ذیشان خان

Administrator
اہل علم کے لئے خصوصاً یہ نصیحت حد سے زیادہ مفید ہیں۔

ترجمہ: عمّـار عبدالعزيز المحمـدی

اہل شام میں سـے ایک شخص کا عمرؓ بن الخطاب کے پاس آنا جانا لگا رہتا تھا،
عمرؓ نے اس کو کچھ دنوں تک دیکھا نہیں تو اس کے بارے میں دریافت کیا :
لوگوں نے کہا : وہ تو بدل گیا (اب سیدھی راہ پر قائم نہیں ہے)
آپؓ نے اس کے نام ایک خط لکھا جس میں اس کو وعظ ونصیحت کی,
اس شخص کے پاس جب عمرؓ کا خط پہونچا تو اس کے آنکھوں سے آنسوں جاری ہوگئے اور اس نے سچّـی پکّی توبہ کرلی...
حضرت عمرؓ فرمانے لگے:
اسی ادب و منھج کو تھامے رکھو..!
جب بھی دیکھو کہ تمہارا کوئی بھائی ٹھوکر کھا رہا ہـے تو اس کو سیدھا کرو اور اس کے توبہ کے لئے دعا کرتے رہو، اس کے خلاف شیطان کے مددگار نہ بنو...

📚 {{حلية الأولياء ٤/٩٧}}
 
Top