قارئین کرام : نماز عصر کا چھوڑنا مال ومتاع کے لٹ جانے اور اہل وعیال کے قتل ہو جانے کے مترادف ہے ۔
یعنی : نماز عصر کو چھوڑ دینے والا اس شخص کی طرح ہے جس کے مال کو لوٹ کر اہل وعیال کو قتل کر دیا گیا ہو ۔
جیسا کہ ابن عمر رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا : " الَّذِي تَفُوتُهُ صَلَاةُ الْعَصْرِ كَأَنَّمَا وُتِرَ أَهْلَهُ وَمَالَهُ ".(صحيح البخاري | كِتَابٌ : مَوَاقِيتُ الصَّلَاةِ. | بَابٌ : إِثْمُ مَنْ فَاتَتْهُ الْعَصْرُ : 552).
" جس کی نماز عصر فوت ہو گئی گویا اس کے اہل وعیال اور مال ودولت ( سب کچھ) تباہ وبرباد ہو گئے ۔
امام بخاری رحمہ اللہ فرماتے ہیں : " کہ سورۃ محمد میں جو " يترکم " کا لفظ آیا ہے وہ " وتر " سے نکالا گیا ہے ۔ اور " وتر " کہتے ہیں کسی شخص کا کوئی آدمی مار ڈالنا یا اس کا مال چھین لینا ".
ایک دنیا دار کی نظر میں اس سے بڑا نقصان اور کیا ہو سکتا ہے کہ اس کے اہل وعیال، بیوی اور بچے ہلاک ہو جائیں، اس کے جانور مر جائیں، عمارتیں زمین بوس ہو جائیں، روپیہ پیسہ لٹ جائے، نہ گھر رہے نہ در، کوڑی کوڑی کا محتاج ہو جائے ، پھر بھی رحمۃ للعالمین صلی اللہ علیہ وسلم کی نظر میں اتنا بھیانک نقصان بھی اس نقصان کے مقابلے میں کم ہے جو ایک وقت کی نماز چھوڑنے سے ہوتا ہے ۔

عصر کی نماز کے دو اوقات ہیں :

1 - وقت مختار :
اس کی ابتدا اس وقت ہوتی ہے جب ہر چیز کا سایہ اس کے مثل ہو جائے ، جیسا کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان ہے : " ثُمَّ صَلَّى الْعَصْرَ حِينَ كَانَ كُلُّ شَيْءٍ مِثْلَ ظِلِّهِ ".( سنن الترمذي | أَبْوَابُ الصَّلَاةِ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ | بَابٌ : مَا جَاءَ فِي مَوَاقِيتِ الصَّلَاةِ عَنِ النَّبِيِّ : 149).
" (پہلے دن) عصر کی نماز اس وقت پڑھائی جب ہر چیز کا سایہ اس کے مثل ہو گیا ".
اور یہ سورج کی رنگت زرد ہونے تک رہتا ہے ، جیسا کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا : " وَوَقْتُ الْعَصْرِ مَا لَمْ تَصْفَرَّ الشَّمْسُ ". ( صحيح مسلم | كِتَابٌ : الْمَسَاجِدُ وَمَوَاضِعُ الصَّلَاةِ | بَابٌ : أَوْقَاتُ الصَّلَوَاتِ الْخَمْسِ : 612).
" عصر کی نماز کا آخری وقت سورج کی رنگت زرد ہو جانے تک رہتا ہے ".
سنن ترمذی کے الفاظ ہیں : " وَإِنَّ أَوَّلَ وَقْتِ صَلَاةِ الْعَصْرِ حِينَ يَدْخُلُ وَقْتُهَا، وَإِنَّ آخِرَ وَقْتِهَا حِينَ تَصْفَرُّ الشَّمْسُ ". ( أَبْوَابُ الصَّلَاةِ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ | بَابٌ : مَا جَاءَ فِي مَوَاقِيتِ الصَّلَاةِ عَنِ النَّبِيِّ : 151).
" اور عصر کا اول وقت وہ ہے جب عصر کا وقت ( ایک مثل سے) شروع ہو جائے اور آخری وقت وہ ہے جب سورج پیلا ہو جائے ".
یہاں پر یہ بات واضح رہے کہ حضرت جبریل علیہ السلام کی امامت والی حدیث میں موجود یہ الفاظ - : " ثُمَّ صَلَّى الْعَصْرَ حِينَ كَانَ ظِلُّ كُلِّ شَيْءٍ مِثْلَيْهِ ". ( سنن الترمذي | أَبْوَابُ الصَّلَاةِ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ | بَابٌ : مَا جَاءَ فِي مَوَاقِيتِ الصَّلَاةِ عَنِ النَّبِيِّ : 150).
" دوسرے دن نماز اس وقت پڑھائی جب ہر چیز کا سایہ اس کے دو مثل ہو گیا ". - گزشتہ دونوں روایت سے متعارض نہیں ہیں کیونکہ سایہ جیسے ہی دو مثل ہوتا ہے اسی وقت سورج زرد ہونا شروع ہو جاتا ہے ". ( الروضة الندية : 1/200).

