ذیشان خان

Administrator
علمی ضیاع پر افسوس

✍⁩ ابو تقی الدین رحیمی

"مظهر النکات شرح مشکوٰۃ"
....
یہ حضرت حافظ محدث عبد اللہ روپڑی کی نامکمل اور غیر مطبوعہ تصنیف ہے، ان کے فاضل شاگرد شیخ الحدیث حافظ ثناء اللہ مدنی لکھتے ہیں :
"ہمارے استادِ محترم محدث روپڑی (محدث عبد اللہ روپڑی) نے جب مشکوٰۃ المصابيح کی شرح لکھنے کا ارادہ فرمایا تو اس کے محرر حافظ عبد القادر روپڑی ہی تھے، جس کی دو بڑی وجوہ ہیں : اول تو بذاتہ ان کو اس کام کا بے حد شوق تھا، دوسری وجہ یہ کہ ان کا خط نہایت شاندار تھا (تسر الناظرين).... مغرب اور عشا کا درمیانی وقت اس شرح کو لکھنے کے لئے مخصوص تھا، یہ شرح "مظهر النكات" کے نام سے موسوم تھی.
حقیقت یہ ہے کہ اس شرح میں ایسے عظیم اور عجیب وغریب نکات بیان ہوتے کہ پڑھنے والا دنگ رہ جاتا، صاحب ہدایہ، صاحب نور الانوار، ملا علی قاری اور شیخ رشید رضا مصری وغیرہ پر محدثانہ اور محققانہ انداز میں بعض مقامات پر تعلیقات یا تعاقب کرنا محدث روپڑی کا ہی مقام تھا، یہ شرح کتاب الایمان بالقدر تک مکمّل ہوئی تھی، میں نے کوشش کرکے اس شرح کا کچھ حصہ نقل کر لیا اور جو نقل نہ کرسکا وہ ایک ہنگامے کی نزر ہوگیا جس کا اب کوئی اتا بتا نہیں، جو حصہ میرے پاس تھا، اس کی ایک کاپی راقم الحروف نے حافظ عبد القادر روپڑی کے سپرد کر دی تھی تاکہ ریکارڈ رہے بلکہ میرے ہی مشورے پر وہ حصہ ہفت روزہ "تنظیم اہل حدیث" میں شائع بھی ہو گیا ".
 
Top