ذیشان خان

Administrator
بے فائدہ نقد اور ہمارے اسلاف!
﴿غیر معروف گمراہوں کو نظرانداز کردینا چاہیے﴾
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

امام مسلم رحمہ اللہ رقم طراز ہیں:
’’علم حدیث کے ساتھ تعلق کا دعویٰ کرنے والے ہمارے بعض ہم عصروں نے سند ِ (حدیث) کی صحت وضعف کے بارے میں کچھ باتیں کہی ہیں، اگر ہم انھیں بیان کرنے اور اُن کی تردید سے صرفﹺ نظر کرلیں تو یہی انداز اور موقف درست ہوگا کیوں کہ ایسے نامعقول موقف سے اعراض ہی اس موقف کی موت اور اس کے قائل گم نامی کے لیے کافی ہے، تاکہ جاہل لوگ ایسی نامعقول بات کی طرف متوجہ ہی نہ ہوسکیں۔
ہاں، جب ہمیں اس بات کا اندیشہ ہوا کہ اس کے نتائج برے ہو سکتے ہیں، (حقائق سے ) لا علم افراد نوپید باتوں کے بھرّے میں آسکتے ہیں اور جلد بازی میں کسی کی غلط بات اور اہل علم کے ہاں ساقط الاعتبار اقوال کے معتقد بن سکتے ہیں تو ہم نے مناسب سمجھا کہ ان کی تردید کی جائے اور ان کی خرابی کو ظاہر کیا جائے کیوں کہ ایسی صورت میں ایسا طرز عمل ہی عوام کے لیے نفع کا باعث اور نتیجہ خیز ہوگا۔‘‘ (مقدمہ صحیح مسلم، باب ما تصح به رواية الرواة بعضهم عن بعض والتنبيه على من غلط في ذلك: 28,29/1﴾
 
Top