2 - وقت کراہت : یہ سورج کے زرد ہونے سے لیکر اس کے غروب ہونے کے وقت تک رہتا ہے ۔
جیسا کہ ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا : " مَنْ أَدْرَكَ مِنَ الْعَصْرِ رَكْعَةً قَبْلَ أَنْ تَغْرُبَ الشَّمْسُ فَقَدْ أَدْرَكَ ". ( صحيح مسلم | كِتَابٌ : الْمَسَاجِدُ وَمَوَاضِعُ الصَّلَاةِ | بَابٌ : مَنْ أَدْرَكَ رَكْعَةً مِنَ الصَّلَاةِ فَقَدْ أَدْرَكَ تِلْكَ الصَّلَاةَ : 608).
" جس نے عصر کی ایک رکعت غروب شمس سے پہلے پالی گویا اس نے پوری نماز پالی ".
لہذا اگر کوئی اس وقت میں نماز پڑھتا ہے تو اس کی نماز تو ہو جائے گی مگر اس کا یہ عمل مکروہ قرار پائے گا کیونکہ یہ اضطراری وقت ہے ۔
یہی وجہ ہے کہ اس وقت کی نماز کو منافق والی نماز قرار دیا گیا ہے جیسا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : " تِلْكَ صَلَاةُ الْمُنَافِقِ، يَجْلِسُ يَرْقُبُ الشَّمْسَ حَتَّى إِذَا كَانَتْ بَيْنَ قَرْنَيِ الشَّيْطَانِ قَامَ، فَنَقَرَهَا أَرْبَعًا، لَا يَذْكُرُ اللَّهَ فِيهَا إِلَّا قَلِيلًا ".( صحيح مسلم | كِتَابٌ : الْمَسَاجِدُ وَمَوَاضِعُ الصَّلَاةِ | بَابٌ : اسْتِحْبَابُ التَّبْكِيرِ بِالْعَصْرِ : 622).
" یہ منافق کی نماز ہے کہ بیٹھا سورج کا انتظار کرتا رہتا ہے یہاں تک کہ جب سورج شیطان کے دو سینگوں کے درمیان میں آجاتا ہے (یعنی غروب کے قریب پہنچ جاتا ہے) تو اٹھتا ہے اور چار ٹھوگیں مار لیتا ہے اور اللہ کا ذکر تو برائے نام کرتا ہے ".

سوال : عصر کی نماز فوت ہونے سے کون سا وقت مراد ہے ۔
جواب : یہاں پر " عصر کی نماز " فوت ہونے کے سلسلے میں محدثین کرام کے دو اقوال ملتے ہیں :

