ذیشان خان

Administrator
جوراب پر مسح کے احکام

مقبول احمد سلفی

🔵مسافر کے لئے مسح کرنے کی مدت تین دن رات اور مقیم کے لئے ایک دن رات ہے .
🔵مدت کا آغاز حدث کے بعد پہلے مسح سے ہوگا.
♻مثال : نماز فجر کا وضوء کر کے جرابیں پہنیں ضحیٰ کے وقت آدمی بےوضوء ہوگیا اور اس نے زوال آفتاب کے وقت وضوء کرتے ہوئے مسح کیا تو مدت مسح کاآغاز زوال آفتاب کے وقت سے ہوگا اور مقیم ہونے کی صورت میں اگلے ایک دن رات تک اور مسافر ہونے کی صورت میں آئندہ تین دن اور راتوں تک اسے مسح کرنے کی اجازت ہے۔
🔵اگر مسح کی مدت ختم ہوجائے اورآدمی کی حالت طہارت برقرار ہو تو اس سے طہارت ختم نہ ہوگی بلکہ جب تک طہارت ختم نہ ہو اس کی حالت طاہر شمار ہوگی۔
🔵اگر آدمی نے وضوکرکے جرابیں پہنیں ہیں اور ابھی تک ایک دفعہ بھی مسح نہیں کیا یعنی ابھی تک وضوء برقرار ہی تھا کہ اس نے جرابوں کواتار دیا تو اس سے وضوء نہیں ٹوٹے گا.
🔵اگرمسح کرنے کے بعد جرابوں کواتارا تو پھر بھی صحیح بات یہی ہے کہ اس کا وضوء نہیں ٹوٹے گا کیونکہ اس صورت میں وضو کے ٹوٹنے کی کوئی دلیل نہیں ہے.
🔵دوبارہ جرابیں پہننے کے لئے یہ ضروری ہے کہ وضوء کرکے پاؤں دھوئے-
 
Top