7)جان بوجھ کر رکن کی زیادتی کرنا مثلا رکوع
(8) جان بوجھ کر بعض رکن کو بعض پر مقدم کرنا۔
(9) جان بوجھ کر نماز ختم ہونے سے پہلے سلام پھیردینا۔
(10) جان بوجھ قرات میں معنی کی تبدیلی کرنا۔
(11) جان بوجھ کر (جانتے ہوئے )واجبات نمازمیں سے کسی واجب کو ترک کردینامثلا تشہد اول ۔ اگر بھولے سے چھوڑدیا تو سجدہ سہو سے نماز ہوجائے گی ۔
(12) نیت ختم کرلینا یعنی نماز سے باہر ہونے کی نیت کرلینا۔
(13)قہقہہ لگاکر ہنسنا۔صرف مسکرانے سے نماز نہیں ٹوٹے گی ۔
(14) جانتے بوجھتے نمازمیں بات کرنا،مگر بھول کر ایسا کرنے سے نماز باطل نہیں ہوگی ۔
(15) کھانا اور پینا۔
کتاب دليل الطالب لنيل المطالب از شيخ مرعي بن يوسف الحنبلي ص 34 اور کتاب دروس مهمة از شيخ ابن باز​
 
Top