1- عصر کی نماز کا جو وقت ہے اس مکمل وقت میں نہ پڑھے ۔
مکمل وقت سے مراد سورج کے غروب ہونے تک ، جسے ہم کراہت کا وقت کہتے ہیں ۔
جیسا کہ ابن رجب رحمہ اللہ لکھتے ہیں : " فوات صلاة العصر : أريد به : فواتها في وقتها كله، كذا فسره ابن عبد البر وغيره ". ( فتح الباري لابن رجب : 4/293).
" صلاۃ عصر کے فوت ہو جانے سے مراد اس کے مکمل وقت کا نکل جانا ہے ".
جبکہ ابن حجر کہتے ہیں : " ومِمّا يَدُلُّ عَلى أنَّ المُرادَ بِتَفْوِيتِها إخْراجُها عَنْ وقْتِها ما وقَعَ فِي رِوايَةِ عَبْدِ الرَّزّاقِ فَأنَّهُ أخرج هَذا الحَدِيث عَن بن جُرَيْجٍ عَنْ نافِعٍ فَذَكَرَ نَحْوَهُ وزادَ قُلْتُ لِنافِعٍ حِينَ تَغِيبُ الشَّمْسُ قالَ نَعَمْ وتَفْسِيرُ الرّاوِي إذا كانَ فَقِيهًا أوْلى مِن غَيْرِهِ ".( فتح الباري لابن حجر : 2/31).
" اس کی دلیل وہ روایت ہے جسے عبد الرزاق نے روایت کیا ہے، چنانچہ انہوں نے اس حدیث کی " عن جريج عن نافع " سے کی تخریج کرنے کے بعد اتنا اضافہ کیا ہے کہ " میں نے نافع سے پوچھا کہ کیا اس سے سورج کا غروب ہو جانا مراد ہے تو انہوں نے کہا : ہاں ۔ لہذا فقیہ راوی کی تفسیر دوسرے لوگوں کی تفسیر سے اولی ہوتی ہے ۔

2 - اس مراد یہ ہے کہ وقتِ مختار میں نہ پڑھے ۔

یعنی : اگر اس نے سورج میں زردی آنے تک عصر کی نماز نہیں پڑھی تو گویا اس کی نماز عصر فوت ہو گئی ۔
جیسا کہ ابن حجر رحمہ اللہ فرماتے ہیں : " ونقل عن ابن وهب أن المراد إخراجها عن الوقت المختار ".( فتح الباري لابن حجر : 2/31).
" ابن وہب سے منقول ہے کہ صلاۃ عصر کے فوت ہو جانے سے مراد اس کا وقت مختار سے نکل جانا ہے "۔
نیز ابن رجب رحمہ اللہ لکھتے ہیں : " وقد فسره الاوزاعي: بفوات وقت الاختيار ، بعد أن روى هذا الحديث عن نافع، قال الأوزاعي : وذلك أن ترى ما على الأرض من الشمس مصفرًا ". ( فتح الباري لابن رجب : 4/293).
" اوزاعی رحمہ اللہ نے اس کی تفسیر " وقت مختار کے فوت " ہو جانے سے کی ہے، جیسا کہ وہ نافع سے اس حدیث کو بیان کرنے کے بعد کہتے ہیں کہ صلاۃ عصر کے فوت ہو جانے سے مراد یہ ہے کہ : " تم زمین پر سورج کی زردی دیکھنے لگو ".
جبکہ ابن ابی حاتم کہتے ہیں : " سألت أبي عن حديث رواه الوليد، عن الأوزاعي، عن نافع، عن ابن عمر، قال : قال رسول الله - ﷺ -: " من فاتته صلاة العصر - وفواتها : أن تدخل الشمس صفرةٌ - فكأنما وتر أهله وماله "؟ فقال أبي: التفسير من قول نافع ". ( البحر المحيط الثجاج في شرح صحيح الإمام مسلم بن الحجاج للأثيوبي : 13/546).
" میں نے اپنے والد سے اس حدیث کے بارے میں پوچھا جسے ولید نے اوزاعی سے، اوزاعی نے نافع سے اور نافع سے ابن عمر نے روایت کیا ہے کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا : " جس کی عصر کی نماز فوت ہو گئی - اور اس کے فوت ہونے سے مراد یہ ہے کہ سورج میں زردی داخل ہو جائے - تو گویا کہ اس کے اہل وعیال اور مال سب کچھ تباہ ہو گئے ". تو میرے والد نے کہا کہ یہ تفسیر نافع کا قول ہے ۔
مگر راجح - واللہ اعلم - یہ تفسیر اوزاعی رحمہ اللہ ہی کی ہے ۔
جیسا کہ امام عراقی رحمہ اللہ کہتے ہیں : " وظاهر إيراد أبي داود في سننه أن هذا من كلام الأوزاعي، قاله من عند نفسه، لا أنه من الحديث، فإنه روي بإسناد منفرد عن الحديث عن الأوزاعي أنه قال: وذلك أن ترى ما على الأرض من الشمس صفراء ". (ذخيرة العقبى في شرح المجتبى : 6/654).
" ابو داؤد کا اسے اپنی سنن میں لانے سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ یہ اوزاعی کا قول ہے، انہوں نے یہ بات خود سے کہی ہے حدیث کا ٹکڑا نہیں ہے، اس لئے کہ اوزاعی سے حدیث کی ایک منفرد سند بھی ہے جس میں وہ کہتے ہیں کہ صلاۃ عصر کے فوت ہونے سے مراد یہ ہے کہ : " تم زمین پر سورج کی زردی دیکھنے لگو ".

آگے ابن حجر رحمہ اللہ کہتے ہیں : " وعلى تفسير الأوزاعي يكون المراد : تأخيرها إلى وقت الكراهة، وإن صلاها في وقتها المكروه ". ( فتح الباري لابن حجر : 2/31).
" اوزاعی کی تفسیر کی روشنی میں صلاۃ عصر کے فوت ہو جانے سے مراد یہ ہے کہ اسے وقت کراہت تک مؤخر کر دے اگرچہ وقت مکروہ میں پڑھ ہی لے ".
چنانچہ یہی دوسرا معنی ہی راجح معلوم ہوتا ہے کہ جس نے وقت مختار یعنی : سورج میں زردی آنے سے قبل عصر کی نماز نہیں پڑھی تو گویا اس کے اہل وعیال اور مال ومتاع تباہ وبرباد ہو گئے ".

اس کی تائید موطا وغیرہ میں موجود يحيى بن سعيد کے اس اثر سے ہوتی ہے جس میں وہ کہتے ہیں کہ : " إن الرجل ليصلي الصلاة وما فاتته، ولما فاتته من وقتها أعظم - أو أفضل - من أهله وماله ". ( مؤطا : 1/12 ،مصنف عبد الرزاق : 2/479، سنن دارقطني : 2/81، السنن الكبرى للبيهقي : 1/387، فتح الباري لابن رجب : 4/294).
" نمازی کبھی نماز پڑھتا ہے اور اس کا وقت ختم نہیں ہوتا ۔، لیکن جس قدر وقت گزر چکا ہوتا ہے وہ اس کے اہل وعیال اور مال ومتاع سے بہتر ہوتا ہے ".
ابن عبد البر کہتے ہیں : " وهَذا مَوْقُوفٌ فِي المُوَطَّأِ ويَسْتَحِيلُ أنْ يَكُونَ مِثْلُهُ رَأْيًا ". ( التمهيد لما في الموطأ من المعاني والأسانيد : 24/75).
" یہ موطا کے اندر موقوفا آئی ہے اور یہ بات محال ہے کہ کوئی اسے اپنی طرف سے کہے ".

سعید بن یحیی کی مذکورہ روایت ( تعظيم قدر الصلاة لمحمد بن نصر المروزي : 2/961). میں ابن عمر رضی اللہ عنہ سے مرفوعا اور ( الأوسط في السنن والإجماع والاختلاف لابن المنذر : 2/357). میں انہیں (ابن عمر) سے موقوفا اور ( فتح الباري : 2/6). میں طلق بن حبيب سے مرسلا آئی ہے ۔

لہذا ہمیں غور کرنا چاہیے کہیں مسلمانوں کی گرفتاری، ان کا قتل و خون اور ان کے مال و زر کے مختلف بیماریوں اور مقدمات و دفعات میں ضائع ہونا صلاۃ عصر کو ترک کرنے کی وجہ سے تو نہیں؟!
 
